1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت مبارک مختصرا 2

'سیرتِ سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم' میں موضوعات آغاز کردہ از عادل سہیل, ‏9 اکتوبر 2008۔

  1. عادل سہیل
    آف لائن

    عادل سہیل ممبر

    شمولیت:
    ‏24 جولائی 2008
    پیغامات:
    410
    موصول پسندیدگیاں:
    10
    ملک کا جھنڈا:
    [align=justify:3r8eb6x0] ::::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلِہ وسلم کی سیرت مُبارک ( مُختصراً ) (2)::::: [/align:3r8eb6x0]

    [align=justify:3r8eb6x0] ::::: (٢) رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کے اِخلاق مُبارک کی چند جھلکیاں ، دیکھیے اور انہیں اپنائیے ::::: [/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0] : : : تحمل و بُردباری اور برداشت کرنا، اور قُدرت ہونے کے باوجود معاف کرنا ، اور سختیوں اور مظالم پر صبر کرنا ، اور اپنے پاس ہونے نہ ہونے کا احساس رکھے بغیردوسروں کو دینا ، شرم و حیاء ، اِنصاف و میانہ روی ، تواضع و اِنکسار ، بُہادری اور دلیری ، یہ ایسی صفات ہیں جِن سے اللہ تعالیٰ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی ذات مُبارک کو مُزین فرمایا تھا ، ہر حلیم و بُردبار شخص کی زندگی میں کہیں نہ کہیں کوئی نہ کوئی لڑکھڑاہٹ ، غلطی ، ٹھوکر مل ہی جاتی ہے ، اِنسانی تاریخ میں صرف ہمارے نبی صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم ہی ایک ایسی شخصیت ہیں جِن کے بارے میں ایسی کوئی بات نہیں ملتی بلکہ اُن صلی اللہ علیہ وسلم پر جتنے زیادہ ظُلم و ستم کیے گئے اُنہوں نے اُتنا ہی زیادہ تحمل وبُردباری کا مظاہرہ فرمایا ، جتنی زیادہ مُصبیتیں آئیں اُتنا ہی زیادہ صبر کا مظاہرہ فرمایا ، آئیے مختصر طور پر اُن صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی حیاتِ طیبہ میں سے اُن کی منذکورہ بالا صِفات کی دل آویز و اِیمان افروز جھلکیاں دیکھیں ، اور اِنہیں اپنی زندگیوں میں نافذ کر کے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کے سچے پیروکار بنیں ،[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کو جب کِسی دو کاموں میں ایک اختیار کرنے کا موقع دِیا جاتا تو وہ آسان کام کو اختیار فرماتے بشرطیکہ وہ کام گُناہ نہ ہو ، اور اگر آسانی میں گُناہ ہوتا تو وہ صلی اللہ علیہ وسلم گُناہ سے سب سے زیادہ دُور رہتے تھے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے کبھی کِسی سے اپنی ذات کے لیے انتقام نہیں لِیا لیکن اگر اللہ کی مقرر کردہ کِسی حُرمت کی پامالی کی گئی ہو تو اللہ کے لیے اُس کا انتقام لیتے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم ہر کِسی سے بڑھ کرغُصے سے دُور رہتے اور جلد ی راضی ہو جاتے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم اتنا اور اس طرح عطاء فرماتے کہ فقر کا ڈر نہ رہتا ، عبداللہ ابن عباس رضی اللہ عنہما کا کہنا ہے کہ ''''' کانَ رَسُولَ اللَّہ أَجوَدَ الناس وکان أَجوَدُ ما یَکُونُ فی رَمَضَانَ حین یَلقَاہُ جِبرِیلُ وکان یَلقَاہُ فی کل لَیلَۃٍ من رَمَضَانَ فَیُدَارِسُہُ القُرآنَ فَلَرَسُولُ اللَّہِ صَلی اللَّہ علیہ وسلم أَجوَدُ بِالخَیرِ من الرِّیحِ المُرسَلَۃِ ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سب سے زیادہ بڑھ کر سخاوت کرنے والے تھے اور رمضان میں جب اُنہیں جبریل( علیہ السلام ) ملِا کرتے تھے اُس وقت وہ( صلی اللہ علیہ وسلم ) ہر دوسرے وقت سے زیادہ سخاوت فرمایا کرتے اور جبریل (علیہ السلام) ہر رات اُن ( صلی اللہ علیہ وسلم )سے ملا کرتے تھے اور قُران سِکھایا کرتے تھے ، پس رسول اللہ(صلی اللہ علیہ وسلم ) خیر (کے کام کرنے ) میں ہوا سے بھی زیادہ تیزی فرماتے ) ""، اور جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہما کا کہنا ہے کہ ( جب کبھی بھی رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سے کچھ مانگا گیا تو اُنہوں نے کبھی نہ نہیں کی )[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سب سے زیادہ بُہادر تھے ، اُن کی سیرت مُبارک پرصِرف نظر کرنے والا بھی اُن کی شُجاعت و بُہادری سے نا واقف نہیں رہ سکتا ، اُن صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی سیرت مُبارک میں کئی ایسے مواقع ملتے ہیں کہ جب بڑے بڑے لڑاکے اور ماہر جنگجو اُن کا سامنا کرنے سے بھاگ اُٹھے ، لوگ خوف زدگی کی حالت میں رہے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم انتہائی شُجاعت سے ثابت قدمی کے ساتھ مُشکل و خوف کا سامنا فرماتے رہے یہاں تک کہ اللہ تعالیٰ اُسے دُور یا ختم فرما دِیا ، یہاں صِرف ایک مثال بیان کی جا تی ہے کہ جب جِہادِ حُنین کے موقع پر صحابہ دُشمن کے انتہائی ماہر تیر انداز دستے کے اچانک حملے کی وجہ سے دائیں بائیں ہو گئے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم انتہائی شُجاعت سے اپنے سُفید خچر پر سوار دُشمن کی طرف بڑہتے رہے اور یہ فرماتے جاتے کہ ( أنا النبی لَا کَذِب أنا بن عبد المُطَّلِب ::: میں نبی ہوں کوئی جھوٹ نہیں ، میں عبدالمطلب کا بیٹا ہوں) اور یہ بہادری و شجاعت اُن صلی اللہ علیہ وسلم کی دائمی صِفت تھی جیسا کہ علی رضی اللہ عنہُ کافرمان ہے ( إذا احمَرَّ البَأسُ ولَقی القَومُ القَومَ اتَّقَینَا بِرَسُولِ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلیہِ وسلَّم فَما یَکُونُ مِنَّا أَحَدٌ أَدنَی مِن القَومِ مِنہُ) ( جب جنگ کی سختی سُرخ ہو جاتی اور دونوں گروہ ٹکرا جاتے تو ہم لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعے اپنا بچاؤ کرتے اور ہم میں سے سب سے زیادہ دُشمن کے قریب وہ صلی اللہ علیہ وسلم ہوا کرتے ) [/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سب سے زیادہ شرم و حیاء والے تھے ، سب سے زیادہ اپنی نظر کی حفاظت کرنے والے تھے ، اور سب سے زیادہ اپنی نظر و زُبان سے بھی لوگوں کا احترام کرنے والے تھے ، أبو سعید الخُدری رضی اللہ عنہُ کا فرمان ہے (کان النبی صلی اللَّہ علیہ وسلم أَشَدَّ حَیَاء ً من العَذرَاء ِ فی خِدرِہَا فإذا رَأَی شیأا یَکرَہُہُ عَرَفنَاہُ فی وَجہِہِ )( نبی صلی اللہ علیہ وسلم اپنی چادر میں لپٹی ہوئی کِسی کنواری سے زیادہ حیاء والے تھے ، اور اگر وہ صلی اللہ علیہ وسلم کِسی چیز کو نا پسند کرتے تو ہم اُن کے چہرے (مُبارک)سے (اُن کی نا پسنددیدگی ) جان لیتے )
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سب سے زیادہ اپنی نظر کی حفاظت کرنے والے تھے ، اور اپنی پلکوں کو جُھکائے رکھتے تھے ، اُن کی نظر مُبارک اُوپر اُٹھی رہنے سے کہیں زیادہ زمین کی طرف جُھکی رہتی تھی،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سب سے زیادہ اپنی نظر و زُبان سے بھی لوگوں کا احترام کرنے والے تھے ، کِسی کے چہرے پر نظرچپکائے نہیں رکھتے تھے ، کِسی کی غلطی جاننے پر اُس کا نام لے کر بات نہ فرماتے بلکہ یوں فرما کر کہ ( کیا ہو گیا ہے لوگوں کو کہ ، یہ کہتے ہیں ، یا یہ کرتے ہیں ،،،، ) غلطی کی نشاندہی فرماتے ،[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سب سے زیادہ انصاف کرنے والے ، عِفت والے ، باکِردار ، بات کے سچے اور پکے ، اور امانت دار تھے ، نبوت سے پہلے اہل مکہ اُنہیں ''' امانت دار ''' کے لقب سے جانتے تھے ، اور نبوت کے بعد بھی اِن صِفات کا اِقرار اُن صلی اللہ علیہ وسلم اور اللہ کے دِین کے دُشمن بھی کرتے تھے ، علی رضی اللہ عنہُ سے روایت ہے کہ ''''' ابو جھل نے ایک دِن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کہا ::: ہم تُمہاری تکذیب نہیں کرتے لیکن جو تُم لے کر آئے ہو اُس کی تکذیب کرتے ہیں::: تو اللہ تعالیٰ نے اُن (کی اِس بات کے جواب ) میں یہ آیت نازل فرمائی ( قَد نَعلَمُ إِنَّہُ لَیَحزُنُکَ الَّذِی یَقُولُونَ فَإِنَّہُم لاَ یُکَذِّبُونَکَ وَلَکِنَّ الظَّالِمِینَ بِآیَاتِ اللّہِ یَجحَدُونَ ) ( یقینا ہم جانتے ہیں کہ اُن کی یہ بات آپ کو دُکھی کرتی ہے ،لہذا (آپ دُکھی نہ ہوں ) کہ وہ لوگ آپ کو نہیں جُھٹلا رہے بلکہ وہ ظالم اللہ کی آیات کا اِنکار کر رہے ہیں) سورت الانعام/آیت ٣٣ ،
    ::: جب ہرقل نے ابو سُفیان سے پوچھا کہ ''' کیا تُم لوگ مُحمد (صلی اللہ علیہ وسلم) کو اُس کی اِس (نبوت والی ) بات سے پہلے جُھوٹا کہتے تھے ؟''' تو ابو سُفیان نے کہا ''' نہیں '''،[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سب سے بڑھ کر تواضع و اِنکساری والے تھے ، اور سب سے زیادہ غرور و تکبر سے دُور رہنے والے تھے ، اپنے لیے کھڑے ہونے سے منع فرمایا کرتے تھے جیسے کہ بادشاہوں کے لیے کھڑا ہوا جاتا ہے ، غریبوں کی عیادت کے لیے تشریف لے جایا کرتے ، اُن کو اپنے پاس بٹھاتے ، مُحبت اور توجہ سے ہر ایک بات سُنتے ، حتیٰ کہ زرخرید غُلاموں کی بات بھی قُبُول فرماتے اور اُنہیں اپنی محفل میں دوسرے صحابہ رضی اللہ عنہم کی طرح ہی بِٹھاتے ، اپنے سارے کام خود کر لینے میں کوئی عار محسوس نہ فرماتے ، اِیمان والوں کی والدہ محترمہ عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں ( رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے گھر میں اُس طرح کام کیا کرتے تھے جِس طرح تُم لوگ کرتے ہو ، وہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنا جوتا مُرمت فرماتے ، اپنا کپڑا سیتے ، اپنے برتن میں پانی بھرتے ، وہ صلی اللہ علیہ وسلم اِنسانوں میں سے ایک اِنسان تھے اپنے کپڑوں کی صفائی کرتے اور اپنی بکری کا دُودھ نکالتے اور اپنے کام خود کرتے )
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سب سے بڑھ وعدہ اور عہد پورا کرنے والے ، رشتہ داریوں کو جوڑے رکھنے اور نبھانے والے ، اور سب لوگوں کے لیے محبت ، رحم اور مہربانی کرنے والے تھے ، بہترین طور پر معاملات نبھانے والے اور ادب کرنے والے ، سب سے بڑھ کر خوش اخلاق تھے ، اور بد اِخلاقی سے سب سے زیادہ دُور رہنے والے تھے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نہ بے حیائی کرنے والے تھے اور نہ ہی بے حیائی کی بات کرنے والے اور نہ ہی لعنت کرنے والے ، اور نہ ہی بازاروں