1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

الٰہی تیری چوکھٹ پر بھکاری بن کے آیا ہوں

'عظیم بندگانِ الہی' میں موضوعات آغاز کردہ از جنید آذر, ‏21 دسمبر 2016۔

  1. جنید آذر
    آف لائن

    جنید آذر ممبر

    شمولیت:
    ‏9 فروری 2016
    پیغامات:
    17
    موصول پسندیدگیاں:
    22
    ملک کا جھنڈا:
    الٰہی تیری چوکھٹ پر بھکاری بن کے آیا ہوں
    سراپا فقر ہوں عجزوندامت ساتھ لایاہوں

    بھکاری وہ کہ جس کے پاس جھولی ہے نہ پیالہ ہے
    بھکاری وہ جسے حرص و ہوس نے مارڈالاہے

    متاع دین و دانش نفس کے ہاتھوں سے لٹوا کر
    سکونِ قلب کی دولت ہوس کی بھینٹ چڑھوا کر

    لٹا کر ساری پونجی غفلت و نسیاں کی دلدل میں
    سہارا لینے آیا ہوں ترے کعبے کے آنچل میں

    گناہوں کی لپٹ سے کائناتِ قلب افسردہ
    ارادے مضمحل،ہمت شکستہ،حوصلے مردہ

    کہاں سے لاؤں طاقت دل کی سچی ترجمانی کی
    کہ کس جھنجھال میں گزری ہیں گھڑیاں زندگانی کی

    خلاصہ یہ کہ بس جل بُھن کے اپنی روسیاہی سے
    سراپا فقر بن کر اپنی حالت کی تباہی سے

    ترے دربار میں لایا ہوں اب اپنی زبوں حالی
    تری چوکھٹ کے لائق ہر عمل سے ہاتھ ہیں خالی

    یہ تیرا گھر ہے تیرے مہر کا دربار ہے مولا
    سراپا نور ہے اک مَہبطِ انوار ہے مولا

    تری چوکھٹ کے جو آداب ہیں میں ان سے خالی ہوں
    نہیں جس کو سلیقہ مانگنے کا وہ سوالی ہوں

    زباں غرقِ ندامت دل کی ناقص ترجمانی پر
    خدایا رحم میرے اس زبانِ بے زبانی پر

    یہ آنکھیں خشک ہیں یارب انہیں رونا نہیں آتا
    سلگتے داغ ہیں دل میں جنہیں دھونا نہیں آتا

    الٰہی تیری چوکھت پر بھکاری بن کے آیا ہوں
    سراپا فقر ہوں عجزوندامت ساتھ لایاہوں

    www.facebook.com/izlamandpakistan

    new-samll-logo.jpg
    پاکستانی55 نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں