1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

محبت رسول صلی اللہ علیہ و سلم

'سیرتِ سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم' میں موضوعات آغاز کردہ از احمداسد, ‏5 جون 2012۔

  1. احمداسد
    آف لائن

    احمداسد ممبر

    شمولیت:
    ‏22 جنوری 2011
    پیغامات:
    110
    موصول پسندیدگیاں:
    4
    ملک کا جھنڈا:
    تحریر: محترم جناب سعدی حفظہ اللہ تعالیٰ

    ’’ قسم ہے اس ذات کی جس کے قبضے میں میری جان ہے تم میں سے کوئی شخص مومن نہیں ہو سکتا جب تک میں اس کے نزدیک اس کے ماں باپ، اولاد اور تمام لوگوں سے زیادہ محبوب نہ ہو جاؤں ‘‘ ﴿صحیح بخاری ﴾
    جی ہاں !
    ایمان کی لازمی شرط ہے اور یہ شرط خود نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم نے بیان فرمائی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت جب تک ہر دنیوی کی محبت پر غالب نہ آ جائے اس وقت تک دعوی ایمان کامل کا معتبر نہیں ہوتا۔
    ’’ عبد اللہ بن ہشام رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا ہاتھ پکڑے تشریف لا رہے تھے، حضرت عمر(رض) نے عرض کیا: یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم! مجھے آپ میری جان کے علاوہ ہر چیز سے زیادہ محبوب ہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا : نہیں اے عمر! قسم ہے اس ذات کی جس کے قبضے میں میری جان ہے جب تک میں تمہیں تمہاری جان سے بھی زیادہ محبوب نہ ہو جاؤں ﴿محبت کامل نہیں ہو سکتی ﴾۔ حضرت عمر (رض) نے عرض کیا: یا رسول اللہ ! اب تو آپ مجھے میری جان سے بھی زیادہ محبوب ہیں۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا: ہاں اب اے عمر ‘‘ ﴿ صحیح بخاری ﴾
    الآن یا عمر.
    ہاں اے عمر اب. یعنی بات اب پوری ہوئی۔ محبت اب کامل ہوئی، عشق اب سچا ہوا اور ایمان اب پورا ہوا۔ جب یہ بات دل میں آ گئی کہ کوئی رشتہ، کوئی تعلق ، کوئی رغبت، کوئی چاہت آقا مدنی ö کی محبت سے بڑھ کر نہیں رہی۔
    بات اختیاری نہیں بلکہ لازمی ہے۔ یہ مقام حاصل نہ ہونے تک خطرہ ہی خطرہ ہے۔ قرآن مجید دیکھۓے۔ سورۃ توبہ میں کیا فرمایا گیا ہے:
    ’’ کہہ دیجیے اگر تمہارے باپ، تمہاری اولادیں، تمہارے بھائی، تمہاری بیویاں، تمہارے خاندان ، تمہارے جمع شدہ اموال اور تمہاری تجارت جس کے گھاٹے کا تمہیں خوف ہے اور تمہارے گھر جن میں رہنا تم پسند کرتے ہو، تمہارے نزدیک اللہ، اللہ کے رسول ﴿صلی اللہ علیہ و سلم﴾اور اللہ کے راستے میں جہاد کرنے سے زیادہ محبوب ہو جائیں تو انتظار کرو یہاں تک کہ اللہ تعالیٰ اپنا عذاب لے آئے، بے شک اللہ تعالیٰ نافرمانوں کو ہدایت نہیں دیتا ﴿ التوبۃ ﴾
    جی ہاں! جب تک اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت اور ان کے نام پر جان دینے کی رغبت اوپر مذکور تمام رشتوں اور تعلقات سے زیادہ نہ ہو جائے.
    انسان کا اللہ تعالیٰ کا محبوب بن جانا اور رضائے الہی کا مستحق تو کیا بننا، عذاب کے خطرے سے دوچار رہتا ہے۔ اور قاضی عیاض رحمۃ اللہ علیہ نے ’’ الشفائ ‘‘ میں یہاں تک لکھ دیا ہے کہ انہی لوگوں کو فاسق کہا گیا ہے۔ ’’ فاسق ‘‘ نافرمان کو کہتے ہیں جو اللہ تعالیٰ کے حکم کے خلاف چلے اور اوامر کو توڑے. اللہ اور اس کے رسول کی محبت کو ہر تعلق پر غالب رکھنا اللہ تعالیٰ کا حکم ہے. جو ایسا نہ کرے گا اور اس مقام کو پانے کی محنت نہ کرے گا وہ نا فرمان ہوا اور فسق میں پڑا.
    ٭.٭.٭
    پچھلے سبق میں ایک روایت لکھی تھی کہ حلاوت ایمان نصیب ہوتی ہے اس شخص کو جس کے دل میں اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت ہر تعلق پر غالب آ جائے۔ کیا حلاوت ایمان پانے کا اس کے سوا بھی کوئی راستہ ہے؟.
    نہیں ہے.
    دوسری روایت میں نفی کے ساتھ الفاظ ہیں:
    ’’ کوئی شخص حلاوت ایمان کو نہیں پا سکتا جب تک کہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت ہر دوسری محبت پر غالب نہ آ جائے‘‘ ﴿ الحدیث. شُعب الایمان ﴾
    دوسری اہم بات یہ کہ جب یہ بات اچھی طرح جان لی گئی کہ اللہ تعالیٰ کی محبت ایمان کی لازمی شرط ہے.
    اورا س کے بغیر دعوئے ایمان سچا نہیں ہوتا.
    یہ بات شک سے بالاتر اور شبہے سے پاک ہے.
    اور اللہ تعالیٰ کی محبت دل میں ہونے کی لازمی علامت نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت اور اتباع کا نصیب ہونا ہے.
    قرآن مجید نے یہود کے اس دعوے کو کہ وہ اللہ تعالیٰ کے محبوب و مقرب ہیں اسی دلیل کی بنیاد پر رد کر دیا کہ اگر اللہ تعالیٰ کی محبت ان کے دلوں میں ہوتی تو ان کی زندگیاں اتباع رسول صلی اللہ علیہ و سلم سے اور ان کے قلوب محبت رسول صلی اللہ علیہ و سلم سے لبریز ہوتے.
    ’’ اے نبی ! ان سے فرما دیجیے: اگر اللہ تعالیٰ سے محبت رکھتے ہو تو میرا اتباع کرو اللہ تعالیٰ تم سے محبت کرے گا. ﴿ آل عمران ﴾
    اللہ تعالیٰ کے ساتھ محبت کی سچائی کا ثبوت. حبّ رسول صلی اللہ علیہ و سلم
    اللہ تعالیٰ کی محبت اور قرب پانے کا ذریعہ بھی . حبّ رسول صلی اللہ علیہ و سلم
    گویا دنیا و آخرت کی ہر خیر، ہر بھلائی اور ہر راحت موقوف ہے نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت پر .
    ٭.٭.٭
    حبّ رسول صلی اللہ علیہ و سلم سے کیا کیا ملتا ہے؟
    کون کون سی بڑی نعمتیں اور سوغاتیں اس عمل سے متعلق ہیں؟.
    آئیے وہ روایت پڑھتے ہیں جسے سن کر صحابہ کرام سب سے زیادہ خوش ہوئے تھے:
    ’’ حضرت انس (رض) سے روایت ہے کہ ایک شخص نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا: یا رسول اللہ قیامت کب آئے گی؟
    نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم جواب دئیے بغیر نماز کے لئے کھڑے ہو گئے۔ نماز سے فراغت کے بعد فرمایا: قیامت کے بارے میں پوچھنے والا شخص کہاں ہے؟ اس شخص نے عرض کیا: میں ہوں۔
    آپ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا : تم نے قیامت کے لئے کیا تیاری کر رکھی ہے ؟
