1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

دنیا میں مانتے ہیں کدورت ہے بڑھ گئی

'اردو شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از intelligent086, ‏22 دسمبر 2020۔

  1. intelligent086
    آف لائن

    intelligent086 ممبر

    شمولیت:
    ‏28 اپریل 2013
    پیغامات:
    6,400
    موصول پسندیدگیاں:
    776
    ملک کا جھنڈا:


    *** نفرت کیوں بڑھ گئی ***

    دنیا میں مانتے ہیں کدورت ہے بڑھ گئی
    سبقت کی ہر کسی میں، حسرت ہے بڑھ گئی

    نفرت کے بیج بونے کی بدعت ہے بڑھ گئی
    اپنوں کے درمیاں بھی عداوت ہے بڑھ گئی

    ایسا ہے دور آیا کہ شہرت کی ہے طلب
    کچھ صبر تو رہا نہیں عجلت ہے بڑھ گئی

    تفریق نیک و بد کی نہیں رکھتی نسلِ نو
    اب خیر، شر سے آگے یہ شہرت ہے بڑھ گئی

    جیسے وبا سے بچنے کو دھوتے ہو ہاتھ تم
    دل کو بھی صاف کر لو کہ نفرت ہے بڑھ گئی

    جیون میں نفرتیں ہی بڑھاتے ہو جا رہے
    نفرت سے دیکھنے کی بھی فطرت ہے بڑھ گئی

    کرتے ہیں اجتناب وہ ایسے کبھی کبھی
    لوگوں میں فاصلوں کی بھی ہمت ہے بڑھ گئی

    دل اپنا گر شفاف ہو بنتی ہے بات حق
    نفرت کو دل میں رکھنے کی عادت ہے بڑھ گئی
    اکرام الحق ملک

     

اس صفحے کو مشتہر کریں