1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

مصالحے وہ کھائیں جو پریشانی بھگائیں

'میڈیکل سائنس' میں موضوعات آغاز کردہ از intelligent086, ‏3 فروری 2021۔

  1. intelligent086
    آف لائن

    intelligent086 ممبر

    شمولیت:
    ‏28 اپریل 2013
    پیغامات:
    7,062
    موصول پسندیدگیاں:
    795
    ملک کا جھنڈا:
    مصالحے وہ کھائیں جو پریشانی بھگائیں

    موڈ کا اکثر خراب ہونا اورپریشانی میں مبتلا رہنا در حقیقت ایک عارضی حالت نہیں ہے بلکہ اس کا براہِ راست تعلق انسان کے دماغ سے ہوتا ہے،اور اس کی وجوہات ہارمون کی تبدیلی ہوتی ہے۔یہ ایک قابلِ علاج بیماری ہے جس کے بارے میں جاننے کی بہت کم کوشش کی جاتی ہے اور اس بیماری کا علاج ہمارے باورچی خانے میں موجود ہے،کچھ مصالحوں کے درست انداز میں استعمال سے ہم اس بیماری پر قابو پا کر اپنے اور گھر کے ماحول کو بھی خوشگوار بنا سکتے ہیں۔
    بھورے رنگ کا ترشی مائل ذائقہ لیے ادرک کو عام طور پر سبزی سمجھا جاتا ہے اور یہی سبزی خشک کرنے کے بعد سونٹھ کہلاتی ہے۔اس کی افادیت کے بارے میں سائنس کی تحقیقات جاری ہیں اور ہر روز اس کا کوئی نہ کوئی نیا فائدہ سامنے آ جاتا ہے۔کبھی تو یہ کھانسی سے آرام پہنچاتی ہے تو کبھی سردی سے بچاتی ہے اور ٹھنڈ کے اثرات کو کم بھی کرتی ہے۔ہاضمے کی بہتری کے لیے بھی اس کا استعمال کیا جاتا ہے۔اس کے اندر موجود 100فائدے مند اجزاء اب تک دریافت ہو چکے ہیں ،جن میں سے 50اینٹی آکسیڈینٹ ہوتے ہیں،اور جسم کے میٹا بولزم کے نظام کو بہتر بنانے کا باعث بننے کے ساتھ،ساتھ جسم میں سے زہریلے مادوں کے اخراج میں مدد گار ثابت ہوتے ہیں جو کہ دماغ کے بہت سارے امراض کے علاج کے لیے بہت بہتر ثابت ہوتے ہیں۔اس سے یاداشت میں بہتری آتی ہے اور دماغی دبائو سے بھی نجات ملتی ہے۔اس کے علاوہ موڈ بھی خوشگوار رہتاہے۔
    دار چینی ایک خوشبو دار درخت کی چھال ہے جس کی خوشبو مزاج پر بہت مثبت اثرات مرتب کرتی ہے اور اس کو کئی امراض کے لیے استعمال کیا جاتا ہے،جن میں بد ہضمی اور اپھارے پن کا خاتمہ بھی شامل ہے مگر ایک چٹکی دار چینی چائے یا کافی میں ملا کر پینے سے قدرتی طور ہر ڈپریشن سے نجات ملتی ہے اور موڈ خوشگوار ہو جاتا ہے۔
    ہلدی ایک جراثیم کش دوا ہے۔اس کو خشک و تر دونو ں حالتوں میں استعمال کیا جا سکتا ہے۔یہ جسم سے زہریلے مادوں کے اخراج میں بہت معاون ثابت ہوتی ہے۔ یادداشت کو بہتر بناتی ہے ۔گرم دودھ میں ہلدی اور شہد ملا کر پینے سے دماغ کو سکون ملتا ہے اور ڈپریشن سے افاقہ ہوتا ہے۔
    زعفران کی خاصیت یہ ہے کہ اس کو صرف دیکھنے سے بھی دماغ کو سکون ملتا ہے اور اس کا رنگ دماغ کو یکسو کرتا ہے۔یہ اگرچہ مہنگا ہے مگر باورچی خانے میں اس کی موجودگی اور غذائوں میں ا س کی شمولیت خوشی دینے کا سبب بنتی ہے اور یاسیت کا خاتمہ کرتی ہے۔
    ماہرینِ صحت کے مطابق لونگ کے اندر ایسے کیمیا ئی اجزاء پائے جاتے ہیں جو کہ دماغ کو سکون بخشتے ہیں۔ہارموں کے نظام کو بہتر بناتے ہیں اور دماغی دبائو کا خاتمہ کرنے کے ساتھ ،ساتھ ذہن کو سکون مہیا کرتے ہیں۔چھوٹے موٹے دردوں سے بھی آرام پہنچاتے ہیں۔اس لیے لونگ کا استعمال اپنی خوراک میں لازمی کریں۔


     

اس صفحے کو مشتہر کریں