1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

جنت سے جون ایلیا کا خط انور مقصود کے نام

'ادبی طنز و مزاح' میں موضوعات آغاز کردہ از نعیم, ‏22 نومبر 2016۔

  1. نعیم
    آف لائن

    نعیم مشیر

    شمولیت:
    ‏30 اگست 2006
    پیغامات:
    58,093
    موصول پسندیدگیاں:
    11,136
    ملک کا جھنڈا:
    ﺟﻨﺖ ﺳﮯ ﺟﻮﻥ ﺍﯾﻠﯿﺎ ﮐﺎ ﺧﻂ ﺍﻧﻮﺭ ﻣﻘﺼﻮﺩ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ
    ﺍﻧﻮ ﺟﺎﻧﯽ!
    ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺧﻂ ﻣﻼ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﭘﮍﮪ ﮐﺮﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﭼﻞ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔
    ﺷﺎﻋﺮﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﯾﺒﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺮ ﻣﺮ ﮐﺮ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺎ ﺑﯿﮍﺍ ﻏﺮﻕ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ۔
    ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﺎ ﮐﮩﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺭﮨﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ، ﻣﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﻟﮓ ﮐﻮﺍﺭﭨﺮ ﻋﻨﺎﯾﺖ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﮟ۔ﻣﺼﻄﻔﯽٰ ﺯﯾﺪﯼ ﻧﮯ ﯾﮧ ﮐﺎﻡ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﺍﭨﺮ ﻣﻞ ﮔﯿﺎ، ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮈﯾﺰﺍﺋﻦ ﻧﺜﺮﯼ ﻧﻈﻢ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺁﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﺎﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﯽ، ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﯿﮉ ﺭﻭﻡ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﻮﺍﺭﭨﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﮨﮯ، ﻣﯿﺮ ﺗﻘﯽ ﻣﯿﺮ ﮐﺎ ﮔﮭﺮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ 250 ﺍﺷﻌﺎﺭ ﺟﻦ ﻣﯿﮟ
    ﻭﺯﻥ ﮐﺎ ﻓﻘﺪﺍﻥ ﺗﮭﺎ، ﻧﮑﺎﻝ ﭼﮑﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﺮ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﮐﯽ ﮨﻤﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ۔
    ﮐُﻮﭼﮧ ﺷﻌﺮ ﻭ ﺳﺨﻦ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﮔﮭﺮﻏﺎﻟﺐ ﮐﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﯿﺮ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﺁﭖ ﻏﺎﻟﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﮮ ﺷﺎﻋﺮ ﮨﯿﮟ ﺁﭘﮑﺎ ﮔﮭﺮ ﺍﯾﻮﺍﻥِ ﻏﺎﻟﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﻣﯿﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ، ﺩﺭﺍﺻﻞ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﻏﺎﻟﺐ ﮐﮯ ﺳﺴﺮﺍﻝ ﮐﺎ ﮨﮯ، ﻏﺎﻟﺐ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻗﺒﻀﮧ ﺟﻤﺎ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ۔ﻣﯿﺮ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ، ﺳﺎﻝ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﻋﺮﺻﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺲ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﻧﺎﺻﺮ ﮐﺎﻇﻤﯽ ﺁﺋﮯ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺮ ﮐﮯ ﮐﺒﻮﺗﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ۔
