1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

جن پر نشاں لگے تھے ، وہ نقشے نہیں رہے

'ادبی طنز و مزاح' میں موضوعات آغاز کردہ از saeed khan, ‏9 دسمبر 2014۔

  1. saeed khan
    آف لائن

    saeed khan ممبر

    شمولیت:
    ‏9 دسمبر 2014
    پیغامات:
    1
    موصول پسندیدگیاں:
    4
    ملک کا جھنڈا:
    میں نے کہا وہ پیار کے رشتے نہیں رہے
    کہنے لگی کہ تم بھی تو ویسے نہیں رہے
    پوچھاگھروں میں کھڑکیاں کیوں ختم ہوگئیں؟
    بولی کہ اب وہ جھانکنے والے نہیں رہے
    پوچھا کہاں گئے مرے یارانِ خوش خصال
    کہنے لگی کہ وہ بھی تمہارے نہیں رہے
    اگلا سوال تھا کہ مری نیند کیا ہوئی؟
    بولی تمہاری آنکھ میں سپنے نہیں رہے
    پوچھا کروگی کیا جو اگر میں نہیں رہا؟
    بولی یہاں تو تم سے بھی اچھے ، نہیں رہے
    آخر وہ پھٹ پڑی کہ سنو اب مرے سوال
    کیا سچ نہیں کہ تم بھی کسی کے نہیں رہے
    گو آج تک دیا نہیں تم نے مجھے فریب
    پر یہ بھی سچ ہے تم کبھی میرے نہیں رہے
    اب مدتوں کے بعد یہ آئے ہو دیکھنے
    کتنے چراغ ہیں ابھی ، کتنے نہیں رہے!
    میں نے کہا مجھے تری یادیں عزیز تھیں
    ان کے سوا کبھی ، کہیں اُلجھے نہیں رہے
    کیا یہ بہت نہیں کہ تیری یاد کے چراغ
    اتنے جلے،کہ مُجھ میں اندھیرے نہیں رہے
    کہنے لگی تسلّیاں کیوں دے رہے ہو تم
    کیا اب تمہاری جیب میں وعدے نہیں رہے
    بہلا نہ پائیں گے یہ کھلونے حروف کے
    تم جانتے ہو ہم کوئی بچّے نہیں رہے
    بولی کریدتے ہو تم اُس ڈھیر کو ، جہاں
    بس راکھ رہ گئی ہے ، شرارے نہیں رہے
    پوچھا تمہیں کبھی نہیں آیا مرا خیال
    کیا تم کو یاد یار پرانے نہیں رہے
    کہنے لگی میں ڈھونڈتی تیرا پتہ ، مگر
    جن پر نشاں لگے تھے ، وہ نقشے نہیں رہے
    تیرے بغیر شہرِ سخن سنگ ہو گیا
    ہونٹوں پہ اب وہ ریشمی لہجے نہیں رہے
    جن سے اُتر کے آتی دبے پاؤں تیری یاد
    خوابوں میں بھی وہ کاسنی زینے نہیں رہے
    میں نے کہا ، جو ہو سکے ، کرنا ہمیں معاف
    تم جیسا چاہتی تھیں ، ہم ایسے نہیں رہے
    ہم عشق کے گدا ، تیرے در تک تو آ گئے
    لیکن ہمارے ہاتھ میں کاسے نہیں رہے
    اب یہ تری رضا ہے،کہ جو چاہے،سو کرے
    ورنہ کسی کے کیا ، کہ ہم اپنے نہیں رہے
     
    Last edited: ‏9 دسمبر 2014
  2. ملک بلال
    آف لائن

    ملک بلال منتظم اعلیٰ سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏12 مئی 2010
    پیغامات:
    22,071
    موصول پسندیدگیاں:
    7,334
    ملک کا جھنڈا:
    واہ بہت خوب سعید خان جی
    مزے کا کلام ہے۔ مزید شیئرنگ کا انتظار رہے گا۔
     
    پاکستانی55 نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں