1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

بند کمرہ

'کالم اور تبصرے' میں موضوعات آغاز کردہ از زنیرہ عقیل, ‏13 جولائی 2018۔

  1. زنیرہ عقیل
    آف لائن

    زنیرہ عقیل ممبر

    شمولیت:
    ‏27 ستمبر 2017
    پیغامات:
    19,290
    موصول پسندیدگیاں:
    9,144
    ملک کا جھنڈا:
    گھر کی بڑی بڑی فصیلوں میں ہوائیں بھی باپردہ ہو کر داخل ہوتیں۔ گھر کی عورتوں کی حالت کسی قلعہ میں محصور باندیوں کی سی تھی۔ جن کا باہر جانا ،گھومنا تو دور کی بات دروازے سے جھانکنا بھی بغاوت کے زمرے میں آتا تھا۔ ساون کی گھٹائیں دل کی بنجر زمین کو اور ویران کر جاتیں، ہواؤں کا شور سینے میں دفن چنگاریوں کو اور بڑھکا جاتا۔ کل ایسے ہی ہوا کے دوش پر ایک سر سبز جھنڈی آنگن میں آ گری۔ میں نے دوڑ کر اس جھنڈی کو پکڑا اور فرطِ جذبات میں اپنے آنچل جو گھر کی دیواروں میں بھی سر پر خود کی طرح جما رہتا تھا سے صاف کیا اور اٹھا کر اندر کی طرف بھاگی۔ قائداعظم کی تصویر کے ساتھ ” جشن آزادی مبارک” کے بڑے بڑے حروف کنندہ تھے۔ جنہیں پڑھ کر چشمِ تصور میں وہ تمام بہاریں ذہن کی سکرین پر ابھرنے لگیں

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    پرندوں کی مسلسل چہچہاہٹ اور ٹھنڈی ہوا کے نم جھونکے مجھے کھڑکی سے باہر جھکانے پر مجبور کررہے تھے- مگر کھڑکی سماج کی دیواروں کی طرح میری قدو قامت سے بہت ہی بلند و بالا تھیں ۔ مجھے باہر کا نظارہ دیکھنے کے لئے کسی سہارے کی ضرورت تھی جس پر سوار ہو کر میں اس کھڑکی تک پہنچ کر زندگی کے کچھ پَل چُن سکوں۔ مگر انسانی سہارے تو اس پتھرستان میں ناپید تھے مگر کمرے میں پڑا بے جان میز مخاطب ہوا،

    ننھی پری تم مجھ پر سوار ہو سکتی ہو۔ ادھر آو مجھےکھینچ کر وہاں تک لے جاؤ۔ میں بے جان ضرور ہوں ،حرکت نہیں کر سکتا ،مگر بے حس نہیں۔

    خوشی سے میرا چہرا کھل اٹھا۔ بے ساختہ ہاتھوں نے تالی بجا دی مگر کسی کے آنے کے ڈر سے فوری خود کو سنبھالا، میز کو کھینچ کر کھڑکی کے پاس کیا اور اس پر چڑھ کر اپنے چہرے کو دوپٹے سے ڈھانپے لگی مبادا کہ کسی اجنبی کی نظر نہ پڑے۔ اپنی ٹھوڑی کو جونہی کھڑکی کی دہلیز پر رکھا تو نم ہوا کا جھونکا رخساروں سے ٹکرا کر بولا۔

    او! ہرنی کی آنکھوں والی چہرہ کیوں چھپا رکھا ہے؟

    میں سہمے سہمے بولی کہ کسی اجنبی کی نظر نہ پڑ جاے۔ تب ہلکی سے پھوار آگے بڑھی اور آنکھوں کو چھو کر مخاطب ہوئی۔

    تمہاری آنکھیں اتنی اداس کیوں ہیں ؟

    دو آنسو بہتے ہوئے میرے رخساروں پر ڈھلکنے لگے، تب ہوا نے آگے بڑھ کر ان آنسوؤں کو تھامتے ہوئے کہا اے معصوم گڑیا رو مت۔

    اتنے میں جھومتا ہوا بادل کا اک ٹکڑا آن پہنچا اور ہوا کی مدد سے آنسو اٹھا کر ہنستا ہوا آسمان کی طرف بڑھتے ہوے کہنے لگا ابھی دیکھنا۔

    بجلی کی اک کوند چمکی، کچھ شور ہوا۔ آسمان سے ہلکا ہلکا مینہ برسنے لگا۔

    میں نے اپنے چہرے کو تھوڑا سا باہر نکلا تو ننھی ننھی بوندیں میرے گالوں پر ٹہر کر بولیں کیسی ہو پیاری ۔۔۔۔؟

