1. اس فورم پر جواب بھیجنے کے لیے آپ کا صارف بننا ضروری ہے۔ اگر آپ ہماری اردو کے صارف ہیں تو لاگ ان کریں۔

اعرابی نے خطرناک جانور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے سامنے پھینک دیا اور کہا

'سیرتِ سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم' میں موضوعات آغاز کردہ از کنعان, ‏25 جولائی 2018۔

  1. کنعان
    آف لائن

    کنعان ممبر

    شمولیت:
    ‏25 جولائی 2009
    پیغامات:
    729
    موصول پسندیدگیاں:
    977
    ملک کا جھنڈا:
    اعرابی نے خطرناک جانور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے سامنے پھینک دیا اور کہا ’’اگر یہ گوہ آپ پر ایمان لے آئے تو میں بھی ایمان لے آؤں گا‘‘ یک ہزار غیر مسلموں کے ایمان قبول کرنے کا یہ معجزہ پڑھ کر آپ بھی اپنے دلوں کو نور ایمان سے منوّر کر سکتے ہیں

    کیا شان ہے ہمارے نبیﷺ کی۔ دنیا بھر کی مخلوقات بھی آپ ﷺ کی بارگاہ میں پہنچ کر باادب سلام کرتی ہیں اور اللہ کے نبیﷺ کے حضوراپنی گزراشات پیش کرتی ہیں۔ امام طبرانیؒ ، ابو نعیمؒ اور امام بیہقیؒ نے ایسی سینکروں احادیث پیش کی ہیں جو مظاہر قدرت کا اظہار کرتی ہیں۔ جانوروں کی اللہ کے نبیﷺ سے محبت و عقیدت کی غیر معمولی عکاسی کرتی ہیں۔

    احادیث میں حضرت عمر فاروقؓ سے رسول خداﷺ کا ایک ایسا معجزہ بھی بیان ہوا ہے جب ایک شخص نے اسلام قبول کرنے سے پہلے اسکے جانور ’’گوہ‘‘
    (سانڈا، چھپکلی اور مگرمچھ جیسا جانور) کے ایمان لانے کو مشروط کر دیا تھا۔ اللہ کے حبیب ﷺ نے اس سے کلام کیا تو اس واقعہ سے متاثر ہو ایک طاقتور قبیلے کے ایک ہزار بہادر جوانوں نے اسلام قبول کر لیا تھا۔ یہ حدیث یوں بیاں کی گئی ہے۔

    ’’حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک دفعہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم اپنے صحابہؓ کی محفل میں تشریف فرما تھے کہ بنو سلیم کا ایک اعرابی آیا۔ اس نے ایک گوہ کا شکار کیا تھا اور اسے اپنی آستین میں چھپا کر اپنی قیام گاہ کی طرف لے جا رہا تھا۔


    اعرابی نے جب صحابہ کرامؓ کی جماعت کو دیکھا تو اس نے کہا ’’یہ لوگ کس کے گرد جمع ہیں؟‘‘
    لوگوں نے کہا ’’ اس کے گرد جس نے نبوت کا دعویٰ کیا ہے‘‘
    وہ لوگوں کے درمیان سے گزرتا ہوا حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے سامنے آ کھڑا ہوا اور کہنے لگا ’’اے محمد ( صلی اللہ علیہ والہ وسلم )! کسی عورت کا بیٹا تم سے بڑھ کر جھوٹا اور مجھے ناپسند نہیں ہو گا۔ اگر مجھے اس بات کا ڈر نہ ہوتا کہ میری قوم مجھے جلد باز کہے گی تو تمہیں قتل کرنے میں جلدی کرتا اور تمہارے قتل سے تمام لوگوں کو خوش کرتا‘‘

    حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے حضور صلی اللہ علیہ والہ وسلم سے عرض کیا ’’یا رسول اللہ! مجھے اجازت دیں کہ میں اس (گستاخ) کو قتل کر دوں‘‘


    آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا ’’اے عمر! کیا تم جانتے نہیں کہ حلیم و بردبار آدمی ہی نبوت کے لائق ہوتا ہے‘‘
    وہ اعرابی حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی طرف متوجہ ہوا اور کہنے لگا ’’مجھے لات و عزیٰ کی قسم! میں تم پر ایمان نہیں رکھتا‘‘
    حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے اس سے پوچھا’’ اے اعرابی! کس چیز نے تمہیں اس بات پر ابھارا ہے کہ تم میری مجلس کی تکریم کو بالائے طاق رکھ کر ناحق گفتگو کرو؟‘‘


