1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

حجاز ریلوے لائن اور سلطنتِ عثمانیہ

'متفرقات' میں موضوعات آغاز کردہ از کنعان, ‏8 مارچ 2019۔

  1. کنعان
    آف لائن

    کنعان ممبر

    شمولیت:
    ‏25 جولائی 2009
    پیغامات:
    729
    موصول پسندیدگیاں:
    977
    ملک کا جھنڈا:
    حجاز ریلوے لائن اور سلطنتِ عثمانیہ
    Hejaz Railway Line Or Saltanat e Usmania

    رواں دواں ریلوے لائن رک چکی تھی، جو جہاں تھا ٹھہر چکا تھا۔ اس کے مسافر، اس کا عملہ، اس کے نگران جو سب محوِسفر یا وہ جو اپنی انتظامی ذمے داریوں پر اپنے اسٹیشنوں پر متعین تھے، سب کے سب جوں کے توں تباہ کر دیے گئے۔ جابجا بکھری یہ تباہ شدہ باقیات اس عظیم حجاز ریلوے کی یاد لیے کھڑی ہیں جو 1908ء سے 1916ء تک دمشق سے مدینہ منورہ تک آتی تھی۔

    [​IMG]
    سرزمینِ حرمین الشریفین حجاز 1518ء سے سلطنتِ عثمانیہ کی عمل داری میں شامل تھا۔ یہاں پر ان کا مقرر کردہ گورنر ''شریفِ مکہ'' کہلاتا تھا۔ آخری شریفِ مکہ حسین بن علی تھا جو عرب کے ہاشمی خاندان سے تھا اور جسے 1909ء میں عثمانی سلطان عبدالحمید ثانی نے شریفِ مکہ نامزد کیا تھا۔ سلطان عبدالحمید ثانی کا بڑا کارنامہ دمشق سے مدینہ منورہ تک حجاز ریلوے کی تعمیر تھی جو شریفِ مکہ، بدو قبائل اور اونٹوں کے کاروانی مالکوں کی عملی مخالفت اور طویل تر زمینی خدوخال اور موسمی مشکلات کے باوجود 1908ء میں مدینہ منورہ تک مکمل اور رواں دواں ہو گئی۔ تاہم مکہ مکرمہ اور جدہ تک اس کی توسیع میں شریفِ مکہ اور اس کے حواری بدستور رکاوٹ ڈال رہے تھے تاآنکہ 1914ء میں پہلی جنگِ عظیم چھڑ گئی اور یہ منصوبہ مؤخر ہو گیا۔

    1916ء میں شریفِ مکہ حسین بن علی نے برطانیہ کے ساتھ گٹھ جوڑ کر کے تحریک بیداریٔ عرب کے نام پر عثمانی ترکوں کے خلاف بغاوت کا اعلان کر دیا اور انگریزوں کی عسکری اور مالی اعانت کے ساتھ لارنس آف عریبیہ کی عملی سرکردگی میں بغاوت کو پروان چڑھا کر سلطنتِ عثمانیہ کی عمل داری کا خاتمہ کرتے ہوئے دمشق سے مدینہ منورہ تک ترکوں کی رواں دواں شہ رگ حجاز ریلوے لائن کو تباہ و برباد کر دیا۔

    حجاز ریلوے لائن کے ساتھ سفر

    میں نے مدتوں مدینہ منورہ سے عمان (اُردن) تک حجاز ریلوے لائن کے ساتھ ساتھ سفر کیا۔ صحرا کی وسعتوں میں عربی کی مانوس آوازوں کو سنتے، کھجور کے درختوں، عربی طرز کے مکانات دیکھتے، صحرا کی اڑتی ریت سے اَٹی ریلوے لائن اور سنگلاخ پہاڑوں کو کاٹ کر بنائی گئی پٹری کا مشاہدہ کرتے، ترکی طرزِ تعمیر میں تراشیدہ پتھروں سے بنے چھوٹے بڑے خوبصورت اسٹیشن اور ان سے پرے پیچھے ہٹتے ہوئے ترک فوجی قلعے اور بیرکیں، پٹری کے لیے کہیں کہیں بنے تراشیدہ پتھروں کے ترک طرزِ تعمیر کے پل، اس کے ساتھ ہی جابجا تباہ شدہ ریل کی پٹریاں اور ان پر کھڑی جلی ہوئی زنگ آلود بوگیاں ، تباہ شدہ ریل گاڑی کا انجن اور دور جا کر گرے ہوئے ریل گاڑی کے ڈبے، یہ سب عجیب دنیا کا منظر لگتا تھا۔

    [​IMG]
    [​IMG]

    شہرِ مدینہ منورہ میں بابِ عنبریہ کے ساتھ سیاہ گنبدوں والی خوبصورت عنبریہ مسجد سے ملحق سرمئی تراشیدہ پتھروں سے بنا مدینہ منورہ کا حجاز ریلوے اسٹیشن عربی اور ترکی فنِ تعمیر کا حسین امتزاج ہے اور عثمانی ترکوں کے آخری دم تک طویل دفاعِ مدینہ کی وجہ سے آج بھی اپنی اصلی ہیئت میں محفوظ ریل کی پٹری، ڈبے اور انجن سمیت عثمانیوں کی یاد دلاتا ہے۔ حجاز ریلوے کی مدینہ منورہ سے دمشق تک جاتی ریلوے لائن کہیں کچی ریتلی زمین پر بچھی ہوئی اور کہیں پہاڑی اُتار چڑھاؤ میں سے گزرتی ہے لیکن ریگستانی اور پہاڑی دونوں راستوں پر پھیلی یہ ریلوے لائن ہموار اور ستواں ہے۔ گرد و پیش ہر طرف پہاڑ ہی پہاڑ ہیں۔ کہیں کسی چھوٹی وادی سے گزرتی اور کہیں خودرو درختوں سے گھرا نخلستان پار کرتی تو کہیں کسی غیر آباد علاقے اور وسیع ویرانے کو عبور کرتی العلا تک پہنچ جاتی ہے۔

    جزیرہ نمائے عرب کا قدرتی دفاعی حصار شمال مغرب میں کوہِ لبنان سے شروع ہونے والا وہ پہاڑی سلسلہ ہے جو جنوب میں باب المندب تک اور پھر اس سلسلۂ کوہ پر یہ خط ایک عمود بناتا ہوا ایک دوسرے پہاڑی سلسلے میں سارے جنوبی کنارے پر پھیلتا عمان تک چلا گیا ہے۔ اس کے علاوہ خشک اور بنجر زمین تہامہ ہے جو بحیرہ قلزم کے ساتھ ساتھ چلتی ساحلی میدان کی ایک تنگ پٹی ہے جو پہاڑوں کے ساتھ ساتھ جن کی اونچائی ۴۰۰۰؍فٹ تک بلند ہے اور سیدھی ڈھلوان سمندر کی طرف ہے۔ خلیج عقبہ اور مکہ مکرمہ کے درمیان ان پہاڑوں کی اونچائی 4000؍فٹ سے 7000؍فٹ تک بلند ہے۔ حجاز کے ان ساحلی پہاڑوں کا سیدھا مغربی ڈھلوان صدیوں پہلے نمودار ہونے والے غیر معمولی تغیرو تبدل کے نتیجے میں ہوا جب زمین کی سطح سمندر کے ساتھ ساتھ پھیلتی چلی گئی اور بلند و بالا پہاڑوں کے مغربی حصے بڑے بڑے ٹکڑوں کی صورت میں اس بڑی کھائی میں لڑھکتے ، پھر بحیرہ قلزم کی موجوں نے اس کھائی کو بھر کر برابر کر دیا۔

    حجازیہ جبلِ سراۃ کا کوہستانی علاقہ ہے جو یمن سے شام تک پھیلا ہوا ہے۔ اس علاقے میں بے آب و گیاہ پہاڑوں کا ایک لامتناہی سلسلہ ہے جس میں خشک اور ناقابلِ عبور دروں کا ایک جال ہے۔ یہ تمام علاقہ غیرآباد ہے اور اس خاموش صحرا میں بچھی حجاز ریلوے لائن پر وقفوں کے ساتھ چھوٹے چھوٹے اسٹیشنوں کا ایک ٹھہراؤ ہے۔ قدیم حجاز ریلوے کا خوبصورت، مسحورکن نظارہ، اس کا ماحولیاتی حسن اور دیدہ زیب و جاذبِ نگاہ عثمانی طرزِ تعمیر کے دلفریب ریلوے اسٹیشنوں کی ہر چیز ڈحرائی بودو باش کے بدوؤں نے نکال پھینکی اور اسے مالِ غنیمت سمجھتے ہوئے اپنے گھروں کے حفاظتی جنگلوں اور باڑ کے لیے اٹھا لے جاتے رہے۔