    اس شخص نے عرض کیا ! یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم میں نے اس کے لئے نہ زیادہ نمازیں تیار کر رکھی ہیں اور نہ روزے سوائے اس کے کہ میں اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم سے محبت رکھتا ہوں۔
    نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا: انسان جس سے محبت رکھے گا آخرت میں اسی کے ساتھ ہو گا۔
    حضرت انس(رض) فرماتے ہیں کہ مسلمانوں کو اسلام لانے کے بعد سب سے زیادہ خوشی اسی دن یہ بات سن کر ہوئی ﴿ ترمذی ﴾
    اسی سے ملتی جلتی ایک روایت ہے کہ ایک بلند آواز اعرابی نے نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کو آواز دے کر کہا:
    ایک شخص ایک قوم سے محبت رکھتا ہے مگر ان جیسا عمل نہیں کر سکتا ﴿ اس کا حشر اس قوم کے ساتھ ہو گا یا نہیں ؟﴾نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم نے جواب میں وہی بات ارشاد فرمائی۔ ﴿ترمذی ﴾
    صحابہ کرام سب کے سب نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کی محبت میں فنا تھے.
    انہیں دنیا میں نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کی رفاقت ملی جو انہیں ہر چیز سے محبوب تھی.
    مگر ان کے دلوں میں ایک خوف اور دھڑکا تھا.
    تڑپتے تھے مگر اظہار نہ کر سکتے تھے.
    انہیں علم تھا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم انبیاء کے امام اور سردار ہیں.
    آخرت میں انبیائ کے مراتب سے بھی بلند ہونگے تو امتی ان کی صحبت کا لطف اٹھا پائیں گے یا نہیں ؟.
    ان کی دید سے فیض یاب ہو سکیں گے تو کیونکر؟.
    عشق تڑپاتا تھا مگر بات زبانوں پر نہ آتی تھی.
    اس سوال اور جواب نے انہیں وہ خوشخبری دے دی جس کی انہیں چاہت تھی.
    اصول بیان ہو گیا کہ ہر انسان اپنے محبوبوں کے ساتھ ہو گا. انہیں مل سکے گا. دیکھ سکے گا. اور صحبت سے فیضیاب ہو سکے گا.
    اور یہ سوغات تو ان کے پاس موجود تھی. وہ صرف محب نہیں محبت کی مثال تھے.
    عاشق نہیں عشق کا نشان تھے.
    تب وہ خوش ہوگئے.
    محبت رسول صلی اللہ علیہ و سلم خوشخبری ہے عظیم خوشخبری. اللہ کرے ہم سب کو نصیب ہو جائے۔آمین
    ٭.٭.٭
    حبّ اللہ کے حاصل ہونے کی کچھ علامات لکھی گئیں تھیں.
    حبّ رسول صلی اللہ علیہ و سلم کی بھی کچھ علامات ہیں. چند ایک عرض کی جاتی ہیں.
    ﴿۱﴾ اتباع. اور اس کی تشریح گزشتہ سبق میں ’’معارف الحدیث ‘‘والی عبارت میں موجود ہے.
    ﴿۲﴾ حبّ فی الرسول صلی اللہ علیہ و سلم. نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کے محبوب افراد، محبوب اعمال اور محبوب اشیائ سے محبت رکھنا. کہ اصول قطعی ہے محبوب کے محبوب کا محبوب ہو نا.
    اہل بیت اطہار سے محبت. صحابہ کرام سے محبت. مدینہ طیبہ سے محبت وغیرہ وغیرہ۔
    ’’ اللہ تعالیٰ سے محبت کرو کہ وہ تمہیں صبح وشام نعمتیں دیتا ہے اور مجھ سے محبت کرو اللہ تعالیٰ کی محبت کی وجہ سے اور میرے اہل بیت سے محبت کرو میری وجہ سے ‘‘ ﴿ترمذی ﴾
    اہل بیت کا گستاخ. صحابہ کرام کا دشمن یا مدینہ طیبہ سے لوگوں کو کاٹنے والا.
    کبھی محب نبی نہیں ہو سکتا. یہ بات دلوں پر لکھ لی جائے.