    اس نے بے ادبی سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم سے کہا ’’کیا آپ بھی میرے ساتھ ایسے ہی گفتگو کریں گے؟‘‘
    اور کہا ’’مجھے لات و عزیٰ کی قسم میں آپ پر اس وقت تک ایمان نہیں لاؤں گا جب تک یہ گوہ آپ پر ایمان نہیں لاتی‘‘ اس کے ساتھ ہی اس نے اپنی آستین سے گوہ نکال کر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے سامنے پھینک دی اور کہا ’’اگر یہ گوہ آپ پر ایمان لے آئے تو میں بھی ایمان لے آؤں گا‘‘

    پس حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا ’’اے گوہ کلام کر‘‘
    پس گوہ نے ایسی واضح اور فصیح عربی میں کلام کیا کہ جسے تمام لوگوں نے سمجھا۔
    اس گوہ نے عرض کیا ’’اے دو جہانوں کے ربّ کے رسولﷺ میں آپ کی خدمت میں حاضر ہوں‘‘
    حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے اس سے پوچھا’’ تم کس کی عبادت کرتی ہو؟ ‘‘
    اس نے عرض کیا’’ میں اس کی عبادت کرتی ہوں جس کا عرش آسمانوں میں ہے، زمین پر جس کی حکمرانی ہے اور سمندر پر جس کا قبضہ ہے، جنت میں جس کی رحمت ہے اور دوزخ میں جس کا عذاب ہے‘‘
    آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے پھر پوچھا’’ اے گوہ! میں کون ہوں؟‘‘
    اس نے عرض کیا ’’آپ دو جہانوں کے ربّ کے رسول اور خاتم الانبیاء ہیں۔ جس نے آپ کی تصدیق کی وہ فلاح پا گیا اور جس نے آپ کی تکذیب کی وہ ذلیل و خوار ہو گیا‘‘

    اعرابی یہ دیکھ کر بول اٹھا ’’میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور بے شک آپ اللہ کے سچے رسولﷺ ہیں۔ جب میں آپ کے پاس آیا تھا تو روئے زمین پر آپ سے بڑھ کر کوئی شخص مجھے ناپسند نہ تھا اور بخدا اس وقت آپ مجھے اپنی جان اور اولاد سے بھی بڑھ کر محبوب ہیں۔ میرے جسم کا ہر بال اور ہر رونگٹا، میرا عیاں و نہاں اور میرا ظاہر و باطن آپ پر ایمان لا چکا ہے‘‘

    حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا’’ اس اللہ کے لئے ہی ہر تعریف ہے جس نے تجھے اس دین کی طرف ہدایت دی جو ہمیشہ غالب رہے گا اور کبھی مغلوب نہیں ہو گا۔ اس دین کو اللہ تعالیٰ صرف نماز کے ساتھ قبول کرتا ہے اور نماز قرآن پڑھنے سے ہی قبول ہوتی ہے‘‘

    پھر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے اسے سورہ فاتحہ اور سورہ اخلاص سکھائیں۔
    وہ عرض گزار ہوا ’’یا رسول اللہ! میں نے بسیط اور رجز (عربی شاعری کے سولہ اوزان میں سے دو وزن) میں اس سے حسین کلام کبھی نہیں سنا‘‘

    حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے اس سے فرمایا ’’یہ رب دوجہاں کا کلام ہے، شاعری نہیں۔ جب تم نے سورہ اخلاص کو ایک مرتبہ پڑھ لیا تو گویا تم نے ایک تہائی قرآن پڑھنے کا ثواب پا لیا اور اگر اسے دو مرتبہ پڑھا تو سمجھو کہ تم نے دو تہائی قرآن پڑھنے کا ثواب پا لیا۔ اور تم نے اسے تین مرتبہ پڑھ لیا تو گویا تم نے پورے قرآن کا ثواب پا لیا‘‘

    پھر اعرابی نے کہا ’’ہمارا معبود تمام معبودوں سے بہتر ہے جو تھوڑے عمل کو قبول فرماتا ہے اور بے حد و حساب عطا فرماتا ہے‘‘
    پھر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے صحابہ کرام سے فرمایا ’’اس اعرابی کی کچھ مدد کرو‘‘

    صحابہ کرامؓ نے اسے اتنا دیا کہ اسے
    (کثرتِ مال کی وجہ سے) بے نیاز کر دیا۔
    حضرت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ کھڑے ہوئے اور عرض کیا ’’یا رسول اللہ! میں انہیں ایک اونٹنی دے کر قربِ الٰہی حاصل کرنا چاہتا ہوں۔ یہ فارسی النسل اونٹنی سے چھوٹی اور عربی النسل اونٹوں سے تھوڑی بڑی ہے اور یہ دس ماہ کی حاملہ ہے‘‘

    حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا ’’تم جو اونٹنی اسے دوگے اس کی تم نے صفات بیان کردی ہیں، اب میں تمہارے لئے اس اونٹنی کی صفات بیان کرتا ہوں جو اللہ تعالیٰ تمہیں اس کی جزاء میں عطا فرمائے گا؟‘‘

    انہوں نے عرض کیا’’ ہاں ۔ ضرور بیان فرمائیے‘‘۔

    آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا’’ تمہیں سوراخ دار موتیوں کی اونٹنی ملے گی جس کے پاؤں سبز زمرد کے ہوں گے اور جس کی گردن زرد زبرجد کی ہو گی اور اس پر کجاوہ ہو گا جو کہ کریب اور ریشم کا بنا ہو گا۔ وہ پل صراط سے تمہیں بجلی کے کوندے کی طرح گزار دے گی‘‘

    پھر وہ اعرابی حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی بارگاہ سے باہر نکلا۔ راستے میں اسے ایک ہزار اعرابی ملے جو ہزار سواریوں پر سوار تھے اور ہزار تیروں اور ہزار تلواروں سے مسلح تھے۔ اس نے ان سے پوچھا’’ تم کہاں جا رہے ہو؟ ‘‘

    انہوں نے کہا ’ ہم اس سے لڑنے جا رہے ہیں جو کذب بیانی سے کام لیتا ہے اور یہ دعویٰ کرتا ہے کہ وہ نبی ہے‘‘

    اس اعرابی نے ان سے کہا ’’میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور بے شک محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم اللہ کے رسول ہیں‘‘

    انہوں نے کہا’’ تم نے بھی نیا دین اختیار کر لیا ہے؟‘‘

    اس نے کہا ’’میں نے نیا دین اختیار نہیں کیا (بلکہ دین حق اختیار کیا ہے)‘‘
    پھر اس نے انہیں
    (گوہ سے متعلق) تمام بات سنائی۔
    یہ سن کر ہر کوئی کہنے لگا ’’اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم اللہ کے رسول ہیں‘‘

    حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم تک جب یہ خبر پہنچی تو آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم انہیں ملنے کے لئے (تیزی سے) بغیر چادر کے باہر تشریف لائے۔ وہ آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کو دیکھ کر اپنی سواریوں سے کود پڑے اور حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے جس حصہ تک ان کی رسائی ہوئی اسے چومنے لگے اور ساتھ ساتھ کہنے لگے ’’اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم اللہ کے رسول ہیں‘‘
    پھر انہوں نے عرض کیا’’ یا رسول اللہ! آپ ہمیں اس چیز کا حکم دیں جو آپ کو پسند ہے‘‘
    آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا ’’تم خالد بن ولید کے جھنڈے تلے ہو گے‘‘
    راوی بیان کرتے ہیں کہ سارے عرب میں صرف بنو سلیم کے ہی ایک ہزار لوگ بیک وقت ایمان لائے۔‘‘

    شکریہ روزنامہ پاکستان
    24 جولائی 2018
     
    عبدالرحمن حاجی خانی زمان اور پاکستانی55 .نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. پاکستانی55
    آف لائن

    پاکستانی55 ناظم سٹاف ممبر

    شمولیت:
    ‏6 جولائی 2012
    پیغامات:
    98,397
    موصول پسندیدگیاں:
    24,232
    ملک کا جھنڈا:
    جزاک اللہ خیر
     
    کنعان نے اسے پسند کیا ہے۔
  3. زنیرہ عقیل
    آف لائن

    زنیرہ عقیل ممبر

    شمولیت:
    ‏27 ستمبر 2017
    پیغامات:
    18,222
    موصول پسندیدگیاں:
    8,707
    ملک کا جھنڈا:
    سبحان اللہ سبحان اللہ سبحان اللہ

    خوبصورت شئیرنگ کے لیے اللہ آپ کو جزائے خیر دے آمین
     
    کنعان نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں