1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

صحيح مسلم حدیث نمبر: 411

'سیرتِ سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم' میں موضوعات آغاز کردہ از زنیرہ عقیل, ‏1 فروری 2019۔

  1. زنیرہ عقیل
    آف لائن

    زنیرہ عقیل ممبر

    شمولیت:
    ‏27 ستمبر 2017
    پیغامات:
    18,257
    موصول پسندیدگیاں:
    8,709
    ملک کا جھنڈا:
    صحيح مسلم
    كِتَاب الْإِيمَانِ

    ایمان کے احکام و مسائل

    74- باب الإِسْرَاءِ بِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِلَى السَّمَوَاتِ وَفَرْضِ الصَّلَوَاتِ:
    باب: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا آسمانوں پر تشریف لے جانا (یعنی معراج) اور نمازوں کا فرض ہونا۔

    حدیث نمبر: 411

    حدثنا شيبان بن فروخ ، حدثنا حماد بن سلمة ، حدثنا ثابت البناني ، عن انس بن مالك ، ان رسول الله صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ " اتيت بالبراق وهو دابة ابيض، ‏‏‏‏‏‏طويل فوق الحمار، ‏‏‏‏‏‏ودون البغل يضع حافره عند منتهى طرفه، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فركبته حتى اتيت بيت المقدس، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فربطته بالحلقة التي يربط به الانبياء، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ ثم دخلت المسجد فصليت فيه ركعتين، ‏‏‏‏‏‏ثم خرجت، ‏‏‏‏‏‏فجاءني جبريل عليه السلام بإناء من خمر، ‏‏‏‏‏‏وإناء من لبن، ‏‏‏‏‏‏فاخترت اللبن، ‏‏‏‏‏‏فقال جبريل:‏‏‏‏ اخترت الفطرة، ‏‏‏‏‏‏ثم عرج بنا إلى السماء، ‏‏‏‏‏‏فاستفتح جبريل، ‏‏‏‏‏‏فقيل:‏‏‏‏ من انت؟ قال:‏‏‏‏ جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ ومن معك؟ قال:‏‏‏‏ محمد، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ وقد بعث إليه؟ قال:‏‏‏‏ قد بعث إليه ففتح لنا، ‏‏‏‏‏‏فإذا انا بآدم فرحب بي، ‏‏‏‏‏‏ودعا لي بخير، ‏‏‏‏‏‏ثم عرج بنا إلى السماء الثانية، ‏‏‏‏‏‏فاستفتح جبريل عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏فقيل:‏‏‏‏ من انت؟ قال:‏‏‏‏ جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ ومن معك؟ قال:‏‏‏‏ محمد، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ وقد بعث إليه؟ قال:‏‏‏‏ قد بعث إليه ففتح لنا، ‏‏‏‏‏‏فإذا انا بابني الخالة عيسى ابن مريم ويحيى بن زكرياء صلوات الله عليهما، ‏‏‏‏‏‏فرحبا ودعوا لي بخير، ‏‏‏‏‏‏ثم عرج بي إلى السماء الثالثة، ‏‏‏‏‏‏فاستفتح جبريل، ‏‏‏‏‏‏فقيل:‏‏‏‏ من انت؟ قال:‏‏‏‏ جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ ومن معك؟ قال:‏‏‏‏ محمد صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ وقد بعث إليه؟ قال:‏‏‏‏ قد بعث إليه ففتح لنا، ‏‏‏‏‏‏فإذا انا بيوسف عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏إذا هو قد اعطي شطر الحسن، ‏‏‏‏‏‏فرحب ودعا لي بخير، ‏‏‏‏‏‏ثم عرج بنا إلى السماء الرابعة، ‏‏‏‏‏‏فاستفتح جبريل عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ من هذا؟ قال:‏‏‏‏ جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ ومن معك؟ قال:‏‏‏‏ محمد، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ وقد بعث إليه؟ قال:‏‏‏‏ قد بعث إليه ففتح لنا، ‏‏‏‏‏‏فإذا انا بإدريس، ‏‏‏‏‏‏فرحب ودعا لي بخير، ‏‏‏‏‏‏قال الله عز وجل ورفعناه مكانا عليا سورة مريم آية 57، ‏‏‏‏‏‏ثم عرج بنا إلى السماء الخامسة، ‏‏‏‏‏‏فاستفتح جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ من هذا؟ قال:‏‏‏‏ جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ ومن معك؟ قال:‏‏‏‏ محمد، ‏‏‏‏‏‏قيل وقد بعث إليه؟ قال:‏‏‏‏ قد بعث إليه ففتح لنا، ‏‏‏‏‏‏فإذا انا بهارون عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏فرحب ودعا لي بخير، ‏‏‏‏‏‏ثم عرج بنا إلى السماء السادسة، ‏‏‏‏‏‏فاستفتح جبريل عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ من هذا؟ قال:‏‏‏‏ جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ ومن معك؟ قال:‏‏‏‏ محمد، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ وقد بعث إليه؟ قال:‏‏‏‏ قد بعث إليه ففتح لنا، ‏‏‏‏‏‏فإذا انا بموسى عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏فرحب ودعا لي بخير، ‏‏‏‏‏‏ثم عرج إلى السماء السابعة، ‏‏‏‏‏‏فاستفتح جبريل، ‏‏‏‏‏‏فقيل:‏‏‏‏ من هذا؟ قال:‏‏‏‏ جبريل، ‏‏‏‏‏‏قيل ومن معك؟ قال:‏‏‏‏ محمد صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ وقد بعث إليه؟ قال:‏‏‏‏ قد بعث إليه ففتح لنا، ‏‏‏‏‏‏فإذا انا بإبراهيم عليه السلام مسندا ظهره إلى البيت المعمور، ‏‏‏‏‏‏وإذا هو يدخله كل يوم سبعون الف ملك، ‏‏‏‏‏‏لا يعودون إليه، ‏‏‏‏‏‏ثم ذهب بي إلى السدرة المنتهى، ‏‏‏‏‏‏وإذا ورقها كآذان الفيلة، ‏‏‏‏‏‏وإذا ثمرها كالقلال، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فلما غشيها من امر الله ما غشي تغيرت، ‏‏‏‏‏‏فما احد من خلق الله يستطيع ان ينعتها من حسنها، ‏‏‏‏‏‏فاوحى الله إلي ما اوحى، ‏‏‏‏‏‏ففرض علي خمسين صلاة في كل يوم وليلة، ‏‏‏‏‏‏فنزلت إلى موسى عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ ما فرض ربك على امتك؟ قلت:‏‏‏‏ خمسين صلاة، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ ارجع إلى ربك فاساله التخفيف، ‏‏‏‏‏‏فإن امتك لا يطيقون ذلك، ‏‏‏‏‏‏فإني قد بلوت بني إسرائيل وخبرتهم، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فرجعت إلى ربي، ‏‏‏‏‏‏فقلت:‏‏‏‏ يا رب، ‏‏‏‏‏‏خفف على امتي، ‏‏‏‏‏‏فحط عني خمسا، ‏‏‏‏‏‏فرجعت إلى موسى، ‏‏‏‏‏‏فقلت:‏‏‏‏ حط عني خمسا، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ إن امتك لا يطيقون ذلك، ‏‏‏‏‏‏فارجع إلى ربك فاساله التخفيف، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فلم ازل ارجع بين ربي تبارك وتعالى، ‏‏‏‏‏‏وبين موسى عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏حتى قال:‏‏‏‏ يا محمد، ‏‏‏‏‏‏إنهن خمس صلوات كل يوم وليلة، ‏‏‏‏‏‏لكل صلاة عشر، ‏‏‏‏‏‏فذلك خمسون صلاة ومن هم بحسنة، ‏‏‏‏‏‏فلم يعملها، ‏‏‏‏‏‏كتبت له حسنة، ‏‏‏‏‏‏فإن عملها، ‏‏‏‏‏‏كتبت له عشرا، ‏‏‏‏‏‏ومن هم بسيئة فلم يعملها، ‏‏‏‏‏‏لم تكتب شيئا، ‏‏‏‏‏‏فإن عملها، ‏‏‏‏‏‏كتبت سيئة واحدة، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فنزلت حتى انتهيت إلى موسى عليه السلام، ‏‏‏‏‏‏فاخبرته، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ ارجع إلى ربك فاساله التخفيف، ‏‏‏‏‏‏فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقلت:‏‏‏‏ قد رجعت إلى ربي حتى استحييت منه ".

    سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”میرے سامنے براق لایا گیا۔ اور وہ ایک جانور ہے سفید رنگ کا گدھے سے اونچا اور خچر سے چھوٹا اپنے سم وہاں رکھتا ہے، جہاں تک اس کی نگاہ پہنچتی ہے (تو ایک لمحہ میں آسمان تک جا سکتا ہے) میں اس پر سوار ہوا اور بیت المقدس تک آیا۔ وہاں اس جانور کو حلقہ سے باندھ دیا۔ جس سے اور پیغمبر اپنے اپنے جانوروں کو باندھا کرتے تھے (یہ حلقہ مسجد کے دروازے پر ہے اور باندھ دینے سے معلوم ہوا کہ انسان کو اپنی چیزوں کی احتیاط اور حفاظت ضروری ہے اور یہ توکل کے خلاف نہیں) پھر میں مسجد کے اندر گیا اور دو رکعتیں نماز کی پڑھیں بعد اس کے باہر نکلا تو جبرئیل علیہ السلام دو برتن لے کر آئے ایک میں شراب تھی اور ایک میں دودھ میں نے دودھ پسند کیا۔ جبرئیل علیہ السلام ہمارے ساتھ آسمان پر چڑھے (جب وہاں پہنچے) تو فرشتوں سے کہا: دروازہ کھولنے کیلئے، انہوں نے پوچھا کون ہے؟ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: جبرئیل ہے۔ انہوں نے کہا: تمہارے ساتھ دوسرا کون ہے۔؟ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔ فرشتوں نے پوچھا: کیا بلائے گئے تھے۔ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: ہاں بلائے گئے ہیں، پھر دروازہ کھولا گیا ہمارے لئے اور ہم نے آدم علیہ السلام کو دیکھا، انہوں نے مرحبا کہا اور میرے لئے دعا کی بہتری کی۔ پھر جبرئیل علیہ السلام ہمارے ساتھ چڑھے دوسرے آسمان پر اور دروازہ کھلوایا، فرشتوں نے پوچھا: کون ہے۔ انہوں نے کہا: جبرئیل۔ فرشتوں نے پوچھا: تمہارے ساتھ دوسرا کون شخص ہے؟ انہوں نے کہا: محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں فرشتوں نے کہا: کیا ان کو حکم ہوا تھا بلانے کا۔ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: ہاں ان کو حکم ہوا ہے، پھر دروازہ کھلا تو میں نے دونوں خالہ زاد بھائیوں کو دیکھا یعنی عیسیٰ بن مریم اور یحییٰ بن زکریا علیہم السلام کو ان دونوں نے مرحبا کہا اور میرے لئے بہتری کی دعا کی پھر جبرئیل علیہ السلام ہمارے ساتھ تیسرے آسمان پر چڑھے اور دروازہ کھلوایا۔ فرشتوں نے کہا: کون ہے؟ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: جبرئیل۔ فرشتوں نے کہا: دوسرا تمہارے ساتھ کون ہے۔ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔ فرشتوں نے کہا: کیا ان کو پیغام کیا گیا تھا بلانے کے لئے؟ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: ہاں ان کو پیغام کیا گیا تھا پھر دروازہ کھلا تو میں نے یوسف علیہ السلام کو دیکھا اللہ نے حسن (خوبصورتی) کا آدھا حصہ ان کو دیا تھا۔ انہوں نے مرحبا کہا مجھ کو اور نیک دعا کی پھر جبرئیل علیہ السلام ہم کو لے کر چوتھے آسمان پر چڑھے اور دروازہ کھلوایا فرشتوں نے پوچھا: کون ہے؟ کہا: جبرئیل۔ پوچھا: تمہارے ساتھ دوسرا کون ہے۔؟ کہا: محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں فرشتوں نے کہا: کیا بلوائے گے ہیں؟ جبرئیل نے کہا: ہاں بلوائے گئے ہیں، پھر دروازہ کھلا تو میں نے ادریس علیہ السلام کو دیکھا، انہوں نے مرحبا کہا اور اچھی دعا دی مجھ کو، اللہ جل جلالہ نے فرمایا: ہم نے اٹھا لیا ادریس کو اونچی جگہ پر (تو اونچی جگہ سے یہی چوتھا آسمان مراد ہے) پھر جبرئیل علیہ السلام ہمارے ساتھ پانچویں آسمان پر چڑھے۔ انہوں نے دروازہ کھلوایا۔ فرشتوں نے پوچھا: کون؟ کہا جبرئیل۔ پوچھا تمہارے ساتھ کون ہے؟ کہا: محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔ فرشتوں نے کہا: کیا بلائے گئے ہیں۔ جبرئیل علیہ السلام نے کہا ہاں بلوائے گئے ہیں، پھر دروازہ کھلا تو میں نے ہارون علیہ السلام کو دیکھا انہوں نے مرحبا کہا اور مجھے نیک دعا دی۔ پھر جبرئیل علیہ السلام ہمارے ساتھ چھٹے آسمان پر پہنچے اور دروازہ کھلوایا فرشتوں نے پوچھا کون ہے؟ کہا: جبرئیل۔ پوچھا اور کون ہے تمہارے ساتھ؟ انہوں نے کہا: محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔ فرشتوں نے کہا: کیا اللہ نے ان کو پیغام بھیجا آ ملنے کیلئے؟ جبرئیل علیہ السلام نے کہا: ہاں بھیجا، پھر دروازہ کھلا تو میں نے موسیٰ علیہ السلام کو دیکھا، انہوں نے کہا: مرحبا اور اچھی دعا دی مجھ کو، پھر جبرئیل علیہ السلام ہمارے ساتھ ساتویں آسمان پر چڑھے اور دروازہ کھلوایا فرشتوں نے پوچھا: کون ہے؟ کہا: جبرئیل، پوچھا: تمہارے ساتھ اور کون ہے؟ کہا: محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔ فرشتوں نے پوچھا: کیا وہ بلوائے گئے ہیں؟ انہوں نے کہا: ہاں بلوائے گئے ہیں۔ پھر دروازہ کھلا تو میں نے ابراہیم علیہ السلام کو دیکھا وہ تکیہ لگائے ہوئے تھے اپنی پیٹھ کا بیت المعمور کی طرف (اس سے یہ معلوم ہوا کہ قبلہ کی طرف پیٹھ کر کے بیٹھنا درست ہے) اور اس میں ہر روز ستر ہزار فرشتے جاتے ہیں جو پھر کبھی نہیں آتے پھر جبرئیل علیہ السلام مجھ کو سدرۃ المنتہیٰ کے پاس لے گئے۔ اس کے پتے اتنے بڑے تھے جیسے ہاتھی کے کان اور اس کے بیر جیسے قلہ (ایک بڑا گھڑا جس میں دو مشک یا زیادہ پانی آتا ہے) پھر جب اس درخت کو اللہ کے حکم نے ڈھانکا تو اس کا حال ایسا ہو گیا کہ کوئی مخلوق اس کی خوبصورتی بیان نہیں کر سکتی پھر اللہ جل جلالہ نے ڈالا میرے دل میں جو کچھ ڈالا اور پچاس نمازیں ہر رات اور دن میں مجھ پر فرض کیں جب میں اترا اور موسیٰ علیہ السلام تک پہنچا تو انہوں نے پوچھا: تمہارے پروردگار نے کیا فرض کیا تمہاری امت پر۔ میں نے کہا: پچاس نمازیں فرض کیں۔ انہوں نے کہا: پھر لوٹ جاؤ اپنے پروردگار کے پاس اور تخفیف چاہو کیونکہ تمہاری امت کو اتنی طاقت نہ ہو گی اور میں نے بنی اسرائیل کو آزمایا ہے اور ان کا امتحان لیا ہے۔ میں لوٹ گیا اپنے پروردگار کے پاس اور عرض کیا: اے پروردگار! تخفیف کر میری امت پر اللہ تعالیٰ نے پانچ نمازیں گھٹا دیں۔ میں لوٹ کر موسٰی علیہ السلام کے پاس آیا اور کہا کہ پانچ نمازیں اللہ تعالیٰ نے مجھے معاف کر دیں۔ انہوں نے کہا: تمہاری امت کو اتنی طاقت نہ ہو گی تم پھر جاؤ اپنے رب کے پاس اور تخفیف کراؤ۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میں اس طرح برابر اپنے پروردگار اور موسٰی علیہ السلام کے درمیان آتا جاتا رہا یہاں تک کہ اللہ جل جلالہ نے فرمایا: اے محمد! وہ پانچ نمازیں ہیں، ہر دن اور ہر رات میں اور ہر ایک نماز میں دس نماز کا ثواب ہے، تو وہی پچاس نمازیں ہوئیں (سبحان اللہ! مالک کی کیسی عنایت اپنے غلاموں پر ہے کہ پڑھیں تو پانچ نمازیں اور ثواب ملے پچاس کا) اور جو کوئی شخص نیت کرے کام کرنے کی نیک، پھر اس کو نہ کرے تو اس کو ایک نیکی کا ثواب ملے گا اور جو کرے تو دس نیکیوں کا اور جو شخص نیت کرے برائی کی پھر اس کو نہ کرے تو کچھ نہ لکھا جائے گا اور اگر کر بیٹھے تو ایک ہی برائی لکھی جائے گی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پھر میں اترا اور موسیٰ علیہ السلام کے پاس آیا۔ انہوں نے کہا: پھر جاؤ اپنے پروردگار کے پاس اور تخفیف چاہو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا میں اپنے پروردگار کے پاس بار بار گیا یہاں تک کہ میں شرما گیا اس سے۔“
     
    آصف احمد بھٹی نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں