1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

میت کو غسل دینے کا بیان۔

'سیرتِ سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم' میں موضوعات آغاز کردہ از زنیرہ عقیل, ‏23 اکتوبر 2018۔

  1. زنیرہ عقیل
    آف لائن

    زنیرہ عقیل ممبر

    شمولیت:
    ‏27 ستمبر 2017
    پیغامات:
    17,927
    موصول پسندیدگیاں:
    8,599
    ملک کا جھنڈا:
    سنن ترمذي
    حدیث نمبر: 990
    حدثنا احمد بن منيع، حدثنا هشيم، اخبرنا خالد، ومنصور، وهشام، فاما خالد، ‏‏‏‏‏‏وهشام، ‏‏‏‏‏‏فقالا:‏‏‏‏ عن محمد، وحفصة، وقال:‏‏‏‏ منصور:‏‏‏‏ عن محمد، عن ام عطية، قالت:‏‏‏‏ توفيت إحدى بنات النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ " اغسلنها وترا ثلاثا او خمسا او اكثر من ذلك إن رايتن، ‏‏‏‏‏‏واغسلنها بماء وسدر واجعلن في الآخرة كافورا، ‏‏‏‏‏‏او شيئا من كافور، ‏‏‏‏‏‏فإذا فرغتن فآذنني "، ‏‏‏‏‏‏فلما فرغنا آذناه، ‏‏‏‏‏‏فالقى إلينا حقوه، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ " اشعرنها به ". قال هشيم:‏‏‏‏ وفي حديث غير هؤلاء ولا ادري ولعل هشاما منهم، ‏‏‏‏‏‏قالت:‏‏‏‏ وضفرنا شعرها ثلاثة قرون، ‏‏‏‏‏‏قال هشيم:‏‏‏‏ اظنه قال:‏‏‏‏ فالقيناه خلفها، ‏‏‏‏‏‏قال هشيم:‏‏‏‏ فحدثنا خالد من بين القوم، ‏‏‏‏‏‏عن حفصة، ‏‏‏‏‏‏ومحمد، ‏‏‏‏‏‏عن ام عطية، ‏‏‏‏‏‏قالت:‏‏‏‏ وقال لنا رسول الله صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ " وابدان بميامنها ومواضع الوضوء " وفي الباب:‏‏‏‏ عن ام سليم. قال ابو عيسى:‏‏‏‏ حديث ام عطية حديث حسن صحيح، ‏‏‏‏‏‏والعمل على هذا عند اهل العلم، ‏‏‏‏‏‏وقد روي عن إبراهيم النخعي، ‏‏‏‏‏‏انه قال:‏‏‏‏ غسل الميت كالغسل من الجنابة، ‏‏‏‏‏‏وقال مالك بن انس:‏‏‏‏ ليس لغسل الميت عندنا حد مؤقت وليس لذلك صفة معلومة ولكن يطهر، ‏‏‏‏‏‏وقال الشافعي:‏‏‏‏ إنما قال مالك قولا مجملا:‏‏‏‏ يغسل وينقى، ‏‏‏‏‏‏وإذا انقي الميت بماء قراح او ماء غيره، ‏‏‏‏‏‏اجزا ذلك من غسله، ‏‏‏‏‏‏ولكن احب إلي ان يغسل ثلاثا فصاعدا لا يقصر عن ثلاث، ‏‏‏‏‏‏لما قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ " اغسلنها ثلاثا او خمسا، ‏‏‏‏‏‏وإن انقوا في اقل من ثلاث مرات اجزا "، ‏‏‏‏‏‏ولا نرى ان قول النبي صلى الله عليه وسلم إنما هو على معنى الإنقاء ثلاثا او خمسا ولم يؤقت، ‏‏‏‏‏‏وكذلك قال:‏‏‏‏ الفقهاء وهم اعلم بمعاني الحديث، ‏‏‏‏‏‏وقال احمد، ‏‏‏‏‏‏وإسحاق:‏‏‏‏ وتكون الغسلات بماء وسدر، ‏‏‏‏‏‏ويكون في الآخرة شيء من كافور.
    ام عطیہ رضی الله عنہا کہتی ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک بیٹی ۱؎ کا انتقال ہو گیا تو آپ نے فرمایا: ”اسے طاق بار غسل دو، تین بار یا پانچ بار یا اس سے زیادہ بار، اگر ضروری سمجھو اور پانی اور بیر کی پتی سے غسل دو، آخر میں کافور ملا لینا“، یا فرمایا: ”تھوڑا سا کافور ملا لینا اور جب تم غسل سے فارغ ہو جاؤ تو مجھے اطلاع دینا“، چنانچہ جب ہم (نہلا کر) فارغ ہو گئے، تو ہم نے آپ کو اطلاع دی، آپ نے اپنا تہبند ہماری طرف ڈال دیا اور فرمایا: ”اسے اس کے بدن سے لپیٹ دو“۔ ہشیم کہتے ہیں کہ اور دوسرے لوگوں ۲؎ کی روایتوں میں، مجھے نہیں معلوم شاید ہشام بھی انہیں میں سے ہوں، یہ ہے کہ انہوں نے کہا: اور ہم نے ان کے بالوں کو تین چوٹیوں میں گوندھ دیا۔ ہشیم کہتے ہیں: میرا گمان ہے کہ ان کی روایتوں میں یہ بھی ہے کہ پھر ہم نے ان چوٹیوں کو ان کے پیچھے ڈال دیا ۳؎ ہشیم کہتے ہیں: پھر خالد نے ہم سے لوگوں کے سامنے بیان کیا وہ حفصہ اور محمد سے روایت کر رہے تھے اور یہ دونوں ام عطیہ رضی الله عنہا سے کہ وہ کہتی ہیں کہ ہم سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”پہلے ان کے داہنے سے اور وضو کے اعضاء سے شروع کرنا“۔
    امام ترمذی کہتے ہیں: ۱- ام عطیہ رضی الله عنہا کی حدیث حسن صحیح ہے، ۲- اس باب میں ام سلیم رضی الله عنہا سے بھی روایت ہے، ۳- اہل علم کا اسی پر عمل ہے، ۴- ابراہیم نخعی کہتے ہیں کہ میت کا غسل غسل جنابت کی طرح ہے، ۵- مالک بن انس کہتے ہیں: ہمارے نزدیک میت کے غسل کی کوئی متعین حد نہیں اور نہ ہی کوئی متعین کیفیت ہے، بس اسے پاک کر دیا جائے گا، ۶- شافعی کہتے ہیں کہ مالک کا قول کہ اسے غسل دیا جائے اور پاک کیا جائے مجمل ہے، جب میت بیری یا کسی اور چیز کے پانی سے پاک کر دیا جائے تو بس اتنا کافی ہے، البتہ میرے نزدیک مستحب یہ ہے کہ اسے تین یا اس سے زیادہ بار غسل دیا جائے۔ تین بار سے کم غسل نہ دیا جائے، اس لیے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے ”اسے تین بار یا پانچ بار غسل دو“، اور اگر لوگ اسے تین سے کم مرتبہ میں ہی پاک صاف کر دیں تو یہ بھی کافی ہے، ہم یہ نہیں سمجھتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا تین یا پانچ بار کا حکم دینا محض پاک کرنے کے لیے ہے، آپ نے کوئی حد مقرر نہیں کی ہے، ایسے ہی دوسرے فقہاء نے بھی کہا ہے۔ وہ حدیث کے مفہوم کو خوب جاننے والے ہیں، ۷- احمد اور اسحاق بن راہویہ کہتے ہیں: ہر مرتبہ غسل پانی اور بیری کی پتی سے ہو گا، البتہ آخری بار اس میں کافور ملا لیں گے۔


    تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الوضوء ۳۱ (۱۶۷)، والجنائز ۱۰ (۱۲۵۵)، و۱۱ (۱۲۵۶)، صحیح مسلم/الجنائز ۱۲ (۹۳۹)، سنن ابی داود/ الجنائز ۳۳ (۳۱۴۴، ۳۱۴۵)، سنن النسائی/الجنائز ۳۱ (۱۸۸۵)، و۳۲ (۱۸۸۶)، (تحفة الأشراف: ۱۸۱۰۲، و۱۸۱۰۹، و۱۸۱۱۱، و۱۸۱۲۴، ۱۸۱۳۵) (صحیح) وأخرجہ کل من: صحیح البخاری/الجنائز ۸ (۱۲۵۳)، و۹ (۱۲۵۴)، و۱۲ (۱۲۵۷)، و۱۳ (۱۲۵۸)، و۱۴ (۱۲۶۰)، و۱۵ (۱۲۶۱)، و۱۶ (۱۲۶۲)، و۱۷ (۱۲۶۳)، صحیح مسلم/الجنائز (المصدرالمذکور)، سنن ابی داود/ الجنائز ۳۳ (۳۱۴۲، ۳۱۴۶، ۳۱۴۷)، سنن النسائی/الجنائز ۳۳ (۳۱۴۲، ۳۱۴۳، ۳۱۴۶، ۳۱۴۷)، سنن النسائی/الجنائز ۲۸ (۱۸۸۲)، و۳۰ (۱۸۸۴)، و۳۳ (۱۸۸۷)، و۳۴ (۱۸۸۸، ۱۸۸۹، ۱۸۹۰)، و۳۵ (۱۸۹۱، ۱۸۹۲)، و۳۶ (۱۸۹۴، ۱۸۹۵)، سنن ابن ماجہ/الجنائز ۸ (۱۴۵۸)، موطا امام مالک/الجنائز ۱ (۲)، مسند احمد (۶/۴۰۷)، من غیر ہذا الوجہ۔

    وضاحت: ۱؎: جمہور کے قول کے مطابق یہ ابوالعاص بن ربیع کی بیوی زینب رضی الله عنہا تھیں، ایک قول یہ ہے کہ عثمان رضی الله عنہ کی اہلیہ ام کلثوم رضی الله عنہا تھیں، صحیح پہلا قول ہی ہے۔ ۲؎: یعنی خالد، منصور اور ہشام کے علاوہ دوسرے لوگوں کی روایتوں میں۔ ۳؎: اس سے معلوم ہوا کہ عورت کے بالوں کی تین چوٹیاں کر کے انہیں پیچھے ڈال دینا چاہیئے انہیں دو حصوں میں تقسیم کر کے سینے پر ڈالنے کا کوئی ثبوت نہیں۔

    قال الشيخ الألباني: صحيح، ابن ماجة (1458)
     

اس صفحے کو مشتہر کریں