1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔
  2. اس صیغے میں اسلامی کتب لگائی جاتی ہیں۔ انتظامیہ کسی بھی مکتبہ فکر پر پابندی نہیں لگاتی ہے اس لیے صارفین کتب پر نقظہ اعتراض اٹھانے کے بجائے اپنی صوابدید کے مطابق کتب سے استفادہ کریں۔یہاں لگائی گئی کتب کسی بھی طرح انتظامیہ کا مذہبی رجحان یا مکتبہ فکر ظاہر نہیں کرتی۔

کتاب التوحید ( نور توحید )

'اسلامی کتب' میں موضوعات آغاز کردہ از ساتواں انسان, ‏17 فروری 2021۔

  1. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    کتاب التوحید
    تالیف ۔ محمد بن عبد الوہاب
    ( ولادت 1703ء - وفات 1792ء )
    ۔
    ۔
    ۔ ۔ ۔
    ( 1 ) ۔ ۔ ۔ کتاب التوحید
    ( 2 ) ۔ ۔ ۔ توحید کی فضیلت کا بیان
    ( 3 ) ۔ ۔ ۔ جس نے حقیقی توحید اختیار کی
    ( 4 ) ۔ ۔ ۔ شرک سے ڈرنا ضروری ہے
    ( 5 ) ۔ ۔ ۔ شہادت " لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ " کی تبلیغ و دعوت کا بیان
    ( 6 ) ۔ ۔ ۔ توحید کی تفسیر
    ( 7 ) ۔ ۔ ۔ بلا ٹالنے کے لئے کڑا یا کنڈا وغیرہ پہنا
    ( 8 ) ۔ ۔ ۔ منتر اور تعویذ گنڈوں کے بارے میں
    ( 9 ) ۔ ۔ ۔ درخت یا پتھر سے برکت حاصل کرنا
    ( 10 ) ۔ ۔ ۔ غیر اللہ کے نام پر قربانی دینے کے بارے میں احکام
    ( 11 ) ۔ ۔ ۔ جس مقام پر غیر اللہ کے نام پر قربانی دی جاتی ہو
    ( 12 ) ۔ ۔ ۔ غیر اللہ کے نام پر نذر ماننا
    ( 13 ) ۔ ۔ ۔ غیر اللہ کی پناہ مانگنا
    ( 14 ) ۔ ۔ ۔ غیر اللہ سے مدد طلب کرنا
    ( 15 ) ۔ ۔ ۔ ارشاد باری تعالی " اَيُشْرِكُـوْنَ مَا لَا يَخْلُقُ شَيْئًا ۔ ۔ ۔ " کا بیان
    ( 16 ) ۔ ۔ ۔ ارشاد باری تعالی " حَتّــٰٓى اِذَا فُزِّعَ ۔ ۔ ۔ " کا بیان
    ( 17 ) ۔ ۔ ۔ شفاعت کا بیان
    ( 18 ) ۔ ۔ ۔ آیت کریمہ " اِنَّكَ لَا تَهْدِىْ مَنْ اَحْبَبْتَ ۔ ۔ ۔ " کا بیان
    ( 19 ) ۔ ۔ ۔ بنی آدم کے شرک میں مبتلا ہونے کا سبب
    ( 20 ) ۔ ۔ ۔ کسی بزرگ کی قبر کے قریب اللہ کی عبادت کرنا
    ( 21 ) ۔ ۔ ۔ بزرگوں کی قبروں کا حد سے زیادہ احترام
    ( 22 ) ۔ ۔ ۔ محمد ( ص ) کا توحید کے تمام پہلوؤں کی حفاظت کرنا
    ( 23 ) ۔ ۔ ۔ اس امت کے کچھ لوگ بت پرستی میں مبتلا ہوجائیں گے
    ( 24 ) ۔ ۔ ۔ جادو کے بارے میں احکام
    ( 25 ) ۔ ۔ ۔ جادو کی قسموں کا بیان
    ( 26 ) ۔ ۔ ۔ کہانت اور غیب دانی کے بارے میں احکام
    ( 27 ) ۔ ۔ ۔ جادو ، جن وغیرہ اتارنے کے بارے میں احکام
    ( 28 ) ۔ ۔ ۔ بدشگونی اور فال بد لینے کے بارے میں احکام
    ( 29 ) ۔ ۔ ۔ علم نجوم کے بارے میں شرعی احکام
    ( 30 ) ۔ ۔ ۔ بارش کے سلسلے میں ستاروں کی تاثیر کا عقیدہ رکھنا
    ( 31 ) ۔ ۔ ۔ چند آیات کی تفسیر و توضیح
    ( 32 ) ۔ ۔ ۔ خشیتہ اللہ کا بیان
    ( 33 ) ۔ ۔ ۔ توکل علی اللہ کا بیان
     
  2. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    ( 34 ) ۔ ۔ ۔ خوف خدا سے بےنیازی اور اللہ کی رحمت سے مایوسی کا بیان
    ( 35 ) ۔ ۔ ۔ مقدر پر صبر کرنا بھی ایمان باللہ کا حصہ ہے
    ( 36 ) ۔ ۔ ۔ ریاء کے بیان میں
    ( 37 ) ۔ ۔ ۔ اعمال صالحہ کو دنیاوی اغراض حاصل کرنے کا ذریعہ بنانا
    ( 38 ) ۔ ۔ ۔ احکام الہی کے خلاف علماء و امراء کے احکام کی اطاعت کرنا
    ( 39 ) ۔ ۔ ۔ چند آیات کریمہ کی تفسیر
    ( 40 ) ۔ ۔ ۔ اسماء و صفات باری تعالی کا انکار کرنے والے کے بارے میں احکام
    ( 41 ) ۔ ۔ ۔ آیت کریمہ " يَعْرِفُوْنَ نِعْمَتَ اللّـٰهِ ۔ ۔ ۔ " کی تفسیر
    ( 42 ) ۔ ۔ ۔ آیت کریمہ " ۔ ۔ ۔ فَلَا تَجْعَلُوْا لِلّـٰهِ اَنْدَادًا ۔ ۔ ۔ " کی تفسیر
    ( 43 ) ۔ ۔ ۔ اللہ کے نام کی قسم پر قناعت نہ کرنے والے شخص کے بارے میں احکام
    ( 44 ) ۔ ۔ ۔ ماشاءاللہ وشئت کہنے کی ممانعت
    ( 45 ) ۔ ۔ ۔ زمانے کو گالی دینے کی ممانعت
    ( 46 ) ۔ ۔ ۔ قاضی القضاۃ وغیرہ القاب اختیار کرنے کی ممانعت
    ( 47 ) ۔ ۔ ۔ اسماء باری تعالی کا احترام
    ( 48 ) ۔ ۔ ۔ اللہ ، رسول ( ص ) اور قرآن کے ساتھ استہزاء پر وعید
    ( 49 ) ۔ ۔ ۔ آیتہ کریمہ " وَلَئِنْ اَذَقْنَاهُ رَحْـمَةً مِّنَّا ۔ ۔ ۔ " کی تفسیر
    ( 50 ) ۔ ۔ ۔ آیتہ کریمہ " فَلَمَّآ اٰتَاهُمَا صَالِحًا ۔ ۔ ۔ " کی تفسیر
    ( 51 ) ۔ ۔ ۔ آیتہ کریمہ " وَلِلّـٰهِ الْاَسْـمَآءُ الْحُسْنٰى ۔ ۔ ۔ " کی تفسیر
    ( 52 ) ۔ ۔ ۔ السلام علی اللہ کہنے کی ممانعت
    ( 53 ) ۔ ۔ ۔ اللھم اغفرلی ان شئت کہنے کی ممانعت
    ( 54 ) ۔ ۔ ۔ اپنے ملازم یا غلام کو عبدی کہنے کے بارے میں احکام
    ( 55 ) ۔ ۔ ۔ اللہ کے نام پر سوال کرنے والے کو خالی نہ لوٹانا چاہیے
    ( 56 ) ۔ ۔ ۔ اللہ کے نام پر صرف جنت کا سوال کرنا چاہیے
    ( 57 ) ۔ ۔ ۔ کلمہ " لَوْ " کے استعمال کرنے کے بارے میں احکام
    ( 58 ) ۔ ۔ ۔ ہوا یا آندھی کو برا بھلا کہنے کی ممانعت
    ( 59 ) ۔ ۔ ۔ آیتہ کریمہ " ۔ ۔ ۔ يَظُنُّوْنَ بِاللّـٰهِ غَيْـرَ الْحَقِّ ۔ ۔ ۔ " کی تفسیر
    ( 60 ) ۔ ۔ ۔ تقدیر کا انکار کرنے والے کے بارے میں احکام
    ( 61 ) ۔ ۔ ۔ مصوروں کے بارے میں احکام
    ( 62 ) ۔ ۔ ۔ بکثرت قسمیں کھانے کے بارے میں احکام
    ( 63 ) ۔ ۔ ۔ اللہ اور رسول ( ص ) کے عہد و پیمان کے بارے میں احکام
    ( 64 ) ۔ ۔ ۔ " بخدا اللہ یہ کام ضرور کرے گا یا نہیں کرے گا " کہنے کی ممانعت
    ( 65 ) ۔ ۔ ۔ مخلوق کے آگے اللہ کو سفارشی بنانے کی ممانعت
    ( 66 ) ۔ ۔ ۔ محمد ( ص ) کا توحید کی سرحدوں کی حفاظت فرمانا
    ( 67 ) ۔ ۔ ۔ آیتہ کریمہ " وَمَا قَدَرُوا اللّـٰهَ حَقَّ قَدْرِهٖ ۔ ۔ ۔ " کی تفسیر
     
  3. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ
    ہر قسم کی تعریف و تحسین اللہ کے لئے اور درود و سلام جناب محمد رسول اللہ ( ص ) پر اور آپ کی آل اولاد پر
    باب ( 1 ) ۔ ۔ ۔ کتاب التوحید
    { عبادت کی بنیاد توحید }
    اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے
    وَمَا خَلَقْتُ الْجِنَّ وَالْاِنْسَ اِلَّا لِيَعْبُدُوْنِ ( سورۃ الذاريات ، 56 )
    " میں نے جن اور انسانوں کو اِس کے سوا کسی کام کے لیے پیدا نہیں کیا ہے کہ وہ میری بندگی کریں "
    وَلَـقَدْ بَعَثْنَا فِىْ كُلِّ اُمَّةٍ رَّسُوْلًا اَنِ اعْبُدُوا اللّٰهَ وَاجْتَنِبُوا الطَّاغُوْتَۚ ۔ ۔ ۔ ( سورۃ النحل ، 36 )
    " ہم نے ہر امت میں ایک رسول بھیج دیا ، اور اس کے ذریعہ سے سب کو خبردار کر دیا کہ اللہ کی بندگی کرو اور طاغوت کی بندگی سے بچو "
    وَقَضٰى رَبُّكَ اَ لَّا تَعْبُدُوْۤا اِلَّاۤ اِيَّاهُ وَبِالْوَالِدَيْنِ اِحْسَانًا ۔ ۔ ۔ ( سورۃ الإسراء ، 23 )
    " تیرے رب نے فیصلہ کر دیا ہے کہ تم لوگ کسی کی عبادت نہ کرو ، مگر صرف اس کی والدین کے ساتھ نیک سلوک کرو "
    وَاعْبُدُوا اللّٰهَ وَلَا تُشْرِكُوْا بِهٖ شَيْــًٔـا ۔ ۔ ۔ ( سورۃ النساء ، 36 )
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حدیث میں آتا ہے
    عبداللہ بن مسعود ( رض ) فرماتے ہیں : " جو شخص محمد ( ص ) کی سربمہر وصیت ملاحظہ کرنا چاہتا ہو وہ اللہ تعالی کا یہ فرمان پڑھ لے : ( سورۃ الأنعام ، 151 تا 153 )
    " اے محمد ! ان سے کہو کہ آؤ میں تمہیں سناؤں تمہارے رب نے تم پر کیا پابندیاں عائد کی ہیں یہ کہ اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرو ، اور والدین کے ساتھ نیک سلوک کرو ، اور اپنی اولاد کو مفلسی کے ڈر سے قتل نہ کرو ، ہم تمہیں بھی رزق دیتے ہیں اور ا ن کو بھی دیں گے اور بے شرمی کی باتوں کے قریب بھی نہ جاؤ خواہ وہ کھلی ہوں یا چھپی اور کسی جان کو جسے اللہ نے محترم ٹھیرایا ہے ہلاک نہ کرو مگر حق کے ساتھ یہ باتیں ہیں جن کی ہدایت اس نے تمہیں کی ہے ، شاید کہ تم سمجھ بوجھ سے کام لو - اور یہ کہ یتیم کے مال کے قریب نہ جاؤ مگر ایسے طریقہ سے جو بہترین ہو ، یہاں تک کہ وہ اپنے سن رشد کو پہنچ جائے اور ناپ تول میں پورا انصاف کرو ، ہم ہر شخص پر ذمہ داری کا اتنا ہی بار رکھتے ہیں جتنا اس کے امکان میں ہے ، اور جب بات کہو انصاف کی کہو خواہ معاملہ اپنے رشتہ دار ہی کا کیوں نہ ہو ، اور اللہ کے عہد کو پورا کرو ان باتوں کی ہدایت اللہ نے تمہیں کی ہے شاید کہ تم نصیحت قبول کرو - نیز اس کی ہدایت یہ ہے کہ یہی میرا سیدھا راستہ ہے لہٰذا تم اسی پر چلو اور دوسرے راستوں پر نہ چلو کہ وہ اس کے راستے سے ہٹا کر تمہیں پراگندہ کر دیں گے یہ ہے وہ ہدایت جو تمہارے رب نے تمہیں کی ہے ، شاید کہ تم کج روی سے بچو " ( جامع ترمذی ، 3070 )
    معاذ بن جبل ( رض ) بیان کرتے ہیں : ایک دفعہ میں رسول اللہ ( ص ) کے پیچھے آپ ( ص ) کے گدھے پرسوارتھا ۔ آپ ( ص ) نے مجھ سے فرمایا : اے معاذ ! کیا تمہیں معلوم ہے کہ اللہ تعالی کا بندوں پر کیا حق ہے اور بندوں کا حق اللہ تعالی پرکیا ہے ؟ میں نے عرض کی کہ اللہ تعالی اور اس کا رسول بہترجانتے ہیں ۔ رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : " بندوں پر اللہ تعالی کا حق یہ ہے کہ وہ صرف اسی کی عبادت کریں اور کسی کو اس کا شریک نہ ٹھہرائیں ۔ بندوں کا حق اللہ تعالی پر یہ ہے کہ اگرجو مشرک نہ ہوں ان کو عذاب جہنم سے بچالے ۔ " معاذ ( رض ) نے عرض کیا : یا رسول اللہ ( ص ) ! میں لوگوں کو اس کی خوشخبری سنادوں ؟ آپ ( ص ) نے فرمایا : " ایسا نہ کرنا ۔ کیونکہ پھر وہ اسی پر بھروسہ کرکے بیٹھ رہیں گے ۔ " ( صحيح مسلم ، 144 )
     
  4. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کی تشریح
    علامہ ابن قیم ( رح ) فرماتے ہیں : اللہ تعالی یہاں پر خبر دے رہے ہیں کہ انہوں نے مخلوق کو اس لیے پیدا کیا ہے کہ وہ اس کی عبادت بجا لائیں ، عبادت بجا لانا اللہ تعالی سے کمال محبت کی دلیل ہے ۔ اور اللہ تعالی کو جیسے یہ بات پسند ہے کہ اس کی عبادت کی جائے ایسے ہی اسے یہ بات بھی پسند ہے کہ اس کی حمد و ثناء بیان کی جائے ۔ رسول اللہ ( ص ) سے صحیح حدیث میں ثابت ہے کہ آپ نے ارشاد فرمایا : " تعریف و مدح سرائی کو پسند کرنے والا اللہ تعالی سے بڑھ کر کوئی نہیں ۔ یہی وجہ ہے کہ اللہ تعالی نے خود اپنی ثناء بیان کی ہے " ۔ اور مسند میں حضرت اسود بن سریع سے روایت ہے کہ آپ نے پوچھا : یارسول اللہ ! بیشک میں کئی اچھے اچھے کلمات سے اللہ تعالی کی حمد بیان کرتا ہوں ۔ تو آپ ( ص ) نے ارشاد فرمایا : " بیشک اللہ تعالی اس بات کو پسند کرتے ہیں کہ ان کی تعریف بیان کی جائے ۔ پس اللہ تعالی کو اپنی ذات سے محبت ہے اسی لیے وہ اپنی ذات کی حمد و ثناء بیان کرتے ہیں اور ان لوگوں سے بھی محبت کرتے ہیں جو اللہ تعالی کی حمد و ثناء بیان کرتے ہیں ۔ " ( طریق الہجرتین ص 239 ) ]نیز آپ یہ بھی فرماتے ہیں : " بیشک اللہ تعالی یہ بتا رہے ہیں کہ اس نے مخلوق اس لیے نہیں پیدا کی کہ اسے ان کی کوئی ضرورت تھی ۔ اور نہ ہی ان سے کوئی فائدہ حاصل کرنا مقصود تھا ۔ بلکہ اس نے مخلوق پر اپنا فضل کرم کرتے ہوئے انہیں اس لیے پیدا کیا ہے کہ وہ اس کی عبادت کریں ۔ اور یوں وہ ہر قسم کا فائدہ حاصل کرسکیں ۔ جیسا کہ اللہ تعالی کا فرمان ہے : " دیکھو! تم نے بھلائی کی تو وہ تمہارے اپنے ہی لیے بھلائی تھی " ( سورۃ الإسراء ، 7 ) اور اللہ تعالی کا فرمان ہے : " اور جن لوگوں نے نیک عمل کیا ہے وہ اپنے ہی لیے فلاح کا راستہ صاف کر رہے ہیں " ( سورۃ الروم ، 44 )
    ابن قیم ( رح ) نے ( اعلام الموقعین میں 1 - 49 ) پر طاغوت کی ایک ایسی تعریف کی ہے جو بڑی جامع و مانع ہے ، وہ فرماتے ہیں : طاغوت ہر وہ چیز ہے جس کی وجہ سے انسان حد سے تجاوز کر جائے، خواہ عبادت میں ہو ، یا تابعداری میں ، یا اطاعت میں ۔ ہر قوم کا طاغوت وہی ہے جس کی طرف وہ اللہ تعالی اور رسول اللہ ( ص ) کے بجائے فیصلہ کے لئے رجوع کرتے ہیں ، یا اللہ کے سوا اس کی پرستش کرتے ہیں ، یا بلا دلیل بلا بصیرت اس کی اتباع کرتے ہیں ، یا اس کی اطاعت بغیر اس علم کے کرتے ہیں کہ یہ اللہ تعالی کی اطاعت ہے ۔ اگر آپ دنیا بھر کے لوگوں کا ان کے ساتھ برتاؤ غور سے دیکھیں تو آپ دیکھیں گے کہ ان میں سے اکثر لوگ اللہ تعالی کی عبادت چھوڑ کر طاغوت کی عبادت پر لگ چکے ہیں ۔ پس وہ اللہ تعالی اور اس کے رسول ( ص ) کے فیصلہ کو چھوڑ کرطاغوت کے پاس اپنا فیصلہ لے جاتے ہیں ۔ اور اللہ تعالی اور اس کے رسول ( ص ) کی اطاعت و اتباع کو ترک کر کے طاغوت کی اتباع و اطاعت پر راضی ہیں ۔ یہ ان لوگوں کی راہ پرنہیں چل رہے جو اس امت میں سے کامیاب لوگ ہیں ۔ اوریہ کامیاب لوگ صحابہ کرام ( رض ) اور ان کے سچے پیروکار ہیں ۔ اور ان کا مقصد بھی وہ چیز نہیں ہے جو ان کا مقصد تھا ۔ بلکہ مقصد اور راہ دونوں میں ان کے خلاف چل رہے ہیں ۔
    جامع ترمذی ، 3070 کی حدیث روایت کرنے میں امام ترمذی منفرد ہیں ۔ اور اسے حسن غریب کہا ہے ۔ جب کہ البانی نے اسے ضعیف کہا ہے ۔
    ( واللہ اعلم )
     
  5. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    اس باب میں مندرجہ ذیل مسائل ہیں
    1 ۔ جن وانس کی تخلیق میں اللہ تعالی کی حکمت کار فرما ہے ۔
    2 ۔ دراصل عبادت سے مراد توحید ہے کیونکہ تمام انبیاء اور ان کی امتوں کے درمیان یہی بات متنازعہ تھی ۔
    3 ۔ جو شخص تو حید پر کار بند نہیں اس نے اللہ تعالی کی عبادت کی ہی نہیں ۔ " اور نہ تم اس کی عبادت کرنے والے ہو جس کی عبادت میں کرتا ہوں " ( سورۃ الکافروں ۔ 3 ) کا مطلب بھی یہی ہے ۔
    4 ۔ بعثت انبیاء کی حکمت کا بھی پتہ چلتا ہے ۔
    5 ۔ ۔ اللہ تعالی کی طرف سے ہر امت کی ہدایت کے لیے رسول بھیجے گئے ۔
    6 ۔ تمام انبیاء کا دین یعنی ان کی دعوت کا محور اور مرکزی نقطہ صرف توحید تھا ۔
    7 ۔ اس سے یہ اہم مسئلہ بھی معلوم ہوا کہ طاغوت کا کفر اور اس کا انکار کیے بغیر اللہ تعالی کی عبادت ممکن ہی نہیں ۔ جیسا کہ اللہ تعالی کا فرمان ہے : " اب جو کوئی طاغوت کا انکار کر کے اللہ پر ایمان لے آیا ، اس نے ایک ایسا مضبوط سہارا تھام لیا ( سورۃ البقرہ ، 256 )
    8 ۔ طاغوت عام ہے ہر اس چیز کوطاغوت کہتے ہیں جس کی اللہ تعالی کے سوا عبادت کی جائے
    9 ۔ یہ بھی معلوم ہوا کہ سلف صالحین کے نزدیک سورۃ الانعام کی مذکورہ تین محکم آیات کی کس قدر اہمیت اور عظمت تھی ۔ ان میں اللہ تعالی کی طرف سے بندوں کو دس احکام اور ہدایات دی گئی ہیں ۔ ان میں سب سے اولین ہدایت شرک کی ممانعت ہے ۔
    10 ۔ سورہ الاسراء کی محکم آیات میں اٹھارہ مسائل بیان ہوئے ہیں ان کا آغاز توحید سے ہوا ہے اور سب سے آخر میں شرک کرنے والوں کو جہنم سے ڈرایا گیا ہے ۔
    11 ۔ سورۃ النساء کی وہ آیت جو حقوق عشرہ والی آیت کہلاتی ہے ، اس میں اللہ تعالی نے سب سے پہلے یہی مسئلہ بیان فرمایا کہ شرک سے بچو اور صرف ایک اللہ کی عبادت کرو ۔
    12 ۔ اس میں رسول اللہ ( ص ) کی اس وصیت کی طرف بھی توجہ دلائی گئی ہے جو آپ نے وفات کے وقت فرمائی تھی
    13 ۔ بندوں کے ذمہ اللہ تعالی کا کیا حق ہے ؟ اس کی معرفت حاصل ہوئی ۔
    14 ۔ جب بندے اللہ تعالی کا حق ادا کریں تو اللہ تعالیٰ پر ان کا کیا حق ہے ؟ اس کی معرفت حاصل ہوئی ۔
    15 ۔ معاذ ( رض ) کی حدیث سے یہ بھی پتہ چلا کہ اس مذکور مسئلہ کا بہت سے صحابہ کو علم نہ تھا ۔
    16 ۔ کسی مصلحت کے پیش نظر علم کو مخفی رکھنا جائز ہے ۔
    17 ۔ کسی مسلمان کو خوش خبری دینا مستحب ہے ۔
    18 ۔ بلاعمل ، صرف اللہ تعالی کی وسیع رحمت پر بھروسہ کرنے سے انسان کو ڈرنا اور بچنا چاہیے ۔
    19 ۔ جس سے کوئی بات پوچھی جائے اور وہ نہ جانتا ہو تو یوں کہہ دینا چاہئے اللہ اس کا رسول ہی بہتر جانتے ہیں ۔
    20 ۔ کسی کو علم سکھانا اور کسی کو محروم رکھنا جائز ہے ۔
    21 ۔ آپ ( ص ) ازحد متواضع تھے کہ آپ جلیل القدر ہونے کے باوجود گدھے پر نہ صرف سوار ہوئے بلکہ دوسرے آدمی کو بھی اپنے ہمراہ سوار کر لیا ۔
    22 ۔ سواری پر اپنے پیچھے دوسرے کو سوار کر لینا جائز ہے ۔
    23 ۔ حضرت معاذ بن جبل ( رض ) کی فضیلت بھی عیاں ہوتی ہے ۔
    24 ۔ مسئلہ توحید کی اہمیت اور عظمت پر بھی خوب روشنی پڑتی ہے ۔
     
  6. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کا خلاصہ
    کتاب توحید اس باب کا عنوان شروع سے آخر تک اس کتاب کے نام سے مطابقت رکھتا ہے ۔ یہ کتاب اللہ تعالی کی توحید بیان کرتی ہے ۔ اور اس میں عبادت کے اصول اور تفاصیل اورکن چیزوں سے ایمان بڑھتا اور مضبوط ہوتا ہے اور کن سے ایمان کم اور کمزور ہوتا ہے اور کن امور سے ایمان پورا اور مکمل ہوتا ہے ۔
    توحید کی تین اقسام :
    پہلی قسم : توحید اسماء و صفات : یہ عقیدہ رکھنا کہ اللہ اپنی تمام صفات کمال و جمال اور جلال میں ہر لحاظ سے اکیلے اور یکتا ہیں ۔ ہر قسم کی عظمت اور جلال ان کے لیے ہے جن میں کسی بھی طرح کوئی دوسرا ان کا شریک ہرگز نہیں ہوسکتا ۔ دوسری قسم : توحید ربوبیت : انسان کو اس بات کا عقیدہ رکھنا چاہیے کہ بیشک اللہ تعالی مخلوق کو پیدا کرنے میں انہیں رزق دینے میں اور ان کے امور کی تدبیر میں اکیلے وحدہ لاشریک ہیں ۔ وہ ہی تمام مخلوقات کی پرورش اپنی نعمتوں سے کرتے ہیں ۔
    تیسری قسم : توحید الوہیت : اسے توحید عبادت بھی کہا جاتا ہے ۔ یہ اس بات کا علم اور اعتراف ہے کہ اللہ تعالی کو اپنی تمام تر مخلوقات پر الوہیت اور عبودیت کا حق حاصل ہے ۔ اور وہ ہر قسم کی عبادت میں اکیلا وحدہ لاشریک ہے ۔ اور یہ کہ خالص عبادت صرف اللہ تعالی کے لیے بجا لائی جائے
    انبیاء کی دعوت سے مقصود اول سے آخر تک اسی توحید کی دعوت ہوا کرتی تھی ۔ پس مصنف محمد بن عبد الوہاب نے اس عنوان کے تحت وہ نصوص ذکر کی ہیں جن سے ثابت ہوتا ہے کہ اللہ تعالی نے مخلوقات کو اس لیے پیدا کیا ہے کہ وہ مخلص ہو کر صرف اور صرف اس کی عبادت کریں ۔ اور بندوں پر یہ اللہ تعالی فرض کردہ واجب حق ہے ۔ پس تمام آسمانی کتابوں اور تمام رسولوں کی دعوت اسی توحید کی طرف تھی ۔ اوروہ اس کے ساتھ ہی اس کے مخالف امور یعنی کسی کو شریک ٹھہرانے اور ہم پلہ بنانے سے منع کرتے رہے ۔ بالخصوص محمد ( ص ) اور یہ آخری کتاب قرآن مجید ۔ بیشک اس میں توحید کا حکم دیا گیا ہے اور اسے فرض قرار دیا ہے اور یہ بھی بتایا ہے کہ نجات اورکامیابی اور سعادت کا حصول توحید کے بغیر ممکن نہیں ۔ پس توحید بجالانا بندوں پر اللہ تعالی کا واجب حق ہے ۔ اور یہ دینی احکام میں سے سب سے بڑا حکم ہے اور تمام اصولوں کا بنیادی اصول اور ہر نیک عمل کی اساس ہے ۔
     
