1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

آساں نہیں ہے جادۂ حیرت عبورنا

'اردو شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از intelligent086, ‏12 نومبر 2019۔

  1. intelligent086
    آن لائن

    intelligent086 ممبر

    شمولیت:
    ‏28 اپریل 2013
    پیغامات:
    2,159
    موصول پسندیدگیاں:
    236
    ملک کا جھنڈا:
    آساں نہیں ہے جادۂ حیرت عبورنا
    حیراں ہوئے بغیر اِسے مت عبورنا
    میرے خلاف کوئی بھی بکتا رہے مگر
    سیکھا ہے میں نے سرحدِ تُہمت عبورنا
    صد آفریں! خیال تو اچّھا ہے واقعی
    آنکھوں کو بند کرکے محبّت عبورنا
    آوارگانِ عشق! ذرا احتیاط سے
    وحشت کے بعد لذّتِ شہوت عبورنا!!
    تعمیرِ ماہ و سال میں تاخیر کے بغیر
    کس کو روا ہے عرصۂ مُہلت عبورنا؟
    جُزوِ بدن بنے گا تو باہر بھی آئے گا
    یہ زخم تھوڑی دیر سے حضرت! عبورنا
    افتخار فلک​
     

اس صفحے کو مشتہر کریں