    میں شرما کر ہنس دی اور بولی بہت خوش۔

    اتنے میں ایک اڑتا ہوا پھول میرے آنچل سے ٹکرایا اور کہنے لگا مجھے اپنے بالوں میں سجا لو رانی۔ میں نے وہ پھول اپنے آنچل سے بالوں میں سجایا۔ میں پُرمسرت نظارے سے بہت مسرور ہورہی تھی کہ اچانک گھر میں ماموں کی آواز میرے کانوں سے ٹکرائی۔

    دل کی بستی مغموم ہو کر آنکھوں سے بہنے لگی۔۔۔ اک فاختہ میری دہلیز پر آ کر بیٹھی اور اپنی آواز میں گنگنانے لگی ۔۔۔

    آؤ سناوں تمہیں اک کہانی

    قلعے میں محصور تھی اک رانی،

    دل کرتا تھا اس کا کہ اڑ کر چھو لو،

    میں آسمان سے برستا پانی

    مگر سماج کی دیواروں میں وہ قید تھی

    کر نہ سکتی تھی اپنی مَن مانی

    تتلیوں کے رنگ چرانا چاہتی تھی،

    دنیا سے بیگانی تھی وہ دیوانی

    ہواؤں میں اڑنا چاہتی تھی

    بس دل کر بیٹھا یہ نادانی،

    مگر ایسا وقت بھی آئے گا

    کہ بند کمرے سے دیکھے گی دنیا فانی۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    قدموں کی آہٹ قریب ہوئی تو میں ٹھٹک کر رہ گئی جلدی سے میز سے اتری اور اس کو کھینچ کر اس کی جگہ پر رکھ دیا۔ ماموں کمرے میں داخل ہوئے تو چہرے کا رنگ اڑا ہوا تھا ۔ انہوں نے اپنی جہاں دیدہ نگاہوں سے سارے کمرے کا جائزہ لیا۔ نظریں اوپر اٹھی تو کیا دیکھا کہ کھڑکی کے پٹ کھلے ہوئے ہیں۔ انگارے برساتی آنکھوں سے گھورتے ہوئے، ایک زناٹے دار تھپڑ منہ پر رسید کرتے ہوئے بولے۔

    بے شرم، بے غیرت لڑکی باہر کیا جھانک رہی تھی۔۔۔؟

    کسے دیکھ رہی تھی؟ تجھے پتہ نہیں ہم پختون قوم ہیں۔ جن کی غیرت کی مثالیں دنیا دیتی ہے اور یہ جو تو ننگا منہ لیے کھڑکی سے دیکھ رہی تھی بھول گئی کیا؟

    پردہ عورت کا گہنا ہوتا ہے تم نے تو خاندان کی عزت اور ناموس کو پاوں تلے روند دیا۔

    آگے بڑھ کر زور سے کھڑکی کے پٹ کو بند کیا۔

    بیٹھی فاختہ پھُر سے اڑ گئی۔

    میں ڈبڈبائی آنکھوں سے دیوار سے گھیسٹتی ہوئی زمین پر بیٹھ گئی۔

    میز کی بھرائی ہوئی آواز نکلی مجھے معاف کرنا ننھی پری میری وجہ سے تمہیں بہت سہنا پڑا۔

    پھیکی سی مسکان ہونٹوں پر نمودار ہوئی۔ لب ہلے، نہیں کچھ نہیں۔

    آواز نے دم توڑ دیا۔

    آو بند کمرے میں دنیا بسائیں۔ میز نے آخری جملہ کہا۔۔۔

    افروز زئی

    [​IMG]
     
  2. ناصر إقبال
    آف لائن

    ناصر إقبال ممبر

    شمولیت:
    ‏6 دسمبر 2017
    پیغامات:
    1,670
    موصول پسندیدگیاں:
    346
    ملک کا جھنڈا:
    لوگ ہمیشہ کہتے ہیں :"اندرونی خوبصورتی اہم ہے، بیرونی نہیں۔ " اچھا یہ درست نہیں۔ اگر ایسا ہوتا، پھولوں کو شہد کی مکھیوں کو متوجہ کرنے کے لیے کیوں کر اتنی توانائی صرف کرنی پڑتی اور بارش کے قطرے کیوں کر سورج کے مقابل آ جانے پر قوس قزح کی صورت اختیار کر لیتے؟ کیوں کہ قدرت خوبصورتی چاہتی ہے اور تب ہی مطمئن ہوتی ہے جب خوبصورتی سر بلند ہو جائے۔ ہماری اندرونی خوبصورتی بھی دکھائی دیتی ہے اور اس کا ظہور اس روشنی کی صورت ہوتا ہے جو ہماری آنکھوں سی جھلکتی ہے۔ اس سے فرق نہیں پڑتا اگر کسی نے معمولی لباس پہنا ہو یا ہمارے نفاست کے تصور سے مطابقت نہ رکھتا ہو یا وہ خود دوسروں کو متاثر کرنے میں دلچسپی نہ رکھتا ہو
     

اس صفحے کو مشتہر کریں