1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

ہوئی جو ہوش میں کیوں کر بہ نام بادہ ہوئی

'اردو شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از intelligent086, ‏24 نومبر 2019۔

  1. intelligent086
    آن لائن

    intelligent086 ممبر

    شمولیت:
    ‏28 اپریل 2013
    پیغامات:
    2,158
    موصول پسندیدگیاں:
    236
    ملک کا جھنڈا:
    ہوئی جو ہوش میں کیوں کر بہ نام بادہ ہوئی
    خطا کہاں تھی جو کہہ دیں بلا ارادہ ہوئی

    وصالِ حسنِ مجازاں تھا مختصر کتنا
    ستم کہ راہِ فغاں کس قدر کشادہ ہوئی

    میں جس کو وقت بڑی مشکلوں سے پڑھتا تھا
    تری زبان پہ آئی تو حرفِ سادہ ہوئی

    وہ جس کو ننگِ وفا جان کر بھلا گیا
    وہی تو رات مرے حزن کا لبادہ ہوئی

    بساطِ عشق میں جو شہ رخوں کی ہم سر تھی
    یہ کیا ہوا وہی تقدیر پا پیادہ ہوئی
    ٭٭٭
    یاسمین حبیب​
     

اس صفحے کو مشتہر کریں