    ﴿۳﴾ غیرت. اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم کی حرمت و ناموس کے سوال پر بھڑک اٹھنا. خون کا جوش مارنا اور رونگٹے کھڑے ہو جانا.
    اس نام پر جان دینا اور جان لینا آسان ہو جانا.
    محبت کا لازمی تقاضا ہے. جو اس سے محروم ہے یا اخلاق کے نام پر محروم کرتا ہے وہ محبت سے عاری ہے.
    وہ سنے کہ صدیق اکبر رضی اللہ عنہ اپنے بیٹے عبد الرحمن کو کیا فرما رہے ہیں:
    ’’ بیٹا تم ایک بار بھی میرے قابو میں آتے تو زندہ نہ چھوڑتا کیونکہ تم اس وقت اللہ کے رسول سے لڑ رہے تھے‘‘.
    وہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کے اخلاق میں رنگے ہوئے صدیق اکبر کے اس تھپٹر کی گونج مدینہ کی گلیوں سے سنے جو گستاخ رسول ابن صوریا یہودی کے چہرے پر اپنا اثر چھوڑ گیا تھا.
    وہ امین الامۃ ابو عبیدہ بن الجراح رضی اللہ عنہ کی تلوار اپنے والد کے سر پر برستی اور دو ٹکڑے کرتی دیکھے.
    یہ ابوعبیدہ وہ ہیں جو زمانہ جاہلیت میں بھی’’ مشہور بحب الوالدین ‘‘. والدین سے محبت کرنے والے مشہور تھے.
    کافر باپ گرفتار کر کے مدینہ کی طرف لے جایا جا رہا تھا. بیٹے کے سامنے آقا مدنی صلی اللہ علیہ و سلم کی شان میں کچھ کہہ دیا اور ٹکڑے ہوا.
    ویسے بھی دنیا میں ہی کسی سے پوچھ لیں.
    غیرت سے خالی محبت کو کوئی بھی محبت نہیں کہتا.
    اُسے کیا کہتے ہیں؟. یہ بات چھوڑ دیجیے.
    ﴿۴﴾ کثرت درود شریف: جس کے دل میں محبت ہو گی یہ کیسے ممکن ہے کہ وہ نام نہ لیا کرے.
    اور درود شریف کیسی نعمت ہے؟ آج عرض کرنے کا موقع نہیں.
    اور ہاں عشق اور سچی محبت کی ایک اور علامت. وہ حالت بھی تو ہے جو استوانہ حنّانہ کو پیش آئی.
    بے جان کھجور کا تنا. کسی کی محبت میں دھاڑیں مار کر روتا تھا.
    قصوٰی اونٹنی کو بھی پیش آئی . بھوکی پیاسی مر گئی.
    حجۃ الوداع کے دن ذبح کے لئے لائے جانے والے اونٹ بھی تو اسی سے گزرے.
    کہ آگے بڑھ کر اپنی گردنیں پیش کرتے تھے.
    ایک خلش. ایک جلن . ایک کڑھن . جس کی تشریح کوئی نہیں کرسکتا.
    کوئی میرے دل سے پوچھے تیرے تیر نم کش کو
    یہ خلش کہاں سے ہوتی جو جگر کے پار ہوتا
    اور وہ خالد بن زید بن عبد ربہ رضی اللہ عنہ.
    باغ میں کام کر رہے تھے کہ کسی نے آ کر خبر دی. آقا مدنی صلی اللہ علیہ و سلم نے انتقال فرمایا.
    آنکھیں بند کر کے دست بدعا ہوئے:
    ’’یا اللہ! جن آنکھوں نے تیرے محبوب کا رخ انور دیکھا ہے وہ اب آپ صلی اللہ علیہ و سلم کے جانے کے بعد کچھ نہ دیکھیں‘‘ .
    دعا قبول ہوئی اور نابینا ہو گئے .
    چھین لے مجھ سے نظر اے جلوہ خوش روئے دوست
    میں کوئی محفل نہ دیکھوں اب تیری محفل کے بعد
    جی ہاں ! یہی تو وہ خلش ہے جو حضرت نانوتوی(رح) سے لے کر فقیر عطاء اللہ شہید تک عاشقوں کو یہ کہلواتی ہے کہ ان کی خاک کے ذرے آقا مدنی صلی اللہ علیہ و سلم کے راستے پر نثار ہو جائیں.
    اللھم ارزقنا حبک وحب رسولک صلی اللہ علیہ وسلم آمین
    ٭.٭.٭
     