  7. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    ( 2 ) ۔ ۔ ۔ توحید کی فضیلت کا بیان
    { توحید کی فضیلت اور توحید کا تمام گناہوں کو مٹا دینا }
    اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے
    اَلَّذِيْنَ اٰمَنُوْا وَلَمْ يَلْبِسُوْۤا اِيْمَانَهُمْ بِظُلْمٍ اُولٰۤٮِٕكَ لَهُمُ الْاَمْنُ وَهُمْ مُّهْتَدُوْنَ ( سورۃ الأنعام ، 82 )
    " حقیقت میں تو امن انہی کے لیے ہے اور راہ راست پر وہی ہیں جو ایمان لائے اور جنہوں نے اپنے ایمان کو ظلم کے ساتھ آلودہ نہیں کیا "
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حدیث میں آتا ہے
    حضرت عبادہ بن صامت ( رض ) سے روایت ہے ، رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : " جو شخص شہادت دے کہ اللہ تعالی کے سوا کوئی معبود نہیں وہ اکیلا ہے ، اس کا کوئی شریک نہیں ۔ اوربیشک محمد ( ص ) اس کے بندے اور رسول ہیں ۔ اوربیشک عیسی ( ع ) اللہ تعالی کے بندے اور اس کے رسول ہیں ۔ اوراللہ تعالی کا کلمہ ہیں جس کا القاء سیدہ مریم ( ع ) کی طرف کیا گیا ۔ اور اسی کی طرف سے روح ہے ۔ اور بیشک جنت حق ہے اور دوزخ حق ہے ۔ ایسے شخص کو اللہ تعالی بہرحال جنت میں داخل کردے گا اگرچہ اس کے اعمال کیسے ہی ہوں " ( صحیح بخاری ، 3435 )
    عتبان ( رض ) سے روایت ہے کہ رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : " جو شخص اللہ تعالی کی رضا کے لیے " لآ اِلہٰ اِلّا اللّٰہ " کا اقرار کرتا ہے اللہ تعالی اسے دوزخ پر حرام کردیتا ہے ۔ ( صحیح بخاری ، 6423 )
    ابوسعید خدری ( رض ) رسول اللہ ( ص ) سے بیان کرتے ہیں کہ آپ ( ص ) نے فرمایا : " حضرت موسی ( ع ) نے عرض کیا : اے میرے رب ! مجھے ایسی چیز بتا جس سے تیری یاد کروں اور تجھ سے دعا کیا کروں ۔ اللہ تعالی نے فرمایا اے موسی ! لا اِلٰہ اِلَّا اللہ پڑھا کر ۔ موسی ( ع ) نے عرض کی : اے میرے رب : اسے تو تیرے سب بندے پڑھتے ہیں ۔ فرمایا : اے موسی ! سوائے میرے اگر ساتوں آسمان اور ان کے باشندے اور ساتوں زمینیں ، ترازو کے ایک پلڑے میں رکھ دیئے جائیں اور دوسرے پلڑے میں صرف لا اِلٰہ اِلَّا اﷲ رکھ دیا جائے تو لا اِلٰہ اِلَّا اﷲ والا پلڑا بھاری ہو گا ۔ " ( مستدرک الحاکم ، 1393 )
    انس ( رض ) فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ( ص ) کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے : اللہ تعالی نے فرمایا ہے کہ : " اے ابن آدم ! اگر تو میرے پاس گناہوں سے پوری زمین بھر کر لے آئے پھر اس میں شرک نہ ہو تو میں اسی مقدار میں بخشش کی بارش کروں گا ۔ " ( جامع ترمذی ، 3540 )
     
  8. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کی تشریح
    عبداللہ بن مسعود ( رض ) فرماتے ہیں : جب یہ آیت ( سورۃ الأنعام ، 82 ) نازل ہوئی : تو یہ صحابہ پر بہت گراں گزرا ۔ انہوں نے عرض کی : یا رسول اللہ ( ص ) : ہم میں سے کون ایسا ہے جس نے کبھی ظلم نہ کیا ہو ؟ آپ ( ص ) نے فرمایا : اس کا مطلب جو تم نے سمجھا ہے وہ صحیح نہیں ۔ یہاں ظلم سے مراد شرک ہے کیا تم نہیں سنتے کہ حضرت لقمان نے اپنے بیٹے کو کیا نصیحت کی تھی : بیٹے ! اللہ تعالی کے ساتھ کسی کو شریک نہ ٹھہرانا بلا شبہ شرک کرنا سب سے بڑا ظلم ہے ۔ ( صحیح بخاری ، 3429 )
    مستدرک الحاکم ، 1393 حدیث کو جامع الکلم سے تعبیر کیا جاتا ہے ۔ یہ حدیث عقائد کے اہم مسائل کو محیط ہے ۔ رسول اکرم ( ص ) نے اس میں اختصار کے ساتھ وہ تمام پہلو بیان فرما دیئے ہیں جن سے ایک انسان کفر کے مذاہب سے کٹ کر اسلام کے حصار میں آجاتا ہے ۔
    امام ابن تیمیہ ( رح ) الہ کا مطلب ان الفاظ میں بیان فرماتے ہیں : " الہ " اس معبود کو کہتے ہیں جس کی عبادت و اطاعت کی جائے ، کیونکہ الہ وہ ہے جس کی عبادت کی طرف دل از خود مائل ہو جائے ، حقیقت میں یہی ذات عبادت کے قابل ہے ۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ اس میں ایسی صفات کاملہ موجود ہیں جن کی وجہ سے وہ محبوب خلائق ہو جاتا ہے اور مخضوع وہ ہے جس کے سامنے انتہائی خضوع کے ساتھ جھکا جائے ۔ وہ ایسا محبوب اور معبود الہ ہے جس کی طرف قلوب پوری محبت سے کھنچ جاتے ہیں ۔ اسی کے سامنے دل جھکتے ہیں ، اسی کے سامنے عجز و انکساری کا مظاہرہ کرتے ہیں ، اسی سے ڈرتے ہیں اور اسی سے امیدیں وابستہ کرتے ہیں ، مصائب و آلام اور مشکلات کے وقت اسی کا دروازہ کھٹکھٹاتے ہیں ، مشکل اوقات میں اسی سے فریاد کرتے ہیں ، اپنے عزائم کی تکمیل کے لئے اسی سے فریاد کرتے ہیں ، اسی کے ذکر سے دل اطمینان حاصل کرتے ہیں ، اسی کی محبت میں سکون پاتے ہیں ۔ ان تمام صفات کی مالک صرف اللہ تعالی کی ذات ہے یہی وجہ ہے کہ تمام کلاموں میں سچا کلام لَا اِلٰہ اِلَّا اﷲ ہے اور اس کے تقاضوں کو پورا کرنے والے حزب اللہ ہیں ۔ اس کے منکر اور اس سے سرکشی کرنے والے اللہ تعالی کے دشمن اور اس کے غضب و قہر کا شکار ہیں ۔ جب یہ کلمہ صحیح ہو گیا تو اس کے ساتھ ہی تمام مسائل از خود حل ہو جائیں گے اور جس شخص کا یہ کلمہ ہی صحیح نہ ہوا تو اس کا لازمی نتیجہ یہ ہو گا کہ اس کے علم اور عمل میں فساد پیدا ہو جائے گا ۔
    محمد ( ص ) کی وضاحت : عبد کے معنی ہیں ایسا غلام جو عابد ہو ۔ معنی یہ ہوں گے کہ جناب محمد ( ص ) اللہ تعالی کے غلام ہیں جن کا خاصہ اور وصف عبودیت ہے جیسا کہ اللہ تعالی نے فرمایا : " کیا اللہ اپنے بندے کے لیے کافی نہیں ہے " ( سورۃ الزمر ، 36 ) بارگاہ الہی میں ایک انسان کا سب سے بلند ترین مقام و مرتبہ یہ ہے کہ وہ رسالت اور عبودیت خاصہ سے متصف ہو ۔ چنانچہ رسول اللہ ( ص ) میں یہ دونوں صفتیں بدرجہ اتم پائی جاتی ہیں ۔ رہی ربوبیت اور الوہیت تو یہ صرف اللہ تعالی کی صفات کاملہ ہیں اور یہ اسی کا حق ہے ۔ جس میں کسی بھی صورت میں نہ کوئی نبی و رسول شریک ہے اور نہ کوئی مقرب فرشتہ ۔
    عَبْدُہٗ وَ رَسُوْلُہٗ : رسول کریم ( ص ) کی یہ دو صفتیں ایک ہی جگہ بیان کی گئی ہیں جو افراط و تفریط کو ختم کرتی ہیں ۔ اکثر لوگ یہ دعوی کرتے ہیں کہ وہ امت محمدیہ میں داخل ہیں لیکن وہ قول و عمل میں انتہائی افراط کا ثبوت دیتے ہیں اور آپ ( ص ) کی پیروی کو ترک کر کے تفریط سے کام لیتے ہیں اور آپ ( ص ) کے احکام و فرامین پر عمل کے بجائے آپ ( ص ) کی مخالفت کرتے ہیں اور آپ ( ص ) کے فرمودات کی ایسی ایسی غلط تاویلیں کرتے ہیں جن کو حقیقت سے دور کا بھی واسطہ نہیں ہوتا ۔ اَنَّ مُحَمَّدً رَّسُوْلُ اللّٰهِ کی شہادت کا تقاضا یہ ہے کہ انسان رسول اللہ ( ص ) پر ایمان لائے ، جو آپ ( ص ) بتائیں اس کی تصدیق کی جائے ، جس کام کا آپ ( ص ) حکم دیں اس کی تعمیل کی جائے ، جس کام سے روک دیں اسے چھوڑ دیا جائے
    أن عیسیٰ عبداﷲ و رسولہ کا مفہوم : اس حدیث میں عیسائیوں کی تردید ہے ۔ عیسائیوں کے تین گروہ ہیں : 1 ۔ ایک گروہ کا کہنا ہے کہ عیسی ( ع ) ہی اللہ ہیں ۔ 2 ۔ دوسرے گروہ کا عقیدہ یہ ہے کہ عیسی ( ع ) اللہ کے بیٹے ہیں ۔ 3 ۔ تیسرے گروہ کا قول یہ ہے کہ عیسی ( ع ) تین میں سے تیسرے ہیں
    حدیث میں ان تینوں عقیدوں کی تردید فرمائی ۔ حق کو حق اور باطل کو باطل قرار دیا ۔ ارشاد فرمایا : " اور نہ کہو کہ " تین " ہیں باز آ جاؤ ، یہ تمہارے ہی لیے بہتر ہے اللہ تو بس ایک ہی خدا ہے وہ بالا تر ہے اس سے کہ کوئی اس کا بیٹا ہو " ( سورۃ النساء ، 171 ) اور فرمایا " یقیناً کفر کیا ان لوگوں نے جنہوں نے کہا مسیح ابن مریم ہی خدا ہے " ( سورۃ المائدة ، 17 )
    مومن کیلئے یہ ضروری ہے کہ وہ یہودیوں کے اس بہتان کی تردید کرے ۔ عیسی ( ع ) پر ایمان لائے اور یہودیوں کے ان تمام لغو اور باطل عقائد سے عیسی ( ع ) کو بری الذمہ قرار دے ۔ نیز اللہ تعالی کے اس فرمان پر ایمان اور یقین رکھے کہ عیسی ( ع ) اللہ تعالی کے بندے اور اس کے رسول تھے ۔
    جس جنت کے بارے میں اللہ تعالی نے اپنے کلام پاک میں خبر دی ہے اور جسے اللہ تعالی نے اپنے متقی بندوں کے لئے بنایا ہے وہ برحق اور موجود ہے ۔ اس میں شک نہیں ۔ اور اس بات کا بھی اقرار کرے کہ وہ دوزخ جس کو اللہ تعالی نے کافروں کے لئے تیار کیا ہے اور جس کی خبر قرآن کریم میں دی گئی ہے وہ بھی برحق اور موجود ہے جس میں شک کی کوئی گنجائش نہیں ۔ جنت کے بارے میں اللہ تعالی فرماتے ہیں : " دوڑو اور ایک دوسرے سے آگے بڑھنے کی کوشش کرو اپنے رب کی مغفرت اور اس کی جنت کی طرف جس کی وسعت آسمان و زمین جیسی ہے " ( سورۃ الحديد ، 21 ) اور دوزخ کے بارے میں فرمایا : " تو ڈرو اس آگ سے جس کا ایندھن بنیں گے انسان اور پتھر ، جو مہیا کی گئی ہے منکرین حق کے لیے " ( سورۃ البقرة ، 24 )
     
  9. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    اس باب میں مندرجہ ذیل مسائل ہیں
    1 ۔ ان احادیث سے معلوم ہوا کہ اللہ تعالی کا فضل بہت وسیع ہے ۔
    2 ۔ اللہ تعالی کے ہاں توحید کا ثواب بہت زیادہ ہے ۔
    3 ۔ توحید کا عقیدہ ثواب کے ساتھ ساتھ گناہوں کا کفارہ بھی ہے ۔
    4 ۔ سورۃ الأنعام کی آیت 82 کی تفسیر بھی واضح ہوئی کہ اس میں ظلم سے مراد شرک ہے ۔
    5 ۔ حدیث عبادہ میں جو پانچ امور مذکور ہیں ان پر غور کیا جائے کہ ان میں سرفہرست شرک نہ کرنا ہے ۔
    6 ۔ حدیث عبادہ ، حدیث عتبان اور اس کے بعد والی مذکورہ احادیث کو جمع کیا جائے تو کلمہ توحید ( لا ِلہ ِلا اللہ ) کا مفہوم مزید نکھر کر سامنے آتا ہے ۔ اور جو لوگ اس دھوکے میں مبتلا ہیں کہ محض زبان سے کلمہ توحید کا اقرار نجات کے لیے کافی ہے ، ان کی غلطی بھی واضح ہوتی ہے ۔
    7 ۔ حدیث عتبان میں مذکورہ شرط بھی قابل توجہ ہے کہ کلمہ گو نے اللہ تعالی کی رضا کے لیے کلمہ پڑھا ہو ۔
    8 ۔ انبیاء بھی اس کلمہ کی اہمیت و فضیلت کو جاننے کے محتاج تھے ۔
    9 ۔ یہ امر بھی قابل غور ہے کہ اگرچہ لا اِلہ اِلا اللہ تمام آسمانوں اور زمینوں سے وزنی ہے اس کے باوجود بہت سے کلمہ گو لوگوں کے پلڑے ہلکے ہوں گے ۔
    10 ۔ یہ بھی صراحت ہے کہ آسمانوں کی طرح زمینیں بھی سات ہیں ۔
    11 ۔ آسمانوں اور زمینوں میں اللہ تعالی کی مخلوق آباد ہے ۔
    12 ۔ اللہ تعالی کی بہت سی صفات ہیں جبکہ فرقہ اشاعرہ اللہ تعالی کی بعض صفات کا انکار کرتے ہیں ۔
    13 ۔ حدیث انس پر غور کریں تو سمجھ میں آتا ہے کہ حدیث عتبان جو شخص محض رضائے الہی کی خاطر کلمہ لا اِلہ اِلا اللہ کا اقرار کرے تو اللہ تعالی اس پر جہنم حرام کردیتا ہے سے مراد شرک کو کلی چھوڑ دینا ہے ۔ محض زبان سے کلمہ پڑھ لینا نجات کے لیے کافی نہیں ۔
    14 ۔ محمد ( ص ) اور عیسی ( ع ) دونوں اللہ تعالی کے بندے اور رسول ہیں ۔
    15 ۔ یہاں خصوصی طور پر عیسی ( ع ) کو اللہ تعالی کا کلمہ کہا گیا ہے ۔
    16 ۔ عیسی ( ع ) کو خصوصی طور پر اللہ کی روح کہا گیا ہے ۔
    17 ۔ ان احادیث سے جنت اور جہنم پر ایمان لانے کی اہمیت اور فضیلت بھی معلوم ہوئی ۔
    18 ۔ اس تفصیل سے حدیث عبادہ میں " خواہ اس کے اعمال کیسے ہی ہوں " کا مفہوم بھی متعین ہو جاتا ہے کہ جنت میں جانے کے لیے صاحب توحید یعنی موحد ہونا شرط ہے ۔
    19 ۔ روز قیامت اعمال کا وزن کرنے کے لیے جو ترازو رکھی جائے گی اس کے بھی دو پلڑے ہوں گے ۔
    20 ۔ اللہ تعالی کے لیے " وجه " یعنی چہرہ کا اثبات یعنی اللہ تعالی کی اس صفت پر ایمان لانا بھی ضروری ہے ۔ ( صحیح بخاری ، 6423 کا عربی متن )
     
  10. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کا خلاصہ
    اس باب میں توحید کی فضیلت بیان کی گئی ہے اور بتایا گیا ہے کہ توحید تمام گناہوں کو حرف غلط کی طرح مٹا دیتی ہے ۔ جب مصنف محمد بن عبد الوہاب نے پہلے باب میں توحید کے واجب ہونے کو بیان کیا اور بتایا کہ بندوں پر عائد فرائض میں سب سے بڑا فریضہ اللہ تعالی کی توحید بجا لانا ہے تو اب یہاں پر توحید کے قابل ستائش نتائج اور اس کے خوبصورت ثمرات کوبیان کیا جارہا ہے ۔
    مصنف کا یہ کہنا کہ : توحید گناہوں کو حرف غلط کی طرح مٹا دیتی ہے ۔ اس کا تعلق خاص کے عام پر عطف سے ہے ۔ کیونکہ گناہوں کی بخشش اور مغفرت توحید کے چند ایک فضائل و ثمرات میں سے ایک ہے ۔ جیسا کہ اس باب میں اس پر دلائل بھی ذکر کئے گئے ہیں۔ توحید کے کچھ فضائل :
    1 ۔ دنیا اور آخرت کی پریشانیاں ختم ہونے اور دونوں جہاں میں سزا سے بچنے کا بڑا سبب توحید ہے ۔
    2 ۔ اور اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہے کہ موحد انسان کے دل میں جب رائی کے دانے برابر بھی ایمان ہوگا تو وہ ہمیشہ کے لیے جہنم میں نہیں رہے گا
    3 ۔ اور جب انسان کامل توحید پر کاربند ہو تو وہ بالکل جہنم میں داخل ہی نہیں ہوگا ۔
    4 ۔ موحد انسان کو دنیا اور آخرت میں کامل ہدایت اورامن حاصل ہوتے ہیں ۔
    5 ۔ توحید اللہ تعالی کی رضامندی اور اس کے ہاں سے ثواب پانے کا ایک واحد سبب ہے ۔ اور قیامت والے دن خوش نصیب انسان وہ ہوگا جس نے خلوص قلب سے لاإلہ إلا اللہ کہا ہو اور اسے محمد ( ص ) کی شفاعت نصیب ہو جائے ۔
    6 ۔ تمام تر اعمال کی قبولیت ان پر ثواب کے حصول کا دارو مدار توحید پر مبنی ہوتا ہے ۔ پس جب بھی توحید مضبوط ہوگی اوراللہ تعالی کے لیے اخلاص کامل ہوگا تو یہ تمام امور بھی کامل و مکمل ہوں گے ۔
    7 ۔ توحید کی وجہ سے انسان پر نیکی کے کام کرنا اور برائی سے بچنا آسان ہو جاتا ہے ۔
    8 ۔ جب کسی انسان کے دل میں توحید کامل ہو جاتی ہے تو اللہ تعالی اس کے دل میں ایمان کو محبوب اور مزین کردیتے ہیں ۔
    9 ۔ توحید کی وجہ سے انسان کے لیے دکھ درد اور تکالیف کا برداشت کرنا آسان ہو جاتا ہے ۔
    10 ۔ توحید کی سب سے بڑی فضیلت یہ ہے کہ اس کی وجہ انسان مخلوق کی بندگی سے آزاد ہوکر صرف ایک اللہ کا بندہ بن جاتا ہے ۔ بندوں کا خوف اور ان سے امیدیں ختم ہو جاتی ہیں اور پھر انسان ان کو راضی کرنے کے لیے اپنے آپ کو ذلیل نہیں کرتا ۔ یہ وہ حقیقی شرف اور عزت ہے جو اس وقت نصیب ہوتی ہے جب انسان صرف ایک اللہ تعالی کی عبادت بجا لاتا ہے ۔
    11 ۔ توحید کی وہ فضیلت جس کے برابر کوئی دوسرا شرف و فضل نہیں ہوسکتا وہ یہ کہ : جب انسان کے دل میں توحید کامل ہوجاتی ہے تو اس کا تھوڑا عمل بھی بہت زیادہ ہو جاتا ہے ۔ اس کے اعمال کو بلا حساب و کتاب بڑھا دیا جاتا ہے ۔
    12 ۔ اللہ تعالی نے دنیا میں اہل توحید کی فتح و نصرت اور عزت و شرف اور حصول ہدایت اور ہر قسم کی آسانی کی ذمہ داری اپنے آپ پر لی ہوئی ہے جس سے انسان کے احوال کی اصلاح ہوتی ہے اور اس کے اقوال و افعال کو درست کردیا جاتا ہے ۔
    13 ۔ اللہ تعالی دنیا و آخرت کے شر و فساد سے اہل توحید کی حفاظت فرماتے ہیں اور ان پر اپنا احسان کرتے ہوئے انہیں پاکیزہ اور اطمینان بخش زندگی بخشتے ہیں ۔
     
  11. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    ( 3 ) ۔ ۔ ۔ جس نے حقیقی توحید اختیار کی
    { حقیقی موحد بلا حساب جنت میں جائے گا }
    اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے
    اِنَّ اِبْرٰهِيْمَ كَانَ اُمَّةً قَانِتًا لِّـلّٰهِ حَنِيْفًاۗ وَلَمْ يَكُ مِنَ الْمُشْرِكِيْنَۙ ( سورۃ النحل ، 120 )
    " واقعہ یہ ہے کہ ابراہیم اپنی ذات سے ایک پوری امت تھا ، اللہ کا مطیع فرمان اور یک سو وہ کبھی مشرک نہ تھا "
    وَالَّذِيْنَ هُمْ بِرَبِّهِمْ لَا يُشْرِكُوْنَۙ ( سورۃ المؤمنون ، 59 )
    " جو اپنے رب کے ساتھ کسی کو شریک نہیں کرتے "
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حدیث میں آتا ہے
    حصین بن عبدالرحمن ( رض ) سے روایت ہے فرماتے ہیں : میں ایک دفعہ سعید بن جبیر کے پاس تھا کہ سعید کہنے لگے : آج رات ستارے کو ٹوٹتے ہوئے تم میں سے کس نے دیکھا ہے ؟ حصین نے کہا کہ ہاں میں نے دیکھا ہے ۔ پھر کہنے لگے کہ میں نماز میں مشغول نہ تھا بلکہ مجھے کسی چیز نے کاٹ کھایا تھا جس کی مجھے سخت تکلیف تھی ۔ انہوں نے کہا پھر تم نے کیا کیا ؟ انہوں نے کہا کہ میں نے جھاڑ پھونک سے کام لیا ۔ انہوں نے کہا یہ کیوں کیا ؟ میں نے کہا شعبی سے مروی ایک حدیث کی بناء پر ۔ انہوں نے پوچھا وہ کیا حدیث ہے جو انہوں نے بیان کی ہے ؟ میں نے کہا : ہم سے بریدہ بن الحصیب نے حدیث بیان کی کہ نظر بد اور کسی زہریلی چیز کے کاٹ کھانے کے سوا اور کہیں جھاڑ پھونک یا دم مفید نہیں ۔ جس شخص نے جو سنا اسی پر اکتفا کیا اور اسی پر عمل پیرا رہا تو اس نے بہت اچھا کیا ۔ سیدنا ابن عباس( رض ) نے رسول اللہ ( ص ) سے بیان کیا : مجھے بہت سی امتیں دکھائی گئیں ۔ میں نے دیکھا کہ کسی نبی کے ساتھ تو بہت بڑی جماعت ہے اور کسی نبی کے ساتھ صرف ایک یا دو ہی آدمی ہیں اور ایسے نبی کو بھی دیکھا جس کے ساتھ کوئی بھی نہ تھا ۔ اچانک میرے سامنے ایک انبوہ کثیر آیا ، میں نے خیال کیا کہ کہ میری امت ہو گی لیکن مجھ سے کہا گیا کہ یہ موسی ( ع ) اور ان کی قوم ہے ۔ اس کے بعد میں نے ایک بہت ہی بڑے انبوہ کو دیکھا ، مجھے بتایا گیا کہ یہ آپ کی امت ہے اور آپ کی امت میں ان کے ساتھ ستر ہزار افراد وہ ہیں جو بغیر حساب اور عذاب کے جنت میں داخل ہوں گے ۔ یہ واقعات سنا کر رسول اللہ ( ص ) اپنے گھر تشریف لے گئے ۔ پس صحابہ کرام ( رض ) آپس میں ان ستر ہزار افراد کے بارے میں قیاس آرایئاں کرنے لگے ۔ بعض کا کہنا تھا کہ یہ وہ لوگ ہیں جن کو آپ ( ص ) کی صحبت کا شرف حاصل ہے ۔ بعض صحابہ کرام نے کہا کہ یہ وہ لوگ ہوں گے جو اسلام میں پیدا ہوئے اور انہوں نے اللہ تعالی کے ساتھ کسی چیز کو شریک نہ کیا ، اس کے علاوہ صحابہ کرام ( رض ) نے اور توجیہات بھی کیں ۔ نبی اکرم ( ص ) جب تشریف لائے تو صحابہ کرام ( رض ) نے اپنی مختلف آراء کا اظہار کیا ۔ رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : بلکہ یہ وہ افراد ہوں گے جو دم نہیں کرواتے اور نہ وہ داغ لگواتے ہیں اور نہ فال لیتے ہیں اور وہ اپنے اللہ پر توکل کرتے ہیں ۔ حضرت عکاشہ بن محصن ( رض ) نے کھڑے ہو کر عرض کی : یا رسول اللہ میرے لئے دعا فرمائیے ، اللہ تعالی مجھے ان میں سے کردے ۔ رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : " تو ان میں سے ہی ہے ۔ " اس کے بعد ایک دوسرے صحابی نے عرض کیا : میرے لئے بھی دعا فرمائیے کہ اللہ مجھے بھی ان میں سے کردے ۔ تو آپ ( ص ) نے فرمایا : " تم سے عکاشہ بازی لے گیا " ( صحیح مسلم ، 527 )
     
  12. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کی تشریح
    معنی یہ ہیں کہ انسان توحید کو اپنے عمل میں سمو لے اور اس کو شرک اور بدعت سے پاک کرے ۔ ایسا کرنا امت محمدیہ کے لئے بہت ضروری ہے ۔ یہ ان اہل ایمان کی خاص علامت ہے جن کو اللہ تعالی اپنی مخلوق میں سے چن لیتا ہے ۔ مخلصین کی تعداد ابتدائے اسلام میں بکثرت تھی لیکن آخر میں بہت کم رہ جائے گی اور وہ بھی مساکین پر مشتمل ہو گی ، البتہ ان کی قدر و منزلت اللہ کریم کے ہاں بہت بلند ہوگی ۔
    ( صحیح مسلم ، 527 ) کی حدیث کے ان الفاظ سے ان لوگوں کی تردید ہوتی ہے جو کثرت تعداد کو صحت مذہب کی دلیل قرار دیتے ہیں ۔ نجات پانے والے اگرچہ قلیل تعداد میں ہی ہوں ۔ حقیقت میں یہ ہی سواد اعظم ہیں ۔ کیونکہ ان کی قدر و منزلت اللہ تعالی کے ہاں بہت بلند ہے ۔ لہذا لوگوں کی کثرت تعداد پر دھوکہ نہ کھانا چاہئے کیونکہ سابقہ لوگ اسی کثرت کے گھمنڈ میں آکر ہلاک ہوگئے ، حتی کہ بعض اہل علم بھی جاہلوں اور گمراہ افراد کے عقائد میں گرفتار ہوگئے اور کتاب و سنت کو پس پشت ڈال دیا ۔ وہ ستر ہزار افراد جو بلا حساب و کتاب جنت میں داخل ہوں گے ان کی نمایاں صفت یہ ہے کہ وہ شرک کی کسی بھی قسم میں مبتلا نہ ہوں گے ۔ اس کا سب سے بڑا سبب یہ تھا کہ ان کا اللہ پر توکل اور بھروسہ تھا ۔ اپنی مشکلات صرف اللہ کے سامنے پیش کرتے تھے اور اللہ کی قضا و قدر کے علاوہ کسی کی طرف بھی ان کی توجہ نہ تھی ۔ وہ صرف اللہ کی طرف رجوع کرتے تھے ، اس کے سوا کسی سے نہیں ڈرتے تھے ۔ ان کا عقیدہ یہ تھا کہ جو مشکلات پیش آتی ہیں وہ اللہ کی تقدیر اور اس کی مرضی کے مطابق آتی ہیں لہذا وہ مصائب و مشکلات میں صرف اللہ تعالی ہی کو پکارتے تھے ۔ جیسا کہ قرآن کریم میں یعقوب ( ع ) کا رجوع الی اللہ منقول ہے کہ " اس نے کہا میں اپنی پریشانی اور اپنے غم کی فریاد اللہ کے سوا کسی سے نہیں کرتا ، اور اللہ سے جیسا میں واقف ہوں تم نہیں ہو " ( سورۃ يوسف ، 86 )
     
  13. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    اس باب میں مندرجہ ذیل مسائل ہیں
    1 ۔ توحید کے بارے میں لوگوں کے درجات و مراتب مختلف ہیں ۔
    2 ۔ توحید کے تقاضے پورے کرنے کا مفہوم بھی واضح ہوا ۔
    3 ۔ اللہ تعالی نے ابراہیم ( ع ) کی مدح میں فرمایا : وہ مشرکین میں سے نہ تھے ۔
    4 ۔ اللہ تعالی نے اس بات پر اولیائے کرام کی بھی مدح فرمائی ہے کہ وہ شرک سے بیزار ہوتے ہیں ۔
    5 ۔ دم کرنے اور جسم داغنے کے طریقہ علاج کو ترک کرنا ، توحید کے تقاضوں کو پورا کرنا ہے ۔
    6 ۔ ان تمام اوصاف کا احاطہ کرنا ہی درحقیقت حقیقی توکل ہے ۔
    7 ۔ صحابہ کرام ( رض ) کے علم کی گہرائی اور ان کی حقیقت پسندی کا بھی پتہ چلتا ہے ۔ وہ یہ سمجھتے تھے کہ بلا حساب جنت میں جانے والوں کو یہ بلند مقام اور مرتبہ محض عمل کی بدولت حاصل ہو گا ۔
    8 ۔ صحابہ کرام ( رض ) کا خیر اور نیکی کے کاموں پرحریص ہونا ۔
    9 ۔ امت محمدیہ درجات کی بلندی اور کثرت تعداد کے لحاظ سے تمام امتوں سے افضل اور برتر ہے ۔
    10 ۔ موسی ( ع ) اور ان کی امت کی فضیلت بھی عیاں ہو رہی ہے ۔
    11 ۔ نبی کریم ( ص ) کے سامنے تمام امتیں پیش کی گئیں ۔
    12 ۔ ہر امت کو اپنے نبی کے ساتھ الگ اٹھایا جائے گا ۔
    13 ۔ انبیاء کی دعوت کو بالعموم بہت تھوڑے لوگوں نے قبول کیا ۔
    14 ۔ جس نبی پر ایک بھی شخص ایمان نہ لایا وہ قیامت کے دن اکیلا ہی آئے گا ۔
    15 ۔ اس علم کا نتیجہ یہ ہے کہ : کثرت تعداد پر مغرور اور قلت تعداد پر پریشان نہیں ہونا چاہیے کیونکہ قلت یا کثرت معیار حق نہیں ۔
    16 ۔ نظربد اور زہریلی چیز کے ڈسنے سے دم کرنا اور دم کروانا جائز ہے ۔
    17 ۔ سعید بن جبیر کے قول " جس شخص نے جو سنا اسی پر اکتفا کیا اور اسی پر عمل پیرا رہا تو اس نے بہت اچھا کیا " سے سلف صالحین کے علم کی گہرائی کا پتہ چلتا ہے ۔ نیز یہ بھی معلوم ہوا کہ پہلی حدیث دوسری حدیث کے خلاف نہیں ۔
    18 ۔ سلف صالحین بے جا تعریف و ستائش سے پر ہیز کیا کرتے تھے ۔
    19 ۔ رسول اللہ ( ص ) نے عکاشہ ( رض ) سے فرمایا : " تو ان میں سے ہی ہے ۔ " آپ کا یہ قول آپ کے صدق نبوت کے دلائل میں سے ایک دلیل ہے ۔
    20 ۔ عکاشہ ( رض ) کی فضیلت بھی ثابت ہوتی ہے ۔
    21 ۔ بوقت ضرورت تصریح کی بجائے اشارہ و کنایہ میں گفتگو کرنا جائز ہے ۔
    22 ۔ رسول اللہ ( ص ) انتہائی اعلی اور احسن اخلاق کے مالک تھے ۔
     
  14. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کا خلاصہ
    یہ باب گزشتہ باب کی تکمیل اور اس کے تابع ہے ۔ جب اقوال و افعال اور ارادہ میں اللہ تعالی کے لیے کمال اخلاص ہو تو اس سے شرک اکبر اور شرک اصغر کے علاوہ قولی اور اعتقادی ، فعلی اور عملی بدعات سے نجات ملتی ہے ۔ اور شرک اکبر سے مکمل سلامتی ملتی ہے جو کہ در حقیقت توحید کی بنیاد کے بالکل متناقض ہے ۔ اور شرک اصغر سے بھی نجات ملتی ہے جو کہ کمال توحید کے منافی ہے ۔ اور ان بدعات سے نجات ملتی ہے جن سے توحید مکدر ہوتی ہے
    پس یہ وہ انسان ہے جو بغیر حساب و کتاب کے جنت میں داخل ہوگا اور ان لوگوں میں سے ہوگا جو پہلے پہل جنت میں داخل ہوکر ٹھکانہ پائیں گے ۔
    توحید کی تحقیق و حقیقت میں جو چیز بطور خاص داخل ہے وہ اللہ تعالی کی بارگاہ میں کثرت کے ساتھ الحاح اور اللہ تعالی پر انتہائی قوی توکل کہ انسان کا دل کسی بھی معاملہ میں مخلوق کی طرف نہ لگے ۔ صرف اور صرف اللہ تعالی کی رضامندی اور محمد ( ص ) کی اطاعت ہو ۔ اس عظیم الشان مقام تک رسائی کے لیے لوگوں کے مختلف درجات ہوتے ہیں جیسا کہ اللہ تعالی فرماتے ہیں : " ہر شخص کا درجہ اس کے عمل کے لحاظ سے ہے " ( سورۃ الأنعام ، 132 )
    توحید کی حقیقت کا مطلب یہ نہیں ہے کہ صرف تمنائیں رکھی جائیں اورحقائق سے خالی دعوے کئے جائیں ۔اور نہ ہی میٹھی اور جھوٹی امیدیں رکھی جائیں ۔ بیشک یہ اس وقت ہوتا ہے جب دلوں میں عقائد اور ایمان کے حقائق موجود ہوں اور اعلی اخلاقیات سے ان کی تصدیق ہوتی ہے اور اس کے ساتھ ہی جلیل القدر اعمال صالحہ بھی بجا لائے جائیں ۔ پس جو کوئی توحید کے حقائق کو ان کی روشنی میں پورا کرتا ہے تو اسے وہ تمام فضائل حاصل ہونگے جن کی طرف اس باب میں اشارہ گزرا ہے ۔
     
  15. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    ( 4 ) ۔ ۔ ۔ شرک سے ڈرنا ضروری ہے
    { شرک سے ڈرنے کا بیان }
    اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے
    اِنَّ اللّٰهَ لَا يَغْفِرُ اَنْ يُّشْرَكَ بِهٖ وَيَغْفِرُ مَا دُوْنَ ذٰلِكَ لِمَنْ يَّشَاۤءُ ( سورۃ النساء ، 48 )
    " اللہ بس شرک ہی کو معاف نہیں کرتا، اِس کے ماسوا دوسرے جس قدر گناہ ہیں "
    وَاِذْ قَالَ اِبْرٰهِيْمُ رَبِّ اجْعَلْ هٰذَا الْبَلَدَ اٰمِنًا وَّاجْنُبْنِىْ وَبَنِىَّ اَنْ نَّـعْبُدَ الْاَصْنَامَۗ ( سورۃ ابراهيم ، 35 )
    " یاد کرو وہ وقت جب ابراہیم نے دعا کی تھی کہ پروردگار اس شہر کو امن کا شہر بنا اور مجھے اور میری اولاد کو بت پرستی سے بچا "
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حدیث میں آتا ہے
    رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا " مجھے تمہارے بارے میں سب سے زیادہ ڈر شرک اصغر کا ہے ۔" پوچھا گیا کہ شرک اصغر کیا ہے ؟ آپ نے فرمایا : " دکھلاوا " ( سلسله احاديث صحيحه ، 146 )
    عبد اللہ بن مسعود ( رض ) سے روایت ہے ، رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : جو شخص غیر اللہ کو پکارتے پکارتے مر گیا وہ جہنم میں داخل ہوگا ۔ ( صحیح بخاری ، 4497 )
    جابر ( رض ) سے مروی ہے ، رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : " جس شخص کو اس حالت اللہ سے ملا کہ اس نے شرک نہیں کیا ، تو وہ جنت میں داخل ہو گا اور جو اس حال میں اس سے ملا کہ وہ شرک کرتا تھا تو وہ جہنم میں داخل ہوگا ۔ " ( صحیح مسلم ، 270 )
     
  16. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کی تشریح
    ( سلسله احاديث صحيحه ، 146 ) کی حدیث میں دکھلاوا یعنی ریا کاری ۔ نبی کریم ( ص ) کو سب سے زیادہ خوف اور ڈر ، ریاکاری سے کیوں تھا ؟
    اس کے برے اثرات اور نتائج کی بنا پر یہ ناقابل معافی گناہ ہے اور اس لیے بھی کہ اس سے اکثر لوگ غافل رہتے ہیں ۔ اسی لیے آپ ( ص ) کو اپنی امت کے متعلق اس گناہ کا زیادہ اندیشہ تھا ۔ ریا کی دو اقسام ہیں ۔
    ( 1 ) ایک تو منافق کی ریاکاری اور دکھلاوا ہے جس کا تعلق اصل دین کے ساتھ ہے یعنی وہ لوگوں کو دکھانے کے لیے اسلام کا اظہار کرتا ہے جبکہ باطن میں کفر چھپائے ہوتا ہے ۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے : " محض لوگوں کو دکھانے کی خاطر اٹھتے ہیں اور خدا کو کم ہی یاد کرتے ہیں " ( سورۃ النساء ، 142 )
    ( 2 ) دوسری ، مسلمان موحد کی ریا ہے ۔ جیسے کوئی لوگوں کو دکھانے یا شہرت حاصل کرنے کے لیے خوب بنا سنوار کر نماز ادا کرے اور یہ شرک اصغر ہے ۔
     
  17. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    اس باب میں مندرجہ ذیل مسائل ہیں
    1 ۔ انسان کو ہر وقت شرک سے ڈرتے ہوئے اور بچ کر رہنا چاہئے ۔
    2 ۔ ریا کاری بھی شرک کی ایک قسم ہے ۔
    3 ۔ ریا کاری شرک اصغر ہے ۔
    4 ۔ نیک لوگوں پر باقی گناہوں کی نسبت ریا کاری کا اندیشہ زیادہ ہے ۔
    5 ۔ جنت اور جہنم قریب ہیں ۔
    6 ۔ اس ایک ہی حدیث میں جنت اور جہنم کے قریب ہونے کا اکٹھے ذکر کیا گیا ہے ۔
    7 ۔ شرک نہ کرنے والا آدمی جنت میں ضرور جائے گا اور جسے شرک کی حالت میں موت آئی وہ جنت میں نہیں جاسکتا بلکہ وہ جہنم میں جائے گا اگرچہ وہ بہت بڑا عابد اور زاہد ہی کیوں نہ ہو ۔
    8 ۔ ابراہیم خلیل اللہ ( ع ) کی اپنے لیے اور اپنی اولاد کے لیے بتوں کی عبادت سے محفوظ رہنے کی دعا ۔
    9 ۔ ابراہیم ( ع ) کے قول سے پتہ چلتا ہے کہ : آپ نے اکثریت کی حالت سے عبرت حاصل کی اور دعا کی ۔ " پروردگار ، ان بتوں نے بہتوں کو گمراہی میں ڈالا ہے " ( سورۃ ابراهيم ، 36 )
    10 ۔ ان احادیث سے کلمہ " لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللّٰهُ " کی تفسیر واضح ہوتی ہے جیسے امام بخاری ( رح ) کا بیان ہے ۔
    11 ۔ شرک سے محفوظ رہنے والوں کی فضیلت ۔
     
  18. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کا خلاصہ
    توحید الوہیت اور عبادت میں شرک ہر لحاظ سے توحید کے منافی ہے ۔ شرک کی دو اقسام ہیں : شرک جلی اور شرک خفی ۔ شرک جلی کو شرک اکبر اور شرک خفی کو شرک اصغر بھی کہا جاتا ہے ۔
    شرک اکبر : اس کا مطلب یہ ہے کہ : اللہ تعالی کے ساتھ کسی اور کو ساجھی بنایا جائے اور اسے ایسے ہی پکارا جائے جیسے اللہ تعالی کو پکارا جاتا ہے ۔ اور اس کا خوف دل میں رکھا جائے ۔ اور اس سے امیدیں وابستہ کی جائیں ۔ اور اس سے ایسے محبت کی جائے جیسے اللہ تعالی سے محبت کی جاتی ہے یا پھر عبادت کی جملہ اقسام میں سے کوئی ایک عبادت اس کے لیے بجا لائی جائے ۔ اس شرک کی صورت میں ایسے انسان کے پاس توحید کا کوئی معمولی سا حصہ بھی باقی نہیں رہتا ۔ اورایسا انسان وہ مشرک ہے جس پر اللہ تعالی نے جنت حرام کردی ہے
    شرک اصغر : اس میں وہ تمام اقوال و فعال شامل ہوتے ہیں جو شرک اکبر تک پہنچنے کا وسیلہ بنتے ہیں ۔ جیسے مخلوق کی شان میں اتنا غلو جوکہ عبادت کے مرتبہ تک نہ پہنچتا ہو ۔ اور غیر اللہ کی قسم اٹھانا اور معمولی قسم کی ریاکاری کرنا ۔ اور اس طرح کے دیگر امور ۔ شرک توحید کے منافی ہے ۔ پس اگر شرک شرک اکبر ہو تواس کی وجہ سے مشرک جہنم میں داخل ہوگا اورہمیشہ ہمیشہ وہیں رہے گا اور اس پر جنت حرام کر دی گئی ہے ۔ اور انسان کو سعادت مندی اور کامیابی اس وقت تک نصیب نہیں ہوسکتی جب تک اس سے کلی طور پر اجتناب نہ کرلے ۔ پس انسان پر یہ حق ہے کہ وہ شرک سے ڈر کر رہے اوردور رہے ۔ اور اس کے اسباب اور وسائل اورذرائع سے بھی بچتا رہے اور اللہ تعالی سے عافیت اور سلامتی کی دعا مانگتا رہے جیسا کہ انبیاء اور اولیاء اللہ کا طریقہ کار رہا ہے ۔ انسان کو چاہیے کہ اپنے دل میں توحید اور ایمان اور اخلاص کو بڑھانے اور اسے قوت دینے کے لیے اپنی کوششیں بروئے کار لائے ۔ اس کے لیے اللہ تعالی سے کامل تعلق ہونا چاہیے ۔ اور اسی کی طرف رجوع کیا جائے اور اس کا خوف ہو اور اسی سے امیدیں اور آرزوئیں وابستہ کی جائیں ۔ اور بندہ اپنے ہر ایک قول و فعل میں اور ظاہری اور باطنی طور پر منع کردہ امور کے ترک کرنے میں اس کی رضامندی اور ثواب کا متلاشی رہے ۔
    بلاشک و شبہ اللہ کے لیے اخلاص شرک اکبر اور شرک اصغر کی جڑیں کاٹ کر رکھ دیتا ہے ۔ اور جو کوئی بھی جس قدر بھی شرک میں گرفتار ہوتا ہے یقینا اس کے اخلاص میں اس قدر کمی ہوتی ہے ۔
     
