1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

زندہ مُردہ

'اردو ادب' میں موضوعات آغاز کردہ از مبارز, ‏8 اپریل 2009۔

  1. مبارز
    آف لائن

    مبارز ممبر

    شمولیت:
    ‏3 اگست 2008
    پیغامات:
    8,835
    موصول پسندیدگیاں:
    26
    زندہ مُردہ
    از: خورشید احمد - ہیملٹن، کناڈا

    (یہ کہانی بالکل حقیقی ہے، میں نے صرف مرحوم کی روح کی تسکین کے لیئے اُنکا نام بدل دیا ہے۔۔۔)

    علی گڑھ یونیورسٹی کے ایک ہوسٹل میں ایک منتظم تھے جنکا نام اسرارالحق تھا۔۔۔وہ بہت بدمزاج تھے اور ہمیشہ لڑکوں پر نکتہ چینی کیا کرتے تھے اور ذرا ذرا سی بات پر اُنکو ڈانٹ دیا کرتے تھے۔۔۔لڑکے اُن سے تنگ آچکے تھے لیکن اُن سے کچھ کہہ بھی نہیں سکتے تھے کیونکہ وہ حضرت کافی عمر رسیدہ تھے اور اُن نوجوانوں کی کیا مجال تھی کہ وہ اُن سے کوئی گستاخی کر سکتے۔۔۔۔

    آخر جب صبر کا پیمانہ لبریز ہو گیا تو کچھ لڑکوں‌نے طے کیا کہ اِن حضرت کو کچھ سبق سکھانا ہی پڑے گا۔۔۔بہت بحث و مباحثہ ہوا، بہت سی تجاویز پیش ہوئیں۔۔۔۔مثلئہ یہ تھا کہ بلی کے گلے میں‌گھنٹی کیسے باندھی جائے؟ آخر کار یہ فیصلہ ہوا کہ اُنکی ایک کمزوری کا فائدہ اُٹھا کر جلد از جلد اُنہیں دوسرے جہان میں بھیج دیا جائے۔۔۔!!!

    گرمیوں کا موسم تھا۔۔۔


    (جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔)
     
  2. مبارز
    آف لائن

    مبارز ممبر

    شمولیت:
    ‏3 اگست 2008
    پیغامات:
    8,835
    موصول پسندیدگیاں:
    26
    (گزشتہ سے پیوستہ۔۔۔۔۔۔)

    گرمیوں کا موسم تھا۔۔۔ سب کمروں کے باہر میدان میں چارپائیوں پر سوتے تھے۔۔اسرار صاحب بھی وہیں سوتے تھے۔۔وہ بڑی گہری نیند سوتے تھے۔۔۔اور جب تک اُنکی نیند پوری نہ ہو جائے یہ ممکن ہی نہ تھا کہ کوئی اُنکو جگا سکے، چاہے کتنا ہی شور و غُل ہوتا رہے۔۔۔۔اسی وجہ سے وہ فجر کی نماز بھی ہمیشہ قضا ہی پڑھتے تھے۔۔۔۔۔


    ایک دل علیَ الصبح جبکہ اسرار صاحب زوروں سے خراٹے لگا رہے تھے، آٹھ دس لڑکوں نے اُنکے اوپر ایک سفید چادر ڈال دی اور بڑی احتیاط سے اُنکی چار پائی اُٹھا کر کندھوں پر رکھی اور قبرستان کی طرف روانہ ہو گئے۔۔۔۔اسرار صاحب کسی گہرے خواب میں انٹاغفیل تھے۔۔۔۔قبرستان قریب ہی تھا اور آس پاس کہ رہنے والے لوگ قبرستان کی مسجد میں فجر کی نماز پڑھنے کیلئے جارہے تھے۔۔۔انہوں نے جنازہ جاتے دیکھا تو وہ بھی جنازہ میں شریک ہو گئے۔۔۔۔۔اور باری باری میت کو کاندھا دینا شروع کر دیا۔۔۔۔لوگوں کی تعداد بڑھتی گئی۔۔۔اور وہ لڑکے جو اُس جنازے کو لے کر روانہ ہوئے تھے۔۔آہستہ آہستہ پیچھے سرکتے گئے۔۔اور وہاں سے خاموشی سے کھسک گئے۔۔۔۔۔۔


    بوجھ اتنا بھر گئی تھی روحِ سُبک نکل کے
    ایک اک کا منتظر تھا دو چار گام چل کے

    حالانکہ گھر سے تُربت کچھ دُور نہ تھی اپنی
    پہونچا میرا جنازہ کاندھے بدل بدل کے

    جب جنازہ قبرستان کی مسجد پہنچا تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    (جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔)
     