  2. نعیم
    آف لائن

    نعیم مشیر

    شمولیت:
    ‏30 اگست 2006
    پیغامات:
    58,098
    موصول پسندیدگیاں:
    11,144
    ملک کا جھنڈا:
    جواب: محبت رسول صلی اللہ علیہ و سلم

    سبحان اللہ العظیم۔ بہت ہی ایمان افروز تحریر ہے۔ جزاک اللہ خیر۔

    اللھم ارزقنا حبک وحب رسولک صلی اللہ علیہ وسلم آمین
     
  3. ملک بلال
    آف لائن

    ملک بلال منتظم اعلیٰ سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏12 مئی 2010
    پیغامات:
    22,344
    موصول پسندیدگیاں:
    7,488
    ملک کا جھنڈا:
    جواب: محبت رسول صلی اللہ علیہ و سلم

    محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت دینِ حق کی شرطِ اول ہے۔
    جزاک اللہ احمد اسد جی!
    خوش رہیں۔
     
  4. تانیہ
    آف لائن

    تانیہ ناظم سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏30 مارچ 2011
    پیغامات:
    6,324
    موصول پسندیدگیاں:
    2,338
    ملک کا جھنڈا:
    جواب: محبت رسول صلی اللہ علیہ و سلم

    جس دل میں محمد (صلى الله عليه وسلم)کی محبت نہیں ہوتی
    اس پر کبھی الله کی رحمت نہیں ہوتی !

    ہمارا یہ عقیدہ ہے کہ ذکر خدا میں
    یہ نام(صلى الله عليه وسلم) نہ ہو شامل تو عبادت نہیں ہوتی !


    یارسول اللہ (صلى الله عليه وسلم) تیرے چاہنے والوں کی خیر

    اللّھُمَّ صَلِّ عَلٰی سَيِّدِنَا وَ مَولَانَا مُحَمَّدٍ وَّ عَلٰی اٰلِہ وَ صَحْبِہ وَ بَارِکْ وَسَلِّمْ

    خدا کا ذکر کرے ، ذکرِ مصطفی (صلى الله عليه وسلم) نہ کرے
    ہمارے منہ میں ہو ایسی زباں خدا نہ کرے

    سبحان اللہ ، جزاک اللہ احمد اسد جی
     
  5. غوری
    آف لائن

    غوری ممبر

    شمولیت:
    ‏18 جنوری 2012
    پیغامات:
    38,242
    موصول پسندیدگیاں:
    11,521
    ملک کا جھنڈا:
    جواب: محبت رسول صلی اللہ علیہ و سلم

    آپ :saw: سے محبت اسلام کا حصہ ہے۔


    طالب علمی کے دور میں عربی سیکھنے کی سوجھی تو ایک عالم دین و امام مسجد و خطیب کی شاگردی اختیار کی۔ محترم استاد صاحب نے فرمایا کہ عربی سیکھنے کیلئے بہتر ہے کہ پہلے فارسی سیکھ لو۔

    میں نے مروجہ اصولوں کے تحت استاد صاحب کی خدمت میں مٹھائی اور کچھ کپڑا پیش کیا اور باقاعدگی سے شاگردی اختیار کی۔
    میں نے فارسی سیکھنے کے ساتھ ساتھ قرات بھی سیکھنا چاہی تو اجازت مل گئی۔