  19. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    ( 5 ) ۔ ۔ ۔ شہادت " لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ " کی تبلیغ و دعوت کا بیان
    { لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ کی گواہی کے لئے لوگوں کو دعوت دینا }
    اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے
    قُلْ هٰذِهٖ سَبِيْلِىْۤ اَدْعُوْۤا اِلَى اللّٰهِ ۗ عَلٰى بَصِيْرَةٍ اَنَاۡ وَمَنِ اتَّبَعَنِىْ ۗ وَسُبْحٰنَ اللّٰهِ وَمَاۤ اَنَاۡ مِنَ الْمُشْرِكِيْنَ ( سورۃ یوسف ، 108 )
    " تم ان سے صاف کہہ دو کہ میرا راستہ تو یہ ہے ، میں اللہ کی طرف بلاتا ہوں ، میں خود بھی پوری روشنی میں اپنا راستہ دیکھ رہا ہوں اور میرے ساتھی بھی ، اور اللہ پاک ہے اور شرک کرنے والوں سے میرا کوئی واسطہ نہیں "
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حدیث میں آتا ہے
    ابن عباس ( رض ) فرماتے ہیں : رسول اللہ ( ص ) نے معاذ بن جبل ( رض ) کو یمن کی طرف بھیجا تو فرمایا : " تمہارا جانا اہل کتاب کے پاس ہوگا تمہیں چاہیے کہ سب سے پہلے ان کو کلمہ لَا اِلٰہ اِ لَّا اللہ کے اقرار کی دعوت دو ۔ " ایک روایت میں یہ الفاظ ہیں : " کہ وہ اللہ تعالی کی وحدانیت کا اقرار کرلیں ۔ " اگر وہ یہ بات مان لیں تو پھر ان کو بتانا کہ اللہ تعالی نے ایک دن اور رات میں پانچ نمازیں فرض کی ہیں ۔ اگر اس کا بھی مان لیں تو پھر ان کو بتانا کہ اللہ نے ان کے مال میں زکوۃ فرض کی ہے جو ان کے مالداروں سے وصول کرکے ان کے فقراء میں تقسیم کی جائے گی ۔ اگروہ یہ بھی مان لیں تو ان کے عمدہ مال وصول کرنے سے احتراز کرنا اور مظلوم کی آہ سے ڈرتے رہنا کیونکہ مظلوم کی آہ و پکار اور اللہ تعالی کی ذات کے درمیان کوئی پردہ حا ئل نہیں ہوتا ۔ " ( صحیح بخاری ، 4347 )
    سہل بن سعد ( رض ) سے روایت ہے کہ غزوہ خیبر کے دن رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : میں کل ایسے شخص کو پرچم دوں گا جو اللہ تعالی اور اس کے رسول سے محبت کرتا ہے اور اللہ تعالی اور اس کا رسول اس سے محبت کرتے ہیں ۔ اس کے ہا تھ پر اللہ تعالی فتح دے گا ۔ پس رات بھر صحابہ ( رض ) سوچتے رہے کہ یہ پرچم کس کو دیا جائے گا ؟ صبح کے وقت تمام صحابہ کرام ، رسول اللہ ( ص ) کے پاس پہنچ گئے اور ہر شخص کی یہ خواہش تھی کہ پرچم اسے دیا جائے ۔ رسول اللہ ( ص ) نے دریافت فرمایا کہ علی بن ابی طالب کہاں ہیں ؟ صحابہ کرام نے عرض کی : ان کی آنکھ درد کر رہی ہے ۔ صحابہ ( رض ) نے آدمی بھیج کر حضرت علی ( رض ) کو بلالیا ۔ رسول اللہ ( ص ) نے جناب علی ( رض ) کی آنکھ میں لعاب دہن ڈالا اور دعا فرمائی آپ ( رض ) اسی وقت اس طرح تندرست ہو گئے جیسے ان کو کوئی درد ہی نہ تھا ۔ رسول اکرم ( ص ) نے جناب علی ( رض ) کو پرچم دیا اور فرمایا : مجاہدین کو لے کر نکل جاؤ اور میدان معرکہ میں جا کر دم لو ۔ اور پھر ان کو اسلام کی دعوت دینا اور انہیں بتانا جو اللہ تعالی کے حقوق ان پر عائد ہوتے ہیں ۔ اللہ کی قسم ! اگراللہ آپ کے ہاتھ پر ایک آدمی کو ہدایت دے تو یہ تیرے لیے سرخ اونٹوں سے زیادہ بہتر ہے ۔ ( صحیح بخاری ، 3701 )
     
  20. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کی تشریح
    ۔
    ۔
    ۔ ۔ ۔
     
  21. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    اس باب میں مندرجہ ذیل مسائل ہیں
    1 ۔ رسول اکرم ( ص ) کے متبعین کا انداز تبلیغ یہ ہے کہ وہ پہلے لوگوں کو اللہ کے دین کی دعوت دیتے ہیں ۔
    2 ۔ اخلاص نیت کی بھی ترغیب ہے کیونکہ اکثر لوگوں کا حال یہ ہے کہ وہ دعوت الی الحق کے کام میں مخلص نہیں ہوتے بلکہ وہ لوگوں کو بالعموم اپنی ذات کی طرف بلاتے ہیں ۔
    3 ۔ دعوت کے کاموں میں بصیرت سے کام لینا ضروری ہے ۔
    4 ۔ توحید کا ایک تقاضا یہ بھی ہے کہ اللہ تعالی کو ہر عیب اور نقص سے پاک تسلیم کیا جائے ۔
    5 ۔ شرک کی ایک قباحت یہ بھی ہے کہ یہ اللہ تعالی کے بارے میں گالی ہے ۔
    6 ۔ اس باب کا ایک اہم ترین مسئلہ یہ بھی ہے کہ مسلمان کو مشرکین سے الگ تھلگ اور دور رہنا چاہئے ۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ وہ شرک نہ کرنے کے باوجود ان کے ساتھ میل جول کی بنا پر ان کا ساتھی بن جائے ۔
    7 ۔ واجبات دین میں توحید اولین واجب مسئلہ ہے ۔
    8 ۔ نماز اور دیگر احکام دین سے پہلے توحید کی تبلیغ کی جائے ۔
    9 ۔ رسول اللہ ( ص ) کے فرمان ان يشهدوا ان لا إله إلا الله کا مطلب یہ ہے کہ لا اِلہ اِلا اللہ کا اقرار کیا جائے ۔ ( صحیح بخاری ، 4347 کا عربی متن )
    10 ۔ کچھ لوگ اہل کتاب ہونے کے باوجود عقیدہ توحید سے کماحقہ باخبر نہیں ہوتے یا جاننے کے باوجود اس پر عمل نہیں کرتے ۔
    11 ۔ یہ بھی معلوم ہوا کہ دین کی تعلیم مرحلہ وار دینی چاہئے ۔
    12 ۔ تبلیغ کے دوران اہمیت کے مطابق مسائل بیان کئے جائیں ۔
    13 ۔ زکوۃ کے مصرف کا بھی بیان ہے ۔
    14 ۔ معلم کا فرض ہے کہ وہ متعلم کے شبہات کو بھی دور کرے ۔
    15 ۔ زکوۃ وصول کرتے وقت چن کر عمدہ اور قیمتی مال لینا منع ہے ۔
    16 ۔ مظلوم کی آہ و بد دعا اور اللہ تعالی کے درمیان کوئی حجاب نہیں ۔ مظلوم کی بد دعا سے بچنا چاہیے ۔
    17 ۔ محمد ( ص ) ، صحابہ اکرام ( رض ) اور اولیا کرام پر مشقتوں ، بھوک اور تکالیف کا گزرنا بھی توحید کی ایک بہت بڑی دلیل ہے ۔
    18 ۔ رسول اللہ ( ص ) کا یہ ارشاد کہ " میں کل ایسے شخص کو پرچم دوں گا "علامات نبوت میں سے ہے ۔
    19 ۔ نبی کریم ( ص ) کا علی ( رض ) کی آنکھ میں لعاب ڈالنا اور ان کا فورا صحت یاب ہو جانا بھی آپ ( ص ) کا معجزہ ہے ۔
    20 ۔ علی ( رض ) کی فضیلت بھی ظاہر ہوتی ہے ۔
    21 ۔ صحابہ کرام ( رض ) کی عظمت اور فضیلت بھی واضح ہے کہ وہ ساری رات یہ سوچتے رہے کہ صبح یہ پرچم کس خوش نصیب کو ملنے والا ہے ۔ اور اس سوچ میں وہ فتح کی بشارت بھول گئے ۔
    22 ۔ایمان بالقدر بھی ثابت ہوتا ہے کہ پرچم ایسے آدمی کو ملا جس نے اس کے حصول کی خواہش یا کوشش نہیں کی بلکہ کوشش کرنے والے اور خواہش رکھنے والے اسے حاصل نہ کر سکے ۔
    23 ۔ رسول اللہ ( ص ) کا علی ( رض ) سے فرمانا : " عَلَى رِسْلِكَ " اس میں آداب کی تعلیم ہے ۔ ( صحیح بخاری ، 3701 کا عربی متن )
    24 ۔ جنگ سے پہلے کفار کو اسلام کی دعوت دینی چاہئے ۔
    25 ۔ لوگوں سے اولین خطاب ہو یا قبل ازیں جنگ ہوچکی ہو یا دعوت دی جاچکی ہو ، ہر صورت میں جنگ سے قبل اسلام کی دعوت دینا مشروع ہے ۔
     
  22. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کا خلاصہ
    یہ باب اس بات کو ثابت کرنے کے لیے قائم کیا ہے کہ توحید کی تکمیل اور شرک سے بچنے کا ایک تقاضا یہ بھی ہے کہ دوسروں کو توحید کی دعوت دی جائے ۔ کیونکہ کسی بات کا دل میں اعتقاد رکھنا ، زبان سے اس کا اقرار کرنا اور اس سے دوسروں کو مطلع کرنا یہ سب امور گواہی میں شامل ہوتے ہیں ۔
    ان ابواب میں یہ ترتیب جسے مصنف محمد بن عبد الوہاب نے اختیار کیا ہے انتہائی مناسب اور عمدہ ترتیب ہے ۔ اس سے پہلے ابواب میں آپ نے توحید کے وجوب اوراس کے فضائل کا ذکر کیا تھا ۔ اور توحید اور اس کی تکمیل کی ترغیب دی تھی کہ اسے ظاہری اور باطنی طور پر مکمل کیا جائے اور اس کے مخالف امور سے بچ کر رہا جائے ۔ پھر اس باب میں اس توحید کی تکمیل کا ایک پہلو یہ بھی ذکر کیا کہ دوسروں کو اس کی دعوت دی جائے ۔ جیسا کہ مختلف احادیث میں ہے ۔ یہ درحقیقت تمام انبیاء کا طریقہ اور راستہ ہے ۔ یہ ہستیاں اپنی امتوں کو سب سے پہلے اللہ تعالی وحدہ لاشریک کی عبادت کی دعوت دیتے ہیں ۔ اور یہی طریقہ محمد ( ص ) کا تھا ۔ آپ کا سب سے بڑا کام ہی اس توحید کی دعوت تھی ۔ آپ حکمت کے ساتھ اور عمدہ اور دلنشین وعظ کے ساتھ اوراچھے رد کے ساتھ لوگوں میں یہ دعوت پیش کرتے تھے ۔ آپ نہ ہی کبھی اس دعوت سے علیحدہ ہوئے اور نہ ہی کبھی اس کی تبلیغ میں کمزوری دیکھائی ۔
    جیسے انسان خود اللہ کی توحید پر ہوتا ہے ویسے ہی اس پر واجب ہوتا ہے کہ وہ لوگوں کو بھی اچھے طریقے سے اللہ تعالی کی توحید کی طرف دعوت دے اور جو کوئی بھی اس کے ہاتھ پر ہدایت پالے گا تو اس کے لیے ان سب کے برابر اجر ہوگا اور ان میں سے کسی ایک کے اجر میں بھی کچھ بھی کمی نہیں کی جائے گی ۔ جب اللہ تعالی کی طرف دعوت خصوصا توحید یعنی " لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ " کی دعوت ہر ایک پر واجب ہے تو یہ واجب ہر انسان کی استطاعت کے اعتبار سے ہے ۔ پس عالم پر واجب ہوتا ہے کہ دعوت و ارشاد کے ذریعہ اس کو بیان کرے ۔ لوگوں کو توحید کی راہ دکھانا عام انسان کی نسبت سے عالم پر بڑا واجب ہے ۔ اور جس انسان کے جسم اور ہاتھ میں طاقت ہو یا اس کے پاس مال خرچ کرنے کے امکان ہوں یا پھر وہ اپنے مقام و مرتبہ سے اثر انداز ہو سکتا ہو تو اس پر یہ فریضہ اس انسان کی نسبت بڑا فریضہ ہے جس کے پاس یہ امکانات نہیں ہیں ۔
    اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں: " لہذا جہاں تک تمہارے بس میں ہو اللہ سے ڈرتے رہو " ( سورۃ التغابن ، 16 )
    اس انسان پر اللہ تعالی رحم فرمائیں جو دین کے معاملہ میں معاون ومددگار ہو ۔
     
  23. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    ( 6 ) ۔ ۔ ۔ توحید کی تفسیر
    { توحید کی تفسیر اور کلمہ لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ کی گواہی کا مطلب }
    اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے
    اُولٰۤٮِٕكَ الَّذِيْنَ يَدْعُوْنَ يَبْتَغُوْنَ اِلٰى رَبِّهِمُ الْوَسِيْلَةَ اَيُّهُمْ اَقْرَبُ وَيَرْجُوْنَ رَحْمَتَهٗ وَيَخَافُوْنَ عَذَابَهٗۗ اِنَّ عَذَابَ رَبِّكَ كَانَ مَحْذُوْرًا ( سورۃ الإسراء ، 57 )
    " جن کو یہ لوگ پکارتے ہیں وہ تو خود اپنے رب کے حضور رسائی حاصل کرنے کا وسیلہ تلاش کر رہے ہیں کہ کون اس سے قریب تر ہو جائے اور وہ اس کی رحمت کے امیدوار اور اس کے عذاب سے خائف ہیں حقیقت یہ ہے کہ تیرے رب کا عذاب ہے ہی ڈرنے کے لائق "
    وَاِذْ قَالَ اِبْرٰهِيْمُ لِاَبِيْهِ وَقَوْمِهٖۤ اِنَّنِىْ بَرَاۤءٌ مِّمَّا تَعْبُدُوْنَۙ O اِلَّا الَّذِىْ فَطَرَنِىْ فَاِنَّهٗ سَيَهْدِيْنِ O وَ جَعَلَهَا كَلِمَةًۢ بَاقِيَةً فِىْ عَقِبِهٖ لَعَلَّهُمْ يَرْجِعُوْنَ ( سورۃ الزخرف ، 26 تا 28 )
    " یاد کرو وہ وقت جب ابراہیم نے اپنے باپ اور اپنی قوم سے کہا تھا کہ تم جن کی بندگی کرتے ہو میرا ان سے کوئی تعلق نہیں + میرا تعلق صرف اس سے ہے جس نے مجھے پیدا کیا ، وہی میری رہنمائی کرے گا + اور ابراہیم یہی کلمہ اپنے پیچھے اپنی اولاد میں چھوڑ گیا تاکہ وہ اس کی طرف رجوع کریں "
    اِتَّخَذُوْۤا اَحْبَارَهُمْ وَرُهْبَانَهُمْ اَرْبَابًا مِّنْ دُوْنِ اللّٰهِ ۔ ۔ ۔ ( سورۃ التوبة ، 31 )
    " انہوں نے اپنے علماء اور درویشوں کو اللہ کے سوا اپنا رب بنا لیا ہے "
    وَمِنَ النَّاسِ مَنْ يَّتَّخِذُ مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ اَنْدَادًا يُّحِبُّوْنَهُمْ كَحُبِّ اللّٰهِۗ وَالَّذِيْنَ اٰمَنُوْۤا اَشَدُّ حُبًّا لِّـلّٰهِ ۔ ۔ ۔ ( سورۃ البقرة ، 165 )
    " کچھ لوگ ایسے ہیں جو اللہ کے سوا دوسروں کو اس کا ہمسر اور مدمقابل بناتے ہیں اور ان کے ایسے گرویدہ ہیں جیسے اللہ کے ساتھ گرویدگی ہونی چاہیے "
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حدیث میں آتا ہے
    رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : " جس نے لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ کا اقرار کیا اور اللہ تعالی کے سوا جس چیز کی عبادت کی جاتی ہے اس کا انکار کیا تواس کی جان اور مال محفوظ ہو گیا ، اور اس کا حساب اللہ تعالی پر ہے ۔ ( صحیح مسلم ، 130 )
     
  24. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کی تشریح
    ۔
    ۔
    ۔ ۔ ۔
     
  25. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    اس باب میں مندرجہ ذیل مسائل ہیں
    1 ۔ اس میں سب سے اہم مسئلہ توحید اور کلمہ لا اِلہ اِلا اللہ کی گواہی دینے کی تفسیر ہے جسے متعدد آیات و احادیث سے واضح کیا گیا ہے ۔
    2 ۔ ( سورۃ الإسراء ، 57 ) اس میں ان مشرکین کی تردید ہے جو صالحین اور بزرگان کو پکارتے ہیں ، اس آیت میں صاف صاف بیان ہے کہ ایسا کرنا شرک اکبر ہے ۔
    3 ۔ ( سورۃ التوبة ، 31 ) اس میں اللہ تعالی نے واضح طور پر فرمایا ہے کہ : اہل کتاب نے اللہ تعالی کے ساتھ ساتھ اپنے علما اور بزرگوں کو بھی رب بنا رکھا تھا حالانکہ انہیں صرف اورصرف ایک اللہ کی عبادت کا حکم دیا گیا تھا ۔ اور اس آیت کی وہ تفسیر جس میں کوئی اشکال یا ابہام نہیں یہ ہے کہ اہل کتاب اپنے علما اور بزرگوں کو مصیبت یا مشکل کے وقت پکارتے ہی نہیں تھے بلکہ معصیت کے کاموں میں ان کی اطاعت کرتے تھے ۔
    4 ۔ ( سورۃ الزخرف ، 26 تا 28 ) میں ابراہیم ( ع ) کی اس بات کا بھی تذکرہ ہے جو انہوں نے کفار سے کہی تھی اور یوں ابراہیم ( ع ) نے کفار کے معبودان باطلہ سے اپنے حقیقی رب کو مستثنی کیا ۔ اللہ تعالی نے بیان فرمایا کہ کفار سے اس طرح کی برات و بے زاری اور اللہ تعالی کی موالات و محبت کا اظہار ہی کلمہ لا اِلہ اِلا اللہ کی گواہی دینا ہے ۔
    5 ۔ سورۃ البقرة کی آیت 167 میں اللہ تعالی نے کافروں کے متعلق فرمایا ہے : " مگر آگ سے نکلنے کی کوئی راہ نہ پائیں گے " اور ان کے متعلق ( سورۃ البقرة ، 165 ) میں فرمایا کہ وہ اپنے خود ساختہ معبودوں ، اور اللہ کے شریکوں سے یوں محبت کرتے ہیں جیسی محبت اللہ تعالی کے ساتھ ہونی چاہئے ۔ نیز واضح فرمایا کہ وہ اللہ تعالی سے بھی شدید محبت رکھتے ہیں لیکن ان کی یہ محبت انہیں اسلام میں داخل نہیں کرسکی ۔
    غور کریں کہ جب اللہ تعالی اور اس کے ساتھ ساتھ غیر اللہ سے محبت کرنے والے مسلمان نہیں تو اللہ تعالی سے بڑھ کر شریکوں سے محبت کرنے والوں یا اللہ تعالی کو چھوڑ کر صرف غیر اللہ سے محبت کرنے والوں کا کیا حال ہو گا ؟
    6 ۔ اور ایک دلیل ( صحیح مسلم ، 130 ) میں رسول اللہ ( ص ) کا فرمان ہے ۔ یہ فرمان مبارک کلمہ لا اِلہ اِلا اللہ کے معنی و مفہوم کو صحیح طور پر واضح کرتا ہے ۔ کہ محض اس کلمہ کو زبان سے ادا کرلینے اور اس کے معنی کی معرفت حاصل کرلینے ، اقرار کرلینے اور اکیلے اللہ کو بغیر شریک ٹھہرائے پکار لینے سے مال و جان کو تحفظ نہیں مل جاتا بلکہ مال و جان کو تحفظ اسی وقت ہی مل سکتا ہے جب اس کے ساتھ ساتھ معبودان باطلہ کا انکار بھی کیا جائے ۔
    یاد رہے کہ اگر کسی نے ان باتوں میں سے کسی ایک میں بھی ذرا سا شک یا توقف کیا تو اس کی جان اور مال کو تحفظ و امان حاصل نہ ہوسکے گا ۔ غور کریں یہ مسئلہ کس قدر اہم ،عظیم اور کس قدر واضح ہے اور مخالفین کے خلاف کتنی بڑی قاطع دلیل ہے ۔
     
  26. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کا خلاصہ
    توحید کی تفسیر اور لا إلہ إلا اللہ کی گواہی ان دونوں کا ایک ہی معنی ہے ۔ اوران کا تعلق مترادفین کے ایک دوسرے پر عطف کے باب سے ہے ۔ یہ مسئلہ دین کے بڑے اہم ترین مسائل میں سے ہے جیسا کہ مصنف محمد بن عبد الوہاب نے فرمایا ہے ۔ تفسیر توحید کی حقیقت یہ ہے کہ : توحید کا علم ہونا : اور اس بات کا اعتراف کرنا کہ اللہ تعالی اپنی تمام صفات کمال میں اکیلے اور وحدہ لاشریک ہیں اور اسی کے لیے خالص عبادت بجا لانا ۔
    اس کا اصل مرجع دو باتیں ہیں ۔
    اول : غیر اللہ سے ہر قسم کی الوہیت کی نفی یہ کہ انسان اچھی طرح جان لے اوریہ عقیدہ رکھے کہ صرف وہی الوہیت کا مستحق ہے اور مخلوق میں سے کوئی ایک بھی عبودیت میں سے کسی ایک چیز کا بھی کچھ بھی مستحق نہیں ہوسکتا خواہ وہ کوئی نبی اور رسول ہو یا پھر کوئی مقرب فرشتہ وغیرہ ۔ عبادت میں مخلوق میں سے کسی ایک کا بھی کوئی بھی حصہ نہیں ہے ۔
    دوم : صرف اللہ وحدہ لاشریک لہ کے لیے الوہیت کا اثبات اس کی وحدانیت اور انفرادیت کا اقرار ۔ یعنی تمام عالی شان صفات کمال صرف ایک اللہ کے لیے مانی جائیں ۔ اس لیے کہ صرف خود یہ عقیدہ رکھ لینا ہی کافی نہیں ہے حتی کہ انسان تمام تر دین کو صرف اور صرف اللہ کی رضا کے لیے خالص کردے ۔ اور اسلام اور ایمان کے ارکان بجا لائے ۔ احسان کے مراتب پورے کرے ۔ اور اللہ تعالی کے حقوق اور مخلوق کے حقوق ادا کرے ۔ اس تمام عمل سے مقصود صرف اورصرف اللہ تعالی کی رضا مندی کا حصول ہو ۔ اور یہ بھی جان لینا چاہیے کہ اس کلمہ کی مکمل درست تفسیر اور اس کے معانی کی حقیقی تکمیل اسی صورت میں ممکن ہے جب غیراللہ کی عبادت سے برات کا اظہار کیا جائے ۔ اور یہ کہ ایسے محبوب بنانا جن سے ایسے محبت کی جائے جیسے اللہ تعالی سے محبت کی جاتی ہے یا پھر ان کی اس طرح سے اطاعت کرنا جیسے اللہ تعالی کی اطاعت کی جاتی ہے یا اس کے لیے ایسے اعمال سر انجام دینا جیسے اعمال اللہ تعالی کے لیے بجا لائے جاتے ہیں یہ سارے کام لا إلہ إلا اللّٰه کی تفسیر اور معانی کے بہت سخت منافی ہیں ۔
    کلمہ شہادت کا اقرار کرنے والوں میں جب تک یہ شرائط نہ ہوں گی اس وقت تک اس کے فوائد برکات کا حصول ممکن نہیں ہے :
    1 ۔ کلمہ شہادت کا اقرار کرنے والا ایسے علم سے بہرہ مند ہو جو جہالت کی ضد ہو ۔
    2 ۔ ایسے یقین سے آراستہ ہو جو شک سے پاک ہو ۔
    3 ۔ ایسی پذیرائی سے مالا مال ہو جس میں تردید کا کوئی شائبہ نہ ہو ۔
    4 ۔ ایسی اطاعت اس کو نصیب ہو جس میں شرک کا امکان نہ ہو ۔
    5 ۔ ایسے اخلاص پر فائز ہو جس میں شرک کا کوئی پہلو نہ پایا جائے ۔
    6 ۔ صدق مقال کا وہ مقام حاصل ہو کہ جس میں کذب نہ ہو ۔
    7 ۔ توحید سے ایسی محبت رکھے جس میں شرک کی مخالفت پائی جائے ۔
    امام ابن تیمیہ ( رح ) فرماتے ہیں کہ : شریعت اسلامی کے مطالعہ سے بالبداہت یہ ثابت ہے ، نیز آئمہ اسلام کا متفقہ فیصلہ یہ ہے کہ اسلام کی روح یا سب سے پہلے انسان جس چیز کا مکلف اور مامور ہے وہ لآ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ مُحمدُ رَّسُولُ اللہ کا اقرار ہے ۔ یہی کلمہ وہ حد فاصل ہے جس کے اقرار کے بعد ایک کافر ، مسلمان کہلاتا ہے اور دشمن دوست بن جاتا ہے ۔ یہی وہ کلمہ ہے جس کے اقرار سے پہلے انسان کی جان اور اس کا مال مسلمانوں کے لئے جائز اور مباح تھے ، اور اس کے اقرار کے بعد اس کی جان اور مال مسلمانوں پر حرام قرار پائے ۔ کوئی شخص اگر کلمہ شہادت کا صدق دل سے اقرار کرے گا تو ایمان اس کے قلب میں داخل ہو جائے گا اور اسے مومن کہا جائے گا اور اگر کسی شخص نے صرف زبان سے اقرار کیا اور دل میں اس پر یقین نہ کیا تو ایسے شخص کو بظاہر مسلمان ہی کہا جائے گا لیکن حقیقت میں وہ مومن نہ ہو گا ۔ البتہ جو شخص قدرت اور طاقت کے ہوتے ہوئے اس کلمہ شہادت کا اقرار نہ کرے ، ایسا شخص بالاتفاق کافر ہے ۔ اس پر سلف صالحین ، ائمہ کرام اور جمہور محدثین کا اتفاق ہے ۔
     
  27. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    ( 7 ) ۔ ۔ ۔ بلا ٹالنے کے لئے کڑا یا کنڈا وغیرہ پہنا
    { رفع بلاء اور دفع مصائب کے لئے چھلے اور دھاگے وغیرہ پہننا شرک ہے }
    اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے
    ۔ ۔ ۔ قُلْ اَفَرَءَيْتُمْ مَّا تَدْعُوْنَ مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ اِنْ اَرَادَنِىَ اللّٰهُ بِضُرٍّ هَلْ هُنَّ كٰشِفٰتُ ضُرِّهٖۤ اَوْ اَرَادَنِىْ بِرَحْمَةٍ هَلْ هُنَّ مُمْسِكٰتُ رَحْمَتِهٖ ۗ قُلْ حَسْبِىَ اللّٰهُ ۗ عَلَيْهِ يَتَوَكَّلُ الْمُتَوَكِّلُوْنَ ( سورۃ الزمر ، 38 )
    " ان سے کہو ، جب حقیقت یہ ہے تو تمہارا کیا خیال ہے کہ اگر اللہ مجھے کوئی نقصان پہنچانا چاہے تو کیا تمہاری یہ دیویاں ، جنہیں تم اللہ کو چھوڑ کر پکارتے ہو ، مجھے اس کے پہنچائے ہوئے نقصان سے بچا لیں گی ؟ یا اللہ مجھ پر مہربانی کرنا چاہے تو کیا یہ اس کی رحمت کو روک سکیں گی ؟ بس ان سے کہہ دو کہ میرے لیے اللہ ہی کافی ہے ، بھروسہ کرنے والے اسی پر بھروسہ کرتے ہیں "
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حدیث میں آتا ہے
    عمران بن حصین ( رض ) سے مروی ہے کہ : رسول اللہ ( ص ) نے ایک شخص کے ہاتھ میں پیتل کا چھلہ دیکھا ۔ آپ ( ص ) نے اس سے پوچھا یہ کیا ہے ؟ اس شخص نے جواب دیا کہ یہ واہنہ کی وجہ سے ہے ۔ آپ ( ص ) نے فرمایا : " اسے اتار دے ، یہ تجھے کمزوری کو سوا کچھ فائدہ نہ دے گا ۔ " اگر اس چھلہ کو پہنے ہوئے تجھے موت آگئی تو تو کبھی نجات نہ پائے گا ۔ ( سنن ابن ماجہ ، 3531 )
    عقبہ بن عامر ( رض ) سے روایت ہے ، رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : " جس نے کوئی تمیمہ لٹکایا ، اللہ تعالی اس کی مراد پوری نہ کرے اور جس نے سیپ باندھی اللہ تعالی اسے آرام نہ دے ۔ " اور ایک روایت میں ہے : " جس نے کوئی تمیمہ لٹکایا ، تو اس نے شرک کیا " ( مسند احمد ، 7739 ۔ 7740 )
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ابن ابی حاتم نے حضرت حذیفہ ( رض ) کے متعلق بیان کیا ہے : " آپ نے ایک شخص کے ہاتھ میں بخار سے تحفظ کے لیے دھاگا بندھا ہوا دیکھا تو انہوں نے اسے کاٹ ڈالا اور یہ آیت تلاوت فرمائی : " ان میں سے اکثر اللہ کو مانتے ہیں مگر اس طرح کہ اس کے ساتھ دوسروں کو شریک ٹھیراتے ہیں " ( سورۃ یوسف ، 106 ) [ تفسیر ابن ابی حاتم : 7 / 120 ]
     
