1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

کیوں میں بار ِدگر جاؤں

'آپ کی شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از نادیا عنبر, ‏12 مئی 2018۔

  1. نادیا عنبر
    آف لائن

    نادیا عنبر ممبر

    شمولیت:
    ‏12 مئی 2018
    پیغامات:
    10
    موصول پسندیدگیاں:
    10
    ملک کا جھنڈا:
    غزل
    کیوں میں بار ِدگر جاؤں
    پھر سے اس کے در جاؤں

    تجھ آنکھوں سے جہاں دیکھوں
    بے رنگی سے ڈر جاؤں

    تُو چاہے تو جی اٹھوں
    تو چاہے تو مر جاؤں

    میں بے انت سمندر ہوں
    کیسے دریا میں اتر جاؤں

    چادر ِشب ہوں میں تیری
    تو اوڑھے تو سنور جاؤں

    خواب نہ دیکھوں تو عنبر
    شاید میں بھی مر جاؤں
    ۔۔۔۔۔۔
    نادیہ عنبر لودھی
    اسلام آباد
     
    پاکستانی55 نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. ناصر إقبال
    آف لائن

    ناصر إقبال ممبر

    شمولیت:
    ‏6 دسمبر 2017
    پیغامات:
    1,670
    موصول پسندیدگیاں:
    344
    ملک کا جھنڈا:
    رم جھم
    میں دور سہی لیکن تیرے اشکوں کی رم جھم سنتا ہوں
    بیٹھا ہوا دیس پرائے میں روتا ہوں اور سر دھنتا ہوں
    جب برکھا دھوم مچاتی ہے اور کوئل بن میں گاتی ہے
    احساس کے موتی چنتا ہوں تخیل کے نغمے بنتا ہوں
     

اس صفحے کو مشتہر کریں