میں گھومنے والے ،[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے کبھی بُرائی کا جواب بُرائی سے نہ دِیا بلکہ بُرا کرنے والے سے درگزر فرماتے اور معاف فرما دیتے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے کبھی اپنے خادموں ، یا خادمات کو دانٹا نہیں اور نہ مارا ، اور نہ ہی اپنے کھانے پینے اور پہننے اوڑھنے میں خود کو اُن پر فوقیت دی ، اور نہ کبھی اُن کو کِسی کام کے نہ کرنے کا سبب پوچھا اور نہ ہی کِسی کام کے کرنے کی وجہ دریافت فرمائی ، بلکہ کبھی کِسی کے کام پر اُف تک بھی نہ کہا ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم غُلاموں ، خادموں ، غریبوں کی عیادت کے لیے تشریف لے جاتے اُن پر نماز جنازہ پڑہاتے ، اُن کے دفن میں شامل ہوتے ، کبھی کِسی غریب کو اُس کی غُربت یا کِسی (معاشی ، معاشرتی درجہ بندی کی وجہ سے )کمزور کو اُس کی کمزوری کی عجہ سے حقیر جانا ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم اپنے ساتھیوں کے ساتھ مل کر کام کرتے اور خود کو کبھی ایک حکمران یا پیر و مُرشد کی حیثیت میں نہ رکھتے ، اِس کی کئی مثالیں اُن صلی اللہ علیہ وسلم کی مُبارک و پاکیزہ زندگی میں ملتی ہیں ، جیسا کہ مسجدِ قُباء اور مسجدِ نبوی بناتے ہوئے ، جِہاد خندق کے لیے خندق کھودتے ہوئے ، اپنے صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین کے ساتھ مل کر کام کیا ،[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم لوگوں کو اپنے پیچھے نہ چلنے دیتے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم اپنے صحابہ کی خبرر کھتے ، اُن کے حال احوال معلوم کرتے رہتے ، اگر کوئی نظر نہ آتا تو اُس کے بارے میں دریافت فرماتے ، اچھی بات کو اچھا قرار دیتے اور غلط کو غلط ، کبھی حق دار کے حق سے غافل نہ ہوتے اور نہ ہی اُسے دوسرے کے پاس جانے دیتے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم مجلسوں میں اپنے لیے جگہیں مخصوص نہ فرماتے ، اور نہ ہی کوئی بلند مقام اختیار کرتے ، جب کِسی مجلس میں تشریف لاتے تو جہاں جگہ ملتی وہیں تشریف فرما ہو جاتے ، اور اپنے صحابہ کو بھی ایسا کرنے کا حُکم فرماتے اور اپنی مجلس میں آنے والے ہر ایک کو اس طرح بِٹھاتے کہ کِسی کے دِل میں یہ خیال نہ آئے کہ اُن صلی اللہ علیہ وسلم نے کِسی دوسرے کو زیادہ عِزت و بزرگی دی ہے ، اگر کوئی اُن صلی اللہ علیہ وسلم کو کِسی وجہ سے بِٹھا لیتا یا کھڑا کر لیتا تو اُس کے ساتھ اُس کی دِل جَوئی میں اُس وقت تک بیٹھے یا کھڑے رہتے جب تک وہ خود ہی اُن صلی اللہ علیہ وسلم سے رُخصت نہ ہو جائے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کبھی کِسی سائل کو اُس کا سوال ہورے کیے بغیر واپس نہ کرتے اور اگر دینے کے لیے کچھ نہ ہوتا تو اُس کی بہت اچی طرح سے دل جمعی کر کے اپنے پاس سے سے رُخصت فرماتے ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم خوش اِخلاقی سے ملنے والے ، نرمی اور مُحبت سے پیش آنے والے تھے ، نہ ہی تُرش رَو تھے ، نہ ہی بد کلام تھے ، نہ ہی سخت مزاج ، نہ ہی بلا سبب کِسی کی تعریف کرنے والے ، جو کام نہ کرنے والا ہوتا اُس کی طرف توجہ نہ فرماتے ، جو کام اُن سے متعلق نہ ہواُس میں دخل اندازی نہ فرماتے ، کوئی کام دِکھاوے کے لیے نہیں کرتے تھے، ہر کام درمیانہ روی سے کرتے ،[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم ہمیشہ خوش خبری سنانے والے تھے ، عِزت و احترام ومُحبت سے بات فرماتے تھے، کبھی کِسی کو بُرا نہ کہا ، کبھی کِسی کو بے پردگی ، راز افشائی نہیں کی ، کبھی حق بات کے عِلاوہ کچھ نہ فرمایا ، جب وہ کلام فرماتے تو اُن کی محفل میں موجود صحابہ رضی اللہ عنہم بالکل خاموش ہو جاتے اوراِس طرح ساکت ہو جاتے گویا کہ اُن کے سروں پر پرندے بیٹھے ہیں ، اور جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کلام مُبارک روکتے تو صحابہ میں سے جِسے ضرورت ہوتے بات کرتا ، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بات انتہائی جامع ہوتی ، اُس میں کوئی بے جا حرف تک بھی نہ ہوتا اور نہ ہی کِسی کمی کا احساس ہوتا ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی ہنسی دِلوں کو موہ لینے والی مُسکراہٹ ہوتی ، مُنہُ و حلق پھاڑ کر قہقہہ لگانا کبھی اُن صلی اللہ علیہ وسلم کو کبھی مُنہ یا حلق پھاڑ قہقہہ لگاتے ہوئے نہیں دیکھا ، سُنا گیا ،
    ::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی آنکھیں ، دُکھ کی حالت میں اشک بار وتِین لیکن کبھی ماتم و افسوس ، شکوہ و شکایت والے الفاظ اُن کی زُبان مُبارک پر نہیں آئے ،[/align:3r8eb6x0]
    [align=justify:3r8eb6x0]::: رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی ذات اللہ کے بعد ہر ایک لحاظ سے ، مُبارک ، مقدس، اور بہترین تھی ، نہ اُن صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سے پہلے کوئی ویسا تھااور نہ ہی اُن صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کے بعد کوئی ہونے والا ہے ،
    ::: اُن صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی صفات کی کوئی مثال نہ تھی نہ ہو سکتی ہے ، کہ اُن کی ہر ایک صِفت اپنی مکمل ترین اور خوبصورت ترین صورت میں تھی ، اللہ تعالیٰ نے اُن کو اِسی طرح تخلیق فرمایا تھا اور اِس کا اعلان فرمایا ( وَإِنِّکَ لعَلیٰ خُلقٌ عَظِیم ::: اور بے شک آپ عظیم اخلاق والے ہیں ) اور جِس اخلاق کی عظمت کی اللہ تعالیٰ گواہی دیں اُس سے بڑھ کے کوئی اخلاق نہیں ہو سکتا ،
    اللہ ہمیں تیرے محبوب رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کے اخلاق سے سجنے کی توفیق عطا فرما اور
    اللَّہُمَ صَلِّ عَلی مُحَمَّدٍ وَأَزوَاجِہِ وَذُرِّیَّتِہِ کما صَلَّیتَ علی آلِ إبراہیم وَبَارِک
    علی مُحَمَّدٍ وَأَزوَاجِہِ وَذُرِّیَّتِہِ کما بَارَکتَ علی آلِ إبراہیم إِنَّکَ حَمِیدٌ مَجِیدٌ
    [/align:3r8eb6x0]
     
  2. خوشی
    آف لائن

    خوشی ممبر

    شمولیت:
    ‏21 ستمبر 2008
    پیغامات:
    60,337
    موصول پسندیدگیاں:
    37
    جزاک اللہ

    بہت اچھا سلسلہ شروع کیا آپ نے اللہ اپ کو جزا دےآمین
     
  3. عادل سہیل
    آف لائن

    عادل سہیل ممبر

    شمولیت:
    ‏24 جولائی 2008
    پیغامات:
    410
    موصول پسندیدگیاں:
    10
    ملک کا جھنڈا:
    السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ ، اللہ آپ کو بھی بہترین اجر عطا فرمائے ، اور ہم سب کو مکمل ہمت و توفیق عطا فرمائے کہ ہم اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی سیرت مبارک کو اپنی کوتاہیوں سے بھری ہوئی زندگیوں پر لاگو کریں اور اس پر ہر لحاظ سے فخر کریں ، و السلام علیکم۔
     

اس صفحے کو مشتہر کریں