  28. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کی تشریح
    ( سنن ابن ماجہ ، 3531 ) والی حدیث کی سند ضعیف ہے مگر امام احمد ( رح ) اس روایت کو مسند احمد 7738 میں ایسی سند سے بیان کیا ہے جس میں کوئی نقص نہیں ہے ۔ اس حدیث میں جس بیماری واہنہ کا ذکر ہے اس کے متعلق امام ابن الاثیر الجزری ( رح ) فرماتے ہیں کہ واہنہ ایک ایسی بیماری ہے جس میں کندھے یا پورے بازو کی رگ پھول جاتی ہے ۔ تکلیف سے نجات کے لئے دم بھی کرتے ہیں ۔ بعض اہل علم کا قول ہے کہ کہنی اور کندھے کے درمیانی حصہ میں بعض اوقات تکلیف ہوجایا کرتی ہے ۔ یہ تکلیف مردوں کو ہوتی ہے عورتوں کو نہیں ۔
    ( مسند احمد ، 7739 ۔ 7740 ) مذکورہ بالا احادیث میں تمیمہ اور سیپ کی مذمت وارد ہوئی ہے ۔ کوئی چیز لوہے کی ہو یا پیتل کی ، منکا یا دھاگہ اسے گلے میں ڈالنا کلائی یا بازو میں باندھنا یا انگلی یا پاؤں میں ۔ ۔ ۔ اس نیت سے کہ اس کی وجہ سے آرام آجائے گا سخت ممنوع ہے بلکہ شرک ہے
    نظربد سے تحفظ ، نقصان سے بچاؤ اور کسی کے حسد سے حفاظت کی خاطر ، منکے یا کوئی دوسری چیز جو گلے میں پہنی اور سینے پر لٹکائی جائے اسے تمیمہ کہا جاتا ہے ۔ ایسا کرنے والے پر نبی کریم ( ص ) نے بددعا فرمائی ہے کہ اللہ تعالی اس کی مراد پوری نہ کرے ۔ تمیمہ کو تمیمہ کہنے کی وجہ بھی یہی ہے کہ اس کے بارے میں انسان کا یہ اعتقاد ہوتا ہے کہ میرا کام یہ ہی مکمل اور تمام کریں گے ۔ تو آپ ( ص ) نے اسی بد اعتقادی کی بنا پر بد دعا فرمائی کہ اللہ تعالی اس کا کام مکمل اور پورا ہی نہ کرے ۔
    اور سیپ بھی منکوں کی ایک قسم ہے جسے لوگ گلے میں پہن کر سینے پر رکھتے ہیں یا پھر نظربد سے بچنے کے لیے بازو پر باندھتے ہیں ۔ ایسا کرنے والے کے بارے میں رسول اللہ ( ص ) نے بد دعا فرمائی کہ اللہ تعالی ایسے شخص کو آرام و سکون اور راحت میں نہ رہنے دے ۔ کیونکہ اس نے اللہ کے ساتھ شرک کیا ۔
    آپ ( ص ) نے یہ شدید انداز تخاطب اس لئے اختیار فرمایا کہ عربوں کا عقیدہ تھا کہ یہ چیزیں دوا اور شفاء ہیں ۔
    عرب لوگ بچوں کو نظر بد سے محفوظ رکھنے کے لئے ان کے گلے میں کوڑیاں باندھتے تھے ۔ اسلام نے اس عمل کو باطل اور فضول قرار دیا ۔ ابن عمر ( رض ) کا فرمان ہے " اور اگر میں تمیمہ ڈال لوں تو پھر مجھے اس کے بعد کسی بھی گناہ کی پرواہ نہیں " یعنی یہ ہی سب سے بڑا گناہ ہے اور باقی اس سے پیچھے ہیں ۔
     
  29. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    اس باب میں مندرجہ ذیل مسائل ہیں
    1 ۔ چھلا پہننا اوردھاگہ وغیرہ باندھنے کی سخت ممانعت ۔
    2 ۔ اگر صحابی بھی اس نیت سے کوئی چیز پہنے ، باندھے یا لٹکائے اور اسی حال میں مرجائے تو وہ بھی کبھی فلاح نہیں پا سکتا ۔ حدیث میں صحابہ کی اس ٹھوس بات کے لیے شاہد بھی موجود ہے کہ شرک اصغر ، کبیرہ گناہوں میں سے ہے ۔
    3 ۔ جہالت کے سبب بھی ان اعمال کے مرتکب کو معذور نہیں سمجھا جائے گا ۔
    4 ۔ یہ چیزیں دنیا میں بھی مفید نہیں بلکہ مضر ہیں جیسا کہ نبی کریم ( ص ) نے فرمایا : یہ تجھے کمزوری کو سوا کچھ فائدہ نہ دے گا ۔
    5 ۔ ایسی چیزیں استعمال کرنے والے کو سختی سے روکنا چاہئے ۔
    6 ۔ یہ واضح رہے کہ جو شخص ، کوئی چیز باندھے یا لٹکائے تو اسے اسی کے سپرد کردیا جاتا ہے ۔
    7 ۔ یہ بھی واضح ہے کہ جس نے تمیمہ لٹکایا اس نے شرک کیا ۔
    8 ۔ بخار کی وجہ سے دھاگہ وغیرہ باندھنا بھی شرک ہے ۔
    9 ۔ حذیفہ ( رض ) کا اس موقع پر سورۃ یوسف کی آیت تلاوت کرنا یہ دلیل ہے کہ صحابہ کرام ( رض ) شرک اکبر کی آیات شرک اصغر کی تردید میں پیش کیا کرتے تھے ۔
    10 ۔ نظربد سے بچاؤ کے لیے سیپی باندھنا بھی شرک ہے ۔
    11 ۔ تمیمہ لٹکانے والے اور سیپی وغیرہ باندھنے والے کے لیے بد دعا کرنا ۔ جیسا کہ رسول اللہ ( ص ) نے فرمایا : اللہ تعالی اس کا کام مکمل اور پورا ہی نہ کرے ۔
     
  30. ساتواں انسان
    آف لائن

    ساتواں انسان ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2017
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    2,251
    ملک کا جھنڈا:
    باب کا خلاصہ
    اس باب کی فہم و سمجھ اسباب کے احکام کی فہم و دانست پر موقوف ہے ۔
    اس کی تفصیل یہ ہے کہ : انسان پر واجب ہوتا ہے کہ اسباب کے تعلق سے تین باتوں کو اچھی طرح سے جان لے
    1 ۔ سبب صرف اسی چیز کو مانا جائے گا جس کا صحیح معنوں میں موثر سبب ہونا شریعت اور تقدیر سے ثابت ہو ۔
    2 ۔ انسان کو صرف سبب پر اعتماد نہیں کرنا چاہیے ۔ بلکہ اس کے مسبب الاسباب اور مقدر کرنے والی ہستی پر اعتماد کرے حالانکہ بعض اسباب نہ صرف مشروع ہیں بلکہ ان میں سے نفع بخش اسباب اختیار کرنے کی ترغیب بھی دی گئی ہے ۔
    3 ۔ یہ بات بھی اچھی طرح سے جان لینی چاہیے کہ اسباب جتنے ہی بڑے اور مضبوط ہوں پھر بھی وہ اللہ تعالی کی قضاء و قدر سے مربوط ہوتے ہیں ۔ جن سے باہر نہیں جایا جاسکتا ۔ اور اللہ تعالی جیسے چاہیں ان میں تصرف کرتے ہیں ۔ اگر وہ چاہتے ہیں تو اپنی حکمت کے تحت اس کے سبب بننے کو ایسے جاری و ساری رہنے دیتے ہیں ۔ تاکہ بندے ان اسباب کو اختیار کریں اور اس طرح سے وہ اللہ تعالی کی حکمت کو جان سکیں کہ اس نے مسببات کو اسباب کے ساتھ اورمعلول کو علت کے ساتھ منسلک رکھا ہے ۔ اور اگر اللہ تعالی چاہتے ہیں تو اپنی مرضی و حکمت کے مطابق اس میں تبدیلی کردیتے ہیں ۔ تاکہ لوگ اسی پر کلی طور پر اعتماد نہ کرلیں ۔
    اور اللہ تعالی کی کمال قدرت کا اندازہ لگالیں کہ مطلق طور پر تصرف اور قدرت صرف اور صرف اللہ وحدہ لاشریک کے لیے ہے ۔ پس یہ چیز ہر انسان پر واجب ہے کہ وہ اپنی نظر اور عمل میں تمام اسباب کو جمع کردے ۔
    جب یہ معلوم ہوگیا کہ کڑا پہننا یا دھاگا باندھنا یا اس طرح کی دیگر کوئی حرکت کرنا جس سے مقصود مصیبت آنے کے بعد اس کو ختم کرنا ہو یا مصیبت کے آنے سے پہلے اس سے بچاؤ کی تدبیر کرنا ہو تو یہ کام یقینا شرک کا کام ہے ۔ اس لیے کہ اگر یہ حرکت کرنے والا انسان یہ عقیدہ رکھتا ہے کہ ایسا کرنے سے تکلیف یا پریشانی دور ہو جائے گی تو یہ عقیدہ رکھنا شرک اکبر ہے ۔
    یہ اللہ تعالی کی ربوبیت میں شرک ہے ۔ اس لیے کہ وہ اللہ تعالی کی تدبیر و تخلیق میں دوسروں کو شریک ٹھہراتا ہے ۔ اور ایسے ہی یہ عبودیت میں بھی شرک ہے ۔ اس طرح سے کہ یہ کام کرنے والے کا دل اس چیز کے ساتھ لگا ہوا ہے اسی لیے اس کے دل میں ان چیزوں سے فائدہ کے حصول کی طمع اور امید پائی جاتی ہے ۔ اگرچہ اس کا عقیدہ یہی ہے کہ نفع دینے والی اورپریشانی ختم کرنی والی ذات صرف اللہ تعالی کی ہے لیکن اس کے ساتھ ہی اس نے بلاء کے خاتمہ کے لیے ایسی چیز کے سبب ہونے کا اعتقاد رکھا ہے جس کا سبب ہونا شریعت میں یا عرف میں تقدیری طور پر ثابت نہیں ۔ پس ایسا کرنا حرام اور شریعت اور تقدیر پر جھوٹ ہے ۔ جہاں تک شریعت کا تعلق ہے تو شریعت میں اس کی بہت سخت ممانعت وارد ہوئی ہے ۔ پس جس چیز سے شریعت منع کر رہی ہو وہ کبھی بھی نفع بخش سبب نہیں بن سکتی ۔ اور جہاں تک تقدیر کا تعلق ہے تو ایسا کرنا ان اسباب معہودہ یا غیر معہودہ میں سے نہیں ہے جن سے مقصود حاصل ہوتا ہو ۔ اور نہ ہی یہ ان نفع بخش ادویہ میں سے ہے جن کا استعمال کرنا مباح ہے ۔ مزید برآں ایسا کرنا جملہ طور پر شرک کے وسائل میں سے ہے اس لیے کہ دل کا اس کے متعلقات سے معلق ہونا ضروری ہے ۔ تو ایسا کرنا بھی ایک قسم کا شرک اور اس کا وسیلہ ہے ۔ پس جب یہ امور ان شرعی اسباب میں سے نہیں ہیں جنہیں شریعت مطہرہ نے اپنے نبی کریم ( ص ) کی زبانی جائز اورمشروع ٹھہرایا ہے جن سے اللہ تعالی کی رضامندی اورثواب حاصل ہوسکتے ہیں ۔ اور نہ ہی ان قدری اسباب میں سے ہے جو علم یا تجربہ کی روشنی میں معلوم ہوتے ہیں جیسے مباح دوائیں وغیرہ ۔ اور جس انسان کا دل ان چیزوں سے لگا ہوتا ہے اس کے دل میں ان چیزوں سے فائدہ حاصل ہونے کی امید ہوتی ہے ۔ پس مومن پر لازم آتا ہے کہ ایسی تمام باتیں ترک کردے تاکہ اس کا ایمان اور توحید کامل ہو ۔ بلاشک و شبہ جب دل میں توحید کامل ہوجائے تو وہ ایسی چیزوں سے نہ لگا رہے جو توحید کے منافی ہوں ۔ نیز یہ امر عقل میں نقص یعنی کمی کی دلیل بھی ہے کہ یہ آدمی ایسی چیز کے پیچھے پڑا ہوا ہے جس سے کسی طرح بھی فائدہ حاصل نہیں ہوسکتا بلکہ الٹا اس کا محض نقصان ہی نقصان ہے ۔ شریعت کی بنیاد اس بات پر ہے مخلوق سے دلی تعلق ترک کرکے اوربت پرستی کو خیر آباد کہہ کر مخلوق کے لیے دین کی تکمیل کی جائے ۔ پس جس قدر لوگوں کی عقل کامل ہوگی وہ ان خرافات اور ڈھکوسلوں سے دور رہیں ۔ اور سنجیدگی سے ان نفع بخش امور کی طرف آئیں گے جن سے عقل میں ترقی نصیب ہوتی ہو اور نفوس کا تزکیہ ہوتا ہو ۔ اور جن میں دینی اور دنیاوی مصلحتوں کی رعایت ہو ۔
    واللہ اعلم
     

اس صفحے کو مشتہر کریں