  3. مبارز
    آف لائن

    مبارز ممبر

    شمولیت:
    ‏3 اگست 2008
    پیغامات:
    8,835
    موصول پسندیدگیاں:
    26
    (گزشتہ سے پیوستہ۔۔۔۔۔۔)

    جب جنازہ قبرستان کی مسجد پہنچا تو وہاں کے مولوی صاحب گھبرا کے بولے "ارے یہ کیا؟" آپ لوگ صبح ہی صبح جنازہ لے آئے۔۔ہمیں تو کسی نے قبر کھودنے کی اطلاع بھی نہیں‌کی۔۔۔کس کا جنازہ ہے۔۔۔؟ کون اس میت کا وارث ہے۔۔؟"۔۔۔۔

    سب لوگ ایک دوسرے کی طرف تعجب سے دیکھنے لگے۔۔۔۔کسی نے بھی اقرار نہیں‌کیا۔۔۔مولوی صاحب نے قریب آکر کہا "ذرا دیکھیں تو یہ میت کس کی ہے۔۔۔؟"۔۔۔ اُنہوں نے منہ سے چادر ہٹائی تو دیکھا کہ مُردہ آہستہ آہستہ خراٹے لے رہا تھا۔۔۔۔!!! مولوی صاحب یکایک چیخ پڑے۔۔۔"ارے مُردہ تو زندہ ہے۔۔۔!! استغفراللہ۔۔۔۔"۔۔۔مولوی صاحب کی چیخ سن کر اسرار صاحب جاگ گئے اور ہڑبڑا کر اُٹھ گئے۔۔۔۔چاروں طرف حیرت انگیز نظروں سے دیکھنے لگے۔۔۔سب لوگ ہیبت سے پیچھے ہٹ گئے۔۔۔۔اسرار صاحب کو ہوش آنے میں چند لمحے لگے اور چاروں طرف مجمعہ اور قبریں دیکھ کر بوکھلا گئے۔۔۔۔کیا یہ حقیقت ہے یا کوئی ہیبت ناک خواب۔۔۔؟۔۔۔اک دم سے اُنکو یہ احساس ہوا کہ یہ مردُود اُنہیں زندہ دفنانے کی سازش کر رہے ہیں۔۔۔اور نمازِ جنازہ کی تیاریاں‌ ہو رہی ہیں۔۔۔بس اپنی جان بچانے کیلئے فوراََ اُٹھ کر بھاگے۔۔۔۔لوگ اُنکے پیچھے بھاگے۔۔۔۔تھوڑی دور اُنکا تعقب کیا پھر اُنہیں احساس ہوا کہ ضرور یہ کسی نوجوان کی شرارت تھی۔۔۔لہذا سب لوگ ہنستے ہوئے واپس چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    اسرار صاحب ہانپتے کانپتے ہوسٹل میں واپس پہنچے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہاں پر یہ خبر پھیل چکی تھی کہ آج اسرار صاحب کا جنازہ قبرستان کی طرف روانہ ہو چُکا ہے۔۔۔تمام لڑکے جمع تھے۔۔۔لیکن اسرار صاحب کس کو الزام دیتے۔۔دل ہی دل میں خفا تو بہت ہوئے لیکن تیزی سے بھیگی بلی کی طرح اپنے کمرے میں چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔تین دن تک کمرے سے باہر نہ نکلے۔۔۔۔۔۔۔اور آئندہ سے لڑکوں سے کترانے لگے۔۔۔۔۔۔۔۔اور اُنکو برا بھلا کہنا چھوڑ دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ دنوں بعد وہ نوکری چھوڑ کر کہیں دور چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    یوں سمجھے کہ اسرار صاحب کو اُنکی عارضی موت سے ایک نئی زندگی مل گئی اور لڑکوں کو اُن سے دائمی نجات۔۔۔۔۔!!۔۔
    (ختم شد)
     
  4. نعیم
    آف لائن

    نعیم مشیر

    شمولیت:
    ‏30 اگست 2006
    پیغامات:
    58,106
    موصول پسندیدگیاں:
    11,152
    ملک کا جھنڈا:
    السلام علیکم ۔ کاشفی بھائی ۔
    بہت اچھی ادبی تحریر ہے۔
    ہم بھی بچپن میں ایسے منصوبے سوچا کرتے تھے۔ لیکن عمل کی جرات نہ ہوتی تھی ۔ :hands:
     
  5. نیلو
    آف لائن

    نیلو ممبر

    شمولیت:
    ‏8 اپریل 2009
    پیغامات:
    1,399
    موصول پسندیدگیاں:
    1
    مبارز جی ۔ ادبی ذوق خوب ہے۔ :a180:
     