    ﺍﯾﻮﺍﻥِ ﻏﺎﻟﺐ ﻣﻐﺮﺏ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﮭﻼ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺗﻢ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﻮ
    ﻣﺠﮭﮯ ﮐﯿﺎ ﺑُﺮﺍ ﺗﮭﺎ ﻣﺮﻧﺎ ،
    ﺍﮔﺮ ﺍﯾﮏ “ﺑﺎﺭ” ﮨﻮﺗﺎ۔
    ﯾﮩﺎﮞ ﺁﮐﺮ ﯾﮧ ﻣﺼﺮﻋﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﯾﺎ۔ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ “ﺑﺎﺭ” ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ۔
    ﺩﻭ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﻏﺎﻟﺐ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﻠﻮﺍﯾﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﻨﯿﺮ ﻧﯿﺎﺯﯼ ﻧﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺮﺍ ﭘﺘﮧ ﮐﺎﭦ ﺩﯾﺎ۔ ﺳﻮﺩﮦ ﮐﺎ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﻮﺍﺭﭨﺮ ﺳﮯ ﺳﻮ ﻗﺪﻡ ﮐﮯ ﻓﺎﺻﻠﮯ ﭘﺮ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﮔﯿﺎ، ﻣﺠﮭﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯽ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ، ﻣﯿﺎﮞ! ﺗﻢ ﻣﯿﺮﺍ ﺳﻮﺩﺍ ﻻ ﺩﯾﺎ ﮐﺮﻭ۔ ﻣﺎﻥ ﮔﯿﺎ۔ ﺳﻮﺩﮦ ﮐﺎ ﺳﻮﺩﺍ ﻻﻧﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﻋﺰﺕ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺟﺎﻧﯽ!ﺟﺐ ﺳﻮﺩﮦ ﺣﺴﺎﺏ ﻣﺎﻧﮕﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﮔﺰﺭ ﺟﺎﺗﯽ ۔ ﺟﻨﺖ ﮐﯽ ﻣﺮﻏﯽ ﺍﺗﻨﯽ ﻣﮩﻨﮕﯽ ﻟﮯ ﺁﺋﮯ، ﺣﻠﻮﮦ ﮐﯿﺎ ﻧﯿﺎﺯ ﻓﺘﺢ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﺳﮯ ﻟﮯ ﺁﺋﮯ؟، ﺗﻤﮩﯿﮟ ﭨﯿﻨﮉﻭﮞ ﮐﯽ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ؟ الغرض ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﭘﮧ ﺍﻋﺘﺮﺍﺽ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺷﮏ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺩﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ڈنڈی مار کر ﭘﯿﺴﮯ ﺭﮐﮫ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﭼﺎﺭ ﺭﻭﺯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﮐﮩﮧ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺭﺩﻭ ﺍﺩﺏ ﮐﯽ
    ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﺎ ﻭﺍﺣﺪ ﺷﺎﻋﺮ ﮨﻮﮞ ﺟﻮ ﺍﺳﯽ ﻻﮐھ ﮐﯿﺶ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺁﯾﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﭘﮑﮯ ﭨﯿﻨﮉﻭﮞ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﮐﻤﺎﺅﮞ ﮔﺎ۔ﺁﭘﮑﻮ ﺑﮍﺍ ﺷﺎﻋﺮ ﻣﺎﻧﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮﺍ، ﺁﭘﮑﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ، ﺁﭘﮑﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺯﻣﯿﻦ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ۔ ﺁﺋﯿﻨﺪﮦ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﻮﺩﺍ ﻓﯿﺾ ﺍﺣﻤﺪ ﻓﯿﺾ ﺳﮯ ﻣﻨﮕﻮﺍﯾﺎ ﮐﯿﺠﯿﺌﮯ، ﺗﺎﮐﮧ ﺁﭘﮑﺎ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺑﮩﺖ ﻗﺮﺽ ﺗﻮ ﭼﮑﺎﺋﯿﮟ۔ ﻣﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﻨﮕﻦ ﺗﮭﺎ، ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺗھﻤﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ:

    ﺑﯿﻨﮕﻦ ﮐﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﻟﯿﻨﺎ ﮐﮧ ﭼﻼ ﻣﯿﮟ

    ﺍﯾﮏ ﺷﮩﺪ ﮐﯽ ﻧﮩﺮ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﺍﺣﻤﺪ ﻓﺮﺍﺯ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮﺋﯽ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﻌﺪ ﺁﺋﮯ ﮨﻮ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺑﮍﺍ ﺷﺎﻋﺮ ﻣﺖ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ، ﻓﺮﺍﺯ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ، ﻣﺸﺎﻋﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ، ﺍﻣﺮﺍﺅ ﺟﺎﻥ ﮐﮩﺎﮞ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ؟ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ، ﺭﺳﻮﺍ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﮯ ﮔﮭﺮ ﭼﻠﮯ ﺟﺎﺅ، ﻣﺠﮭﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐہ ﻭﮦ ﮐﮩﺎﮞ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ۔
    ﺟﺎﻧﯽ! ﺍﯾﮏ ﺣُﻮﺭ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮨﺮ ﺟﻤﻌﺮﺍﺕ ﮐﯽ ﺷﺎﻡ ﻣﯿﺮﮮ ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﺁﻟﻮ ﮐﺎ ﺑﮭﺮﺗﺎ ﭘﮑﺎ ﮐﮯ ﻟﮯ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﺷﻮﻕ ﮨﮯ، ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﻟﮑﮭﺘﯽ ﮨﮯ، ﻣﮕﺮ ﺟﺎﻧﯽ! ﺟﺘﻨﯽ ﺩﯾﺮ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ ﺻﺮﻑ ﻣﺸﺘﺎﻕ ﺍﺣﻤﺪ ﯾﻮﺳﻔﯽ ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﻣﺸﺘﺎﻕ ﺍﺣﻤﺪ ﯾﻮﺳﻔﯽ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﮐﺎ ﺷﻮﻕ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ، ﺧﺪﺍ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻟﻤﺒﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺩﮮ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ، ﺍﮔﺮ ﻣﻠﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺟﺎﺅ، ﺟﺲ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﻮ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﻮ، ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮈﮬﻮﻧﮉ ﻧﮑﺎﻟﯿﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮑﻨﮏ ﻣﻨﺎﻧﮯ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﻟﮯ ﺟﺎﺋﯿﻨﮕﮯ۔
    ﺍﺑﻦِ ﺍﻧﺸﺎﺀ، ﺳﯿﺪ ﻣﺤﻤﺪ ﺟﻌﻔﺮﯼ، ﺩﻻﻭﺭ ﻓﮕﺎﺭ، ﻓﺮﯾﺪ ﺟﺒﺎﻝ ﭘﻮﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﺿﻤﯿﺮ ﺟﻌﻔﺮﯼ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﮐﻮﺍﺭﭨﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ 9 ﻧﻮﻣﺒﺮ ﮐﻮ ﺍﻗﺒﺎﻝ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮐﮯ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﻧﺮ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ﺍﻗﺒﺎﻝ، ﻓﯿﺾ، ﻗﺎﺳﻤﯽ، ﺻﻮﻓﯽ ﺗﺒﺴﻢ، ﻓﺮﺍﺯ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﻭﻗﺖِ ﻣﻘﺮﺭﮦ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﺌﮯ۔ﮐﻮﺍﺭﭨﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮ ﭘﺮﭼﯽ ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ: “ﮨﻢ ﻟﻮﮒ ﺟﮩﻨﻢ ﮐﯽ ﺑﮭﯿﻨﺲ ﮐﮯ ﭘﺎﺋﮯ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ، ﮈﻧﺮ ﺍﮔﻠﮯ ﺳﺎﻝ 9 ﻧﻮﻣﺒﺮ ﮐﻮ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ۔” ﺍﮔﻠﮯ ﺩﻥ ﺍﻗﺒﺎﻝ ﻧﮯ ﭘﺮﯾﺲ ﮐﺎﻧﻔﺮﻧﺲ ﮐﯽ
    ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﯽ ﺍﺩﺑﯽ ﻣﺤﻔﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﮐﺖ ﭘﺮ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﻟﮕﺎ ﺩﯼ۔ ﺗﻢ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﻂ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﻔﻖ ﺧﻮﺍﺟﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﮐﯿﻠﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﺗﮯ ۔ ﻣﮕﺮ ﺣﯿﺮﺕ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﺟﺎﻧﯽ!ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺍﺭﺩﻭ ﺍﻭﺭ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﮐﮯ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﺷﺎﻋﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺁﺗﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﺁﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﺟﻠﺪﯼ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻭﮨﺎﮞ ﺭﮨﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﮭﯽ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﮨﮯ۔ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﺎﮞ ﺁﮔﺌﮯ ﭘﮭﺮ ﻭﮨﺎﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﻥ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ؟؟؟

    ﺟﯿﺘﮯ ﺭﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﭘﺮ ﻣﺮﺗﮯ ﺭﮨﻮ،ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﭘﺮ ﻣﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺟﺎﻧﯽ! ﺟﯿﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻼ.

    ۔۔۔۔تحریر: ﺍﻧﻮﺭﻣﻘﺼﻮﺩ ۔۔۔۔
     
    تیسرا انسان اور ھارون رشید .نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. ھارون رشید
    آف لائن

    ھارون رشید برادر سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏5 اکتوبر 2006
    پیغامات:
    131,457
    موصول پسندیدگیاں:
    16,828
    ملک کا جھنڈا:
    np
     
    نعیم اور حنا شیخ .نے اسے پسند کیا ہے۔
  3. حنا شیخ
    آف لائن

    حنا شیخ ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جولائی 2016
    پیغامات:
    2,709
    موصول پسندیدگیاں:
    1,568
    ملک کا جھنڈا:
    ﺍﻧﻮﺭﻣﻘﺼﻮﺩ کی تحریر لاجواب ہوتی ہے پڑھنے میں مزہ آجاتا ہے ،:shandar:
    ہم بھی سونے جارہے ہے ، دیکھتے ہیں ،، ہمارے پاس کس کا خط آتا ہے :khudahafiz:
     
    نعیم اور ھارون رشید .نے اسے پسند کیا ہے۔
  4. حنا شیخ
    آف لائن

    حنا شیخ ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جولائی 2016
    پیغامات:
    2,709
    موصول پسندیدگیاں:
    1,568
    ملک کا جھنڈا:
    ہاہاہا ،، ہمارے خواب میں مرزا غالب آئے اتنی گاڑھی اردو بول رہے تھے کے سردیوں میں آم کا مزہ آگیا ،،:044:
     
    نعیم اور ھارون رشید .نے اسے پسند کیا ہے۔
  5. ھارون رشید
    آف لائن

    ھارون رشید برادر سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏5 اکتوبر 2006
    پیغامات:
    131,457
    موصول پسندیدگیاں:
    16,828
    ملک کا جھنڈا:
    صبح اٹھ کر سر میں درد تو ہوا ہوگا
     
    نعیم نے اسے پسند کیا ہے۔
  6. حنا شیخ
    آف لائن

    حنا شیخ ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جولائی 2016
    پیغامات:
    2,709
    موصول پسندیدگیاں:
    1,568
    ملک کا جھنڈا:
    ہاہاہا ،، پاپا خوش تھے کیونکے ہمیں امی دو نظر آ رہی تھیں :84:
     
    نعیم اور ھارون رشید .نے اسے پسند کیا ہے۔
  7. ھارون رشید
    آف لائن

    ھارون رشید برادر سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏5 اکتوبر 2006
    پیغامات:
    131,457
    موصول پسندیدگیاں:
    16,828
    ملک کا جھنڈا:
    یہ خوشی تو ابو کی بنتی ہے
     
    نعیم اور حنا شیخ .نے اسے پسند کیا ہے۔
  8. حنا شیخ
    آف لائن

    حنا شیخ ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جولائی 2016
    پیغامات:
    2,709
    موصول پسندیدگیاں:
    1,568
    ملک کا جھنڈا:
    ہاہاہا ،،
     
    نعیم اور ھارون رشید .نے اسے پسند کیا ہے۔
  9. غلام قادر چوہدری
    آف لائن

    غلام قادر چوہدری ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2016
    پیغامات:
    19
    موصول پسندیدگیاں:
    14
    ملک کا جھنڈا:
    محترم جنت میں تو بونگیاں مارنے سے پرہیز کریں۔
     