    میرے استاد محترم نے تعلیم سے پہلےایک درس دیا جو میری زندگی کا لائحہ عمل بن گیا۔

    آپ نے فرمایا کہ کوئی بھی علم حاصل کرنے سے پہلے استاد، مدرسے اور کتاب کے مصنف سے روحانی تعلق قائم کرو ورنہ کچھ نہیں سیکھ سکتے۔۔۔

    آج جہاں جہاں میں نے قدم رکھا، وہاں کے بانی، وہاں کے عملہ اور وہاں کے ساتھیوں سے روحانی تعلق قائم رکھ کے فیض پایا۔

    اسی طرح جب تک حضرت محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم سے روحانی تعلق قائم نہیں ہوپاتا ہم دیں کے گوں نا گوں ثمرات سے فیض یاب نہیں ہوسکتے۔



    نبی کریم ﷺکے ساتھ محبت کرنا ایمان کا حصہ ہے۔کوئی شخص اس وقت تک کامل مومن نہیں ہو سکتا جب تک نبی کریم ﷺ کے ساتھ اپنی جان ،اہل وعیال ،والدین اور تمام دنیا سے بڑھ کر نہ محبت کرے۔آپ ﷺ کے ساتھ محبت کرنا اور آپ کی تعظیم کرناعین عبادت ہے ،کیونکہ خود اللہ تعالیٰ نے اس کا حکم دیا ہے۔جبکہ عبادت دل ،زبان اور تمام اعضاء سے ادا کی جاتی ہے۔اعمال میں اخلاص ((لاَاِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ))کا تقاضا ہے، جبکہ نبی کریم ﷺ کی اتباع ((مُحَمَّدُُُُُُ رَّسُوْلُ اللّٰہِ)) کا تقاضا ہے۔کیونکہ’’ محمد رسول اللہ‘‘کا معنیٰ ہی یہی ہے کہ آپ ایک سچے نبی ہیں۔لہذا آپ ؐ کے اوامر کی اطاعت،نواہی سے بچنا اور لائی ہوئی شریعت کی تصدیق ہم پر فرض ہے۔اور یہی کمال محبت ہے۔
    اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے:
    ((قُلْ اِنْ کَانَ اٰبَآ ؤُکُمْ وَأَبْنَآؤُکُمْ وَاِخْوَانُکُمْ وَأَزْوَاجُکُمْ وَعَشِیْرَتُکُمْ وَأَمْوَالُنِ اقْتَرَفْتُمُوْھَا وَتِجَارَۃُ ُ تَخْشَوْنَ کَسَادَھَا وَمَسَاکِنُ تَرْضَوْنَھَآ أَحَبَّ اِلَیْکُمْ مِّنَ اللّٰہِ وَرَسُوْلِہٖ وَجِھَادٍ فِی سَبِیْلِہٖ فَتَرَبَّصُوْا حَتّٰی یَأْتِیَ اللّٰہُ بِأَمْرِہٖ وَاللّٰہُ لَا یَھْدِی الْقَوْمَ الْفٰسِقِیْنَ))[التوبۃ:۲۴]

    "آپ کہہ دیجئیے کہ اگر تمہارے باپ اور تمہارے لڑکے ا ور تمہارے بھائی اور تمہاری بیویاں اور تمہارے کنبے قبیلے اور تمہارے کمائے ہوئے مال اور وہ تجارت جس کی کمی سے تم ڈرتے ہو اور وہ حویلیاں جنہیں تم پسند کرتے ہو،اگر یہ تمہیں اللہ سے اور اس کے رسول سے اور اس کی راہ کے جہاد سے بھی زیادہ عزیزہیں ،تو اللہ کے حکم سے عذاب کے آنے کا انتظار کرو۔اللہ تعالیٰ فاسقوں کو ہدایت نہیں کرتا۔‘‘


    کی محمد سے وفا تو نے تو ہم تیرے ہیں


    یہ جہاں چیز ہے کیا لوح و قلم تیرے ہیں


     

اس صفحے کو مشتہر کریں