  6. نادر سرگروہ
    آف لائن

    نادر سرگروہ ممبر

    شمولیت:
    ‏5 جون 2008
    پیغامات:
    600
    موصول پسندیدگیاں:
    6
    '
    '
    کاشفی بھائی
    میں اِس تحریر کی حوصلہ افزائی نہیں کر سکتا۔
    کیوں کہ اِس میں کئی منفی پیغامات ہیں۔

    ۔
    کسی استاد کے ساتھ ایسی حرکت
    دوسرے یہ کہ مسجد کی طرف جاتے نمازیوں کے ساتھ مذاق
    اور پھر اُستاد کا ہمیشہ ہمیشہ کے لئے نوکری چھوڑ کر چلے جانا۔۔
    یہ سب تکلیف دہ باتیں ہیں۔


    خورشید احمد صاحب کا مقصد اگر لوگوں کو ہنسانا ہی ہے تو اِس کے اور بھی طریقے ہو سکتے ہیں۔
    ایسے واقعات بیان کر کے وہ قوم اور اردو کی خدمت نہیں کر سکتے۔

    ۔
     
  7. مبارز
    آف لائن

    مبارز ممبر

    شمولیت:
    ‏3 اگست 2008
    پیغامات:
    8,835
    موصول پسندیدگیاں:
    26

    السلام علیکم نادر بھائی، آپ نے جن باتوں کی نشاندہی کی ہے اس کے لیئے میں آپ کا مشکور ہوں۔۔۔جزاک اللہ۔۔۔جیتے رہیں اور خوش رہیں۔۔
    واقعی اس طرح کے واقعات قوم و ملت اور نوجوان نسل کے سامنے پیش کرنا بہت بڑی غلطی ہے۔۔۔۔۔۔۔ ان واقعات سے نوجوان نسل کو غلط پیغام پہنچے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔غلطی کی نشاندہی کے لیئے، میں آپ کا ایک بار پھر تہہ دل سے شکر گزار ہوں۔۔۔۔
    اُمید ہے مستقبل قریب میں مجھ سے سرزد ہونے والی مزید غلطیوں کی بھی آپ نشاندہی کریں‌گے۔۔۔۔ :happy:


    وعلیکم السلام نعیم بھائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پسندیدگی کے لیئے شکریہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اب یہ ادبی تحریر نہیں‌ رہی۔۔معذرت خواہ ہوں۔۔۔اپنا خیال رکھیں اور خوش و خرم رہیں۔۔۔۔فائزہ اور فیضان کو میرا سلام پہنچائیں۔۔۔۔ :dilphool:

    نیلو جی آداب! ۔۔۔ تحریر پسند آئی۔۔۔۔۔۔۔شکریہ۔۔۔ آپ کا اندازِ بیاں بھی خوب ہے۔۔ :dilphool:
     
  8. حسن رضا
    آف لائن

    حسن رضا ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جنوری 2009
    پیغامات:
    28,857
    موصول پسندیدگیاں:
    592
    ملک کا جھنڈا:
    دوست بہت خوب واہ :a165:
     
  9. مبارز
    آف لائن

    مبارز ممبر

    شمولیت:
    ‏3 اگست 2008
    پیغامات:
    8,835
    موصول پسندیدگیاں:
    26
    دوست شکریہ۔۔۔کدھر غائب ہو دوست آپ۔۔نظر نہیں‌ آرہے ہو۔۔۔آپ بھی خفیہ ہاتھوں میں چلے گئے گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
  10. حسن رضا
    آف لائن

    حسن رضا ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جنوری 2009
    پیغامات:
    28,857
    موصول پسندیدگیاں:
    592
    ملک کا جھنڈا:
    کیا ہوا آپ نظ نہیں آتے
     
  11. مبارز
    آف لائن

    مبارز ممبر

    شمولیت:
    ‏3 اگست 2008
    پیغامات:
    8,835
    موصول پسندیدگیاں:
    26
    دوست آپ نظر نہیں آرہے ہو آج کل۔۔۔پہلے جب خوشی جی آتی تھیں تو آپ نظر آتے تھے اب تو آپ کم کم آرہے ہو۔۔۔ہم بھی آپ کے دوست ہیں دوست۔۔۔۔
     
  12. حسن رضا
    آف لائن

    حسن رضا ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جنوری 2009
    پیغامات:
    28,857
    موصول پسندیدگیاں:
    592
    ملک کا جھنڈا:
    نہیں ایسی بات نہیں ہے آؤ گپ شپ میں چلیں وہاں باتیں کرتے ہیں
     

اس صفحے کو مشتہر کریں