1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

وصل کا عالم رہا ہے ہجر کے ماروں کے بیچ

'اردو شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از intelligent086, ‏24 نومبر 2019۔

  1. intelligent086
    آف لائن

    intelligent086 ممبر

    شمولیت:
    ‏28 اپریل 2013
    پیغامات:
    2,153
    موصول پسندیدگیاں:
    236
    ملک کا جھنڈا:
    وصل کا عالم رہا ہے ہجر کے ماروں کے بیچ
    تُو نظر آتا رہا ہے رات بھر تاروں کے بیچ

    راکھ ہو جاتے ہیں اپنے شوق میں اہل جنوں
    پھول الفت کے کھلا کرتے ہیں انگاروں کے بیچ

    کو بہ کو رسوائیاں دیتی ہیں دل کو حوصلے
    منزلیں خود چل کے آ جاتی ہیں دیواروں کے پیچ

    خود فریبی حد سے باہر بھی تو کچھ اچھی نہیں
    ’ہاں‘ دکھائی دے رہی ہے تیرے انکاروں کے بیچ

    ساری دنیا ایک جانب اور تو ہے اک طرف
    دیکھتے رہتے ہیں تجھ کو پیار سے ساروں کے بیچ
    ٭٭٭

    یاسمین حبیب​
     

اس صفحے کو مشتہر کریں