1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

تم دن کے وقت شام کا منظر نہ دیکھنا

'اردو شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از intelligent086, ‏26 اکتوبر 2019۔

  1. intelligent086
    آف لائن

    intelligent086 ممبر

    شمولیت:
    ‏28 اپریل 2013
    پیغامات:
    1,722
    موصول پسندیدگیاں:
    206
    ملک کا جھنڈا:
    تم دن کے وقت شام کا منظر نہ دیکھنا
    میرا اداسیوں کا بنا گھر نہ دیکھنا
    پھر روشنی ہی بعد میں پھیکی دکھائی دے
    چہرہ کسی کا ایسا منور نہ دیکھنا
    میدانِ تشنگی کی یہ آنکھیں امام ہیں
    ہے دیکھنے سے واقعی بہتر نہ دیکھنا
    ڈر جاؤ گے خلائے بے معنی کے خوف سے
    باہر سے جھانک کر کبھی اندر نہ دیکھنا
    اپنی ہی دُھن میں ٹھوکریں کھاتے چلے گئے
    تھا وصفِ خاص راہ کا پتھر نہ دیکھنا
    آیا کوئی سفیرِ محبت چلا گیا
    اب مدتوں ہم ایسا سخن ور نہ دیکھنا
    آفتاب اقبال شمیم​
     

اس صفحے کو مشتہر کریں