    اگرچہ گزرتے وقت کی طویل مدت اور موسموں کے تغیرو تبدل نے ان کے حسن کو دھندلا دیا ہے مگر پھر بھی تراشیدہ پتھروں سے بنے جابجا نظر آنے والے یہ شاہکار آج بھی اپنے طرزِ تعمیر میں منفرد ہیں اور اس دور کا عکس پیش کرتے ہیں جب حجاز ریلوے ان کے آگے رواں دواں تھی۔ جابجا ٹوٹی ہوئی ریلوے لائن بارودی دھماکوں اور انسانی ہاتھوں کے ظلم کی تاریخ بتاتی ہے۔ تاہم فولادی پٹریاں اور سلیپر آج بھی اپنے اعلیٰ معیار کا پتا دیتے ہیں۔ ترکی طرز کے قوس در قوس محرابی پل بنیادوں سمیت ٹوٹے پڑے ہیں اور ان کے اوپر لوہے کے سلیپر لٹکتی ہوئی ریلوے لائن کو سہارا دیے ہوئے آج اپنی تاریخی دفاعی جدوجہد کا منظر پیش کرتے ہیں۔

    [​IMG]
    [​IMG]

    وقت کے ساتھ ساتھ خود رو جھاڑیوں کے علاوہ بچھی پڑی پٹری کے ساتھ سارا ماحول ویران ہے۔ کئی جگہ تباہ شدہ حالت میں گاڑیاں پٹری سے الٹی پڑی ہیں۔ ایک جگہ ایک انجن چار پانچ ڈبوں سمیت کھڑا ہے جس کے مسافر اور عملہ شاید اس کے ساتھ ہی برباد ہوئے اور وقت کی تہ در تہ بدلتی ہوئی رنگت اور اڑتی ہوئی ریت کی لہردار تہوں نے انھیں زیرِ خاک کر دیا۔ خالی ڈبے گواہ ہیں کہ ان کا مال و اسباب بدوؤں کے ہاتھوں لٹ گیا۔ حجاز ریلوے کا ایک انجن اپنے انجام پر نوحہ کناں مدینہ جاتے مسافروں کی بے نشان قبروں پر لَوحِ قبر بنا کھڑا ہے۔ پہاڑی راستے ویران ہیں۔ نہ عرب کا صحرائی نشان، نہ رواں دواں اونٹوں کا کارواں، نہ کوئی حدی خواں۔ آسمان کی فضا میں کوئی پرندہ بھی نہیں اڑتا۔ صرف خود رو جھاڑیاں اور سنگلاخ چٹانیں سر اٹھائے کھڑی ہیں۔

    مدینہ منورہ کے ریلوے اسٹیشن سے شمال کو نکلتی مدتوں سے ویران پڑی ریلوے لائن جوں جوں آگے بڑھتی ہے اس کی ویرانیوں اور تنہائیوں میں اضافہ ہوتا چلا جاتا ہے۔ تباہی و بربادی کا پہلا نشان ابوالنعم ریلوے اسٹیشن کے قریب ریلوے لائن پر ڈائنامائیٹ شدہ گاڑیوں کے آثار سے ملتا ہے جو بڑھتے قدموں کو روک لیتے ہیں۔ اس سے آگے چلتے ہوئے ہدیہ ریلوے اسٹیشن کے قریب کھلا ہلکا نیلگوں آسمان اور اس کے نیچے دائیں بائیں آگے پیچھے حدِنگاہ تک بچھا ہوا صدیوں سے مٹیالی مٹی کی تہوں سے آراستہ میدان جہاں گہرے بھورے رنگ کی سیاہی مائل پہاڑیاں پیچھے ہٹتی ہوئی کھڑی ہیں۔ ایک قوی ہیکل فولادی انجن اپنے بائیں پہلو پر الٹا پڑا ہے ۔ اس کے پیچھے ریل کے جلے ہوئے ڈبے کھڑے ہیں۔

    العلا سے 16؍کلومیٹر پہلے حجاز ریلوے لائن ایک کُھلی پُر فضا وادی میں سے گزرتی ہے۔ یہاں آج بھی ریلوے لائن کے ساتھ ساتھ تھوڑے فاصلے پر جلی ہوئی زنگ آلود لائنوں کے ٹیڑھے میڑھے حصے اور ٹکڑے بکھرے پڑے ہیں۔ جب کہ پاس ہی ایک تباہ حال ڈائنامائیٹ شدہ انجن ریت میں دبا سیدھا کھڑا ہے۔ اس کے آثار آج بھی انمٹ ہیں۔ انجن کے پچھلے حصے کی فولادی زنگ آلود سطح کو طاقتور دھماکے نے ادھیڑ کر رکھ دیا ہے اور یہ آج بھی اپنے ساتھ جلی ہوئی زنگ آلود گاڑیوں کے ساتھ اُڑتی ریت کے تھپیڑے کھا رہا ہے۔

    یہاں سے 34؍کلومیٹر آگے کُھلتی وادی کی تنہائیوں میں دلکش پیلے پتھروں سے بنا السرا کا خوبصورت اسٹیشن اپنی تین عمارتوں کا جھرمٹ بنائے حجاز ریلوے لائن کے متوازی ویران پڑا ہے۔ جوں جوں العلا کی طرف بڑھتے ہیں اونچے پہاڑ پیچھے ہٹتے اور وادیاں اور میدان پھیلتے جاتے ہیں۔ عذابِ الٰہی کے آثار ایک ایک کر کے ماحول کو تاریخی تصورات میں گھیر لیتے ہیں۔ کھلی وسیع وادی میں ریلوے لائن سیدھی بچھی چلی جاتی ہے۔ لہراتی ہواؤں نے اس پر لہر در لہر ریت کی تہیں بچھا دی ہیں۔ کبھی یہ پہاڑ پھٹے تھے، زمین پھٹی تھی۔ العلا کے نواح میں اونچے پہاڑ بے قطار پھٹتے چلے گئے۔ مدائن صالح سے 25؍کلومیٹر پہلے سراوت پہاڑوں کی چوٹیوں کے درمیان تنگ ہوتی وادی آگے کی طرف پھیلتی اور کھلتی جاتی ہے۔ یہاں تیرھویں صدی عیسوی سے العلا اپنی نمایاں شناخت رکھتا ہے۔ یہاں مٹی کی اینٹوں سے بنے گھروں کے قدیم شہر کے آثار بیسویں صدی کے آغاز سے ویران پڑے ہیں۔

    العلا کا میٹھے پانی کا چشمہ آج بھی رواں دواں ہے۔ جہاں مقامی عرب بدو آج بھی قہوہ پیتے اور گئے وقتوں کی یاد دہراتے ہیں۔ یہاں کے ماضی کے بارے میں ان کی ہر بات حرفِ آخر ہے۔ العلا کے اردگرد ماحول شاداب ہے۔ پھلوں کا ایک نخلستان اور وادی ام القریٰ اس کا نام ہے۔ العلا حجاز ریلوے اسٹیشن کا ایک اہم اسٹیشن تھا۔ یہاں ریلوے کے تباہ شدہ آثار آج بھی موجود ہیں۔ العلا کے اسٹیشن پر آج بھی ایک گاڑی کھڑی ہے۔ وادی ام القریٰ میں العلا کا نخلستان مدینہ منورہ اور تبوک کے درمیان صدیوں سے رواں دواں کاروانی راہ گزر پر واقع تھا۔ اگرچہ 75ء میں رومنوں نے بحیرہ قلزم کے ساحلی راستے کو اپنایا اور اس طرح 500؍سال تک العلا کی کاروانی رونقیں ماند رہیں۔ تاہم 620ء میں اسلام کی آمد کے اور احکامِ حج کی بجا آوری کے لیے اس نخلستان میں کاروانِ حج کی آمدو رفت سے پھر بہار لوٹ آئی۔

    (جاری ھے)
     
    ھارون رشید نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. کنعان
    آف لائن

    کنعان ممبر

    شمولیت:
    ‏25 جولائی 2009
    پیغامات:
    729
    موصول پسندیدگیاں:
    977
    ملک کا جھنڈا:
    حجاز ریلوے کے ہر اہم اسٹیشن کی طرح العلا ریلوے اسٹیشن بھی گاڑی کے ٹھہرنے کے پلیٹ فارم اور 5؍ اہم عمارات پر مشتمل ٹکٹ آفس، اسٹیشن ماسٹر کا گھر، ۱۵؍ فوجیوں پر مشتمل قلعہ نما دفاعی استحکام، پانی کا بلند ذخیرہ ٹینک اور ہوا چکی مدتوں سے ویران پڑے مدینہ منورہ کو جاتی حجاز ریلوے کی راہ تک رہے ہیں۔ العلا دمشق سے ۹۸۰؍کلومیٹر دور ترک فوج کا انفنٹری ہیڈکوارٹر بھی تھا۔ مدائن صالح کی طرف بڑھتی ریلوے لائن آہستہ آہستہ ایسے پہاڑوں کے درمیان جا نکلتی ہے جنھیں دیکھ کر گزرے عذاب کا تصور واضح ہوجاتا ہے۔ یہ پہاڑ سیدھے اور بلند ہیں۔ العلا سے مدائن کا راستہ انسان کو حیران کر دیتا ہے۔ اونچے پہاڑ قطار در قطار کھڑے ہیں۔ بعض پہاڑوں کے پھیلائو کے بجائے ان کی بلندی نظر کو کھینچ لیتی ہے۔ لگتا ہے جیسے قوی جسامت کے بھاری بھر کم منار نصب ہیں یا قدرتی کاٹ تراش سے آراستہ دفاعی قلعے یا معبد ہیں۔ سنگلاخ چٹانوں کے ایک ویران شہر کا تصور ابھرتا ہے۔ یہ مدائن صالح الحجر ہے۔ یہ قومِ ثمود کا مسکن ہے جنہوں نے پہاڑوں کو کاٹ کاٹ کر گھر بنائے۔ جنھیں اپنی طاقت اور پائیداری پر ناز تھا۔ الحجر کے نام سے مذکورہ پہاڑوں کو کاٹ تراش کر بنا ہوا قومِ ثمود کا یہ سنگی شہر جس کی پائیداری پر اس قریہ کے لوگ نازاں تھے، شدید عذابِ الٰہی سے نشانِ عبرت بن گیا۔ مدائن صالح الحجر بلند پہاڑی سرزمین پر پھیلا شہر موٹی کھردری ریت اور تہ در تہ جڑے اخروٹی رنگ کے ریتلے پتھروں کے میدان مین قدیم نبطی تہذیب کا مسکن اور احوال و آثار کے حوالے سے سرزمینِ انبیا اپنی تما تر تاریخ سمیٹے ہوئے ہے۔

    مدائن صالح میں کھڑے حجاز ریلوے کے بچے کھچے آثار محفوظ ہیں۔ شیڈ میں چھت تلے محفوظ ایک طاقت ور انجن آج بھی اپنی شناخت لیے کھڑا ہے۔

    [​IMG]

    مدینہ منورہ اور تبوک کے درمیان حجاز ریلوے کا یہ سب سے بڑا پڑائو تھا۔ ریلوے اسٹیشن کی خوبصورت عمارت آج بھی موجود ہے۔ تاہم ریلوے ورکشاپ ویران ہے اور تباہ حال بوسیدہ گاڑیاں کھڑی ہیں۔

    [​IMG]

    ریلوے اسٹیشن کے ساتھ پس منظر میں ایک پرانا ترکی دفاعی قلعہ ٹوٹ پھوٹ چکا ہے۔ یہ قلعہ اس مقدس کنوئیں کے اردگرد تعمیر کیا گیا تھا جس سے حضرت صالحؑ کی اونٹنی پانی پیتی تھی۔

    [​IMG]

    مدائن صالح سے آگے حجاز ریلوے لائن بنجر پہاڑوں اور کھلتی سمٹتی وادیوں میں سے گزرتی المرجم اور ابوطاقہ کے اسٹیشنوں کو پیچھے چھوڑتی ہوئی آگے بڑھتی ہے۔ آگے المطلع کا اسٹیشن ایک ویران ریلوے لائن پر پہرہ دے رہا ہے۔ تبوک حجاز کی سرحد پر واقع ایک ایسی سرزمین ہے جسے بڑی بڑی سنگلاخ چٹانوں اور خودرو جھاڑیوں کے سرسبز قطعات اور شکستہ پتھروں کے تودوں نے ڈھانپا ہوا ہے۔ اس میں کھجور کے درخت ہیں اور چشمے ابلتے ہیں اور اسے دونوں جانب سے پہاڑ گھیرے کھڑے ہیں۔ قدیم شہر تبوک کے کنارے اور نسبتاً اونچی زمین پر کھجوروں کے جُھنڈ میں گھرا ۱۶۹۴ء میں ترکوں کا بنایا ہوا قلعہ دفاعِ تبوک کی یاد لیے کھڑا ہے۔ تبوک میں رسولِ کریمؐ نے مدینہ منورہ سے دور دراز اس مقام پر رومیوں کے خلاف مدینے کا دفاع کیا تھا۔