  10. حنا شیخ
    آف لائن

    حنا شیخ ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جولائی 2016
    پیغامات:
    2,709
    موصول پسندیدگیاں:
    1,568
    ملک کا جھنڈا:
    سنا ہے ﺟﻮﻥ ﺍﯾﻠﯿﺎ ہر ٹائم ٹون رہتے تھے ،​
     
    ھارون رشید نے اسے پسند کیا ہے۔
  11. غلام قادر چوہدری
    آف لائن

    غلام قادر چوہدری ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2016
    پیغامات:
    19
    موصول پسندیدگیاں:
    14
    ملک کا جھنڈا:
    میرا خیال ہے کہ کسی پر بہتان تراشی کرنے سے اجتناب کرنا چاہئے۔ دلوں کے بھید اللہ خوب جانتا ہے۔
     
    ھارون رشید نے اسے پسند کیا ہے۔
  12. حنا شیخ
    آف لائن

    حنا شیخ ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جولائی 2016
    پیغامات:
    2,709
    موصول پسندیدگیاں:
    1,568
    ملک کا جھنڈا:
    یہ دل کا بھید نہیں ہے شراب دل کے اندر نہیں پی جاتی ،، یہ وہ عمل ہے جو نظر آتا ہے ،، ١٩٨٠ء کی دہائی کے وسط ‏میں ان کی طلاق ہو گئی۔ اس کے بعد تنہائی کے باعث جون کی ‏حالت ابتر ہو گئی۔ وہ پژمردہ ہو گئے اور شراب نوشی شروع کر ‏دی۔ یہ حقیقت ہے ،،
    جون ایلیا (14 دسمبر، 1931ء – 8 نومبر، 2002ء) ‏برصغیرمیں نمایاں حیثیت رکھنے والےشاعر، فلسفی، سوانح نگار ‏اور عالم تھے۔ وہ اپنے انوکھے انداز تحریر کی وجہ سے سراہے جاتے ‏تھے۔ وہ معروف صحافی رئیس امروہوی اور فلسفی سید محمد تقی کے ‏بھائی، اور مشہور کالم نگار زاہدہ حنا کے سابق خاوند تھے۔ جون ایلیا کوعربی، انگریزی، فارسی، سنسکرت ‏اورعبرانی میں اعلی مہارت ‏حاصل تھی۔
     
    Last edited: ‏29 نومبر 2016
    غلام قادر چوہدری اور ھارون رشید .نے اسے پسند کیا ہے۔
  13. غلام قادر چوہدری
    آف لائن

    غلام قادر چوہدری ممبر

    شمولیت:
    ‏28 نومبر 2016
    پیغامات:
    19
    موصول پسندیدگیاں:
    14
    ملک کا جھنڈا:
    بہت شکریہ۔ یہ قیمتی معلومات شئیر کرنے کا۔ جون ایلیا کے ادبی مقام سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔ اور ان کی شراب نوشی بھی محرم راز خوب جانتے ہیں۔ میرا مطلب تھا کہ یہ ان کا اور ان کے پروردگار کا معاملہ ہے۔ ہمیں اس میں مداخلت نہیں کرنی چاہئے اور اس کو زیر بحث نہیں لانا چاہئے۔ لیکن یہ میرا ذاتی خیال ہے۔ سب ممبران کو آذادی رائے کا حق حاصل ہے۔
     
  14. حنا شیخ
    آف لائن

    حنا شیخ ممبر

    شمولیت:
    ‏21 جولائی 2016
    پیغامات:
    2,709
    موصول پسندیدگیاں:
    1,568
    ملک کا جھنڈا:
    شکریہ ،، ہماری غلطی کی نشاندھی کرنا ،،بلکل آپ نے درست کہا ہے ،، الله ان کو معاف فرمائے آمین ،،​
     

اس صفحے کو مشتہر کریں