    تبوک سے آگے حجاز ریلوے لائن جبل شرورہ کے دامن کے ساتھ ساتھ حالات عمار اور قلعات المدورہ سے ہوتی تل الشنم اور وادی رتم سےبطن الغول کی خوفناک ویران جناتی بھول بھلیوں میں کھو جاتی ہے اور چکر در چکر سیدھی چڑھائی چڑھتے چڑھتے اوپر کی طرف باہر نکل کر غدیرالحج سے ہوتی ہوئی صدیوں سے آباد قدیم کاروانی ٹھہراؤ معان پہنچ جاتی ہے۔ معان مدینہ منورہ سے آتے ہوئے شمال مغرب میں لگ بھگ ۸۰۰؍ کلومیٹر اور دمشق سے آتے ہوئے جنوب میں ۴۸۹؍ کلومیٹر پر حجاز ریلوے کا اہم پڑاؤ تھا۔

    سولہویں صدی میں عثمانیوں نے معان کے راستے کو بہتر بنایا۔ شہر کے بیچوں بیچ ایک قلعہ تعمیر کرایا۔ آب رسانی کے پرانے نظام کو پھر سے قابلِ استعمال بنایا۔ یہاں گارے مٹی کے بنے ہوئے گھروں کا قدیم عربی تعمیراتی حسن اور بہتے پانی سے سیراب ہوتے پھلوں کے باغ تھے۔ چشموں کے وافر پانی کی نعمت سے فیض یاب اس نخلستان میں لوگ انجیر اور انار اگاتے اور گزرتے کاروانوں کو فروخت کرتے۔ شام سے معان تک کے طویل خاموش اور ویران سفر کے بعد جب حج کے کارواں قلعات معان پہنچتے تو شاداب نخلستان کی اس سرزمین پر ۲؍ روز کے لیے آرام اور قیام کرتے۔

    حجاز ریلوے کی داستان اپنے ساتھ بہت سی کہانیاں لیے ہوئے ہے۔ زوردار حجاز ریلوے، بلادِشام کے قدیم دارالحکومت دمشق سے اپنے آخری پڑائو مدینہ منورہ تک آتی تھی۔ اولی العزم لوگوں کی محنت اور انجینئرنگ کا یہ عظیم الشان شاہکار آج آثارِ پارینہ بن چکا ہے۔ اس کے بچے کھچے آثار مدینہ منورہ سے دمشق تک اپنے عہد کے یادگار نشانات کے طور پر باقی ہیں۔ دولتِ عثمانیہ کی حجاز ریلوے کی خاص نشانی ''سلطان بوگی'' دمشق کے قدیم ریلوے اسٹیشن پر کھڑی ہے اور اس میں عوامی ریستوران کھلا ہے جبکہ اس کے قریب ہی پرانے زنگ آلود ریلوے انجن اور بوگیاں کھڑی ہیں۔

    [​IMG]

    کبھی سوچتا ہوں کہ وہ کیا چیز تھی جس نے ترکی کے مصطفیٰ کمال پاشا کو دینِ اسلام سے متنفر کر دیا اور اس نے پورے ترکی کو ایک لادین ریاست بنا ڈالا۔ کیا وہ شروع سے ایک سیکولر ذہن کا مالک تھا؟ اگر ایسا نہیں تھا تو پھر اس کے لادین بن جانے میں کہیں اُس دور کے امرائے عرب کی بے وفائی کا ہاتھ تو نہیں۔ اگرچہ اس میں نقصان تو مصفطیٰ کمال کا اپنا ہی ہوا، کسی کا کیا بگڑا لیکن تحقیقی ذہن کا اپنا ایک مزاج ہوتا ہے، وہ صرف پیش نظر ہی کو نہیں پس منظر کو بھی دیکھنا ضروری خیال کرتا ہے۔

    تحریر محمود جمال: اردو ڈائجسٹ
    جیمس نکلسن کی ایک کتاب بھی اس بارے میں‌ دلچسپ معلومات فراہم کرتی ہے۔
     
  3. ھارون رشید
    آف لائن

    ھارون رشید برادر سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏5 اکتوبر 2006
    پیغامات:
    131,683
    موصول پسندیدگیاں:
    16,916
    ملک کا جھنڈا:
    بہت عمدہ اشتراک ہے

    بہت بہت شکریہ
     

اس صفحے کو